Uncategorized
Leave a Comment

چھوٹو ہے کون؟


آج کل ایک ہی خبر اخبارات ٹی وی چینل کی زینت بنی ہوئی ہے۔گو کہ ہر اُس آدمی کا یہ خبر اُوڑھنا بھچونا بنیہوئی ہے جس کو سیاست سے کوئی دلچسپی نہیں ہے۔چھوٹو  آخر ہے کون کس طرح اتنا مشہور ہوا۔غلام رسول  المعروف چھوٹو   بکھرانی پر سندھ میں  اور پنجاب  کے دیگر علاقوں میں  اس وقت تقریبا 40 مقدمات درج ہیں۔حکومت نے اعلان کیا ہوا ہے کہ جس نے بھی  چھو؎ٹو کو زندہ یا مردہ حالت میں پکڑا اُس کو 20 لاکھ انعام دیا جائے گا۔چھوٹو کے والد کا نام بھٹہ بکھرانی ہے۔یہ راجن پور کی تحصیل روجان کے علاقے کچہ کا رہائشی ہے۔جو کراچی کے علاقے میں واقع ہے۔ دراصل کچہ  کا علاقہ کسی کی ملکیت نہیں ہے۔بلکہ یہ حکومت کا علاقہ ہے ۔اس علاقے میں غریب  لوگ آباد ہیں  جو اپنی سبزیاں فصل وغیرہ کاشت کرتے ہیں ۔سیلاب سے اگر ان کی فصلیں بچ جائیں تو ٹھیک ورنہ یہ لوگ بڑے جاگیرداروں اور وڈیروں کے رحم و کرم پر ہوتے ہیں ۔چھوٹو کا تعلق  کسی امیر فیملی سے نہیں ہے بلکہ اس کا والد ایک عام مزدور اور کھیتی باڑی کرنے والا ہے۔چھوٹو  پر سب سے پہلی ایف آئی آر 7 اگست 1987 میں درج کی گئی تھی۔جو دفعہ 411 کے تحت  اس کے خلاف کاروائی بھی ہوئی۔تھانہ بونگ میں غلام رسول پر 6 مقدمات درج ہیں ۔ان 6 مقدمات میں غلام رسول ایک بار جیل بھی گیا ہے۔40 مقدمات میں صرف ایک بار جیل گیا ہے۔اس کے اپنے علاقے راجن پور میں اس کے خلاف تقریبا ہر دوسرے تھانے میں مقدمات درج ہیں۔چھوٹو کے خلاف آخری مقدمہ  16 جولائی 2013 کو درج ہوا۔اس کے بعد سندھ اور پنجاب کی پولیس پر چھوٹو نے اتنا دبائو ڈالا کہ کسی ایس ایچ اوز کی ہمت نہیں ہوئی کہ  وہ چھوٹو کے خلاف کوئی مقدمہ تھانے تک لائے۔3 سالوں سے چھوٹو نے پولیس کے ناک میں دم کر رکھا ہے۔چھوٹو شروع میں ایک ہوٹل کا بیرا تھا۔آہستہ آہستہ چھوٹی موٹی چوریوں کی وجہ سے جرائم کی دنیا میں داخل ہو گیا۔ جب آہستہ آہستہ بڑا  چھوٹو بننے لگا تو  ہمیشہ کی طرح بڑے بڑے جاگیرداروں  ایم این اے ایم پی اے اور اقتدار کے لالچی چندگنے  چُنے لوگ جن کا مقصد صرف اور صرف   اپنے بچوں کے لیے دُنیا میں جنت بناناہے اُن لوگوں نے عوام کے خون پسینے کی کمائی کو ٹیکس کی شکل میں وصول کر کے خوب چھوٹو پر خرچ کیے۔اور بہت جلد ہی چھوٹو کو بڑا گینگ ماسٹر بنا دیا۔اس مضبوط پارٹیوں کے ملنے کے بعد چھوٹو کا ایک مضبوط گینگ بن گیا جن کا مقصد تقریبا ایک دہائی سے چوری کرنا ڈکیتی  عورتوں کی بے حرمتی کرنااور لوگوں کی زمینوں پر قبضہ کرنا۔چھوٹو کون ہے اور اس کی کڑیاں کس سے مل رہی ہیں اس سب باتوں کا جواب ہر محب وطن جانتا ہے۔

This entry was posted in: Uncategorized

by

Vision 21 is Pakistan based non-profit, non- party Socio-Political organisation. We work through research and advocacy for developing and improving Human Capital, by focusing on Poverty and Misery Alleviation, Rights Awareness, Human Dignity, Women empowerment and Justice as a right and obligation. We act to promote and actively seek Human well-being and happiness by working side by side with the deprived and have-nots.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s