Uncategorized
Leave a Comment

سیاسی گدھے


پرانے زمانے کی بات ہے ، ایک بادشاہ تھا ایک دن بادشاہ کا دل چاہا کہ ملک کے دورے پر نکلے ، تو اس نے محکمہ موسمیات کے افسر سے پوچھا کہ آنے والے چند دنوں میں موسم کیسا رہے گا ؟ محکمہ موسمیات کے بڑے افسر نے حساب کتاب نکال کر بادشاہ کو بتایا کہ آنے والے کئی دنوں تک بارش کا کوئی امکان نہیں ہے ۔ اس لئے آپ مطمئن ہو کر ملک کی سیر کو نکل سکتے ہیں ۔ بادشاہ اپنی ملکہ کو ساتھ لے کر دورے پر نکل جاتا ہے ، دارالحکومت سے میلوں دور ایک جگہ اس کی ایک کمہار سے ملاقات ہوتی  ہے جو اپنےگدھے پر مال لادے کہیں جا رہا ہوتا ہے ، کمہا ر بادشاہ کو پہچان جاتا ہے اور بادشاہ کو بتاتا ہے کہ جتنی جلدی ہو سکے واپس چلے جائیں ، اس علاقے میں بہت موسلادار بارش ہونے جا رہی ہے ۔ بادشاہ کمہار کو کہتا ہے کہ میرے موسمیات کے افسر نے مجھے بتایا ہے کہ بارش کا کوئی امکان نہیں ہے ، میرا افسر ایک تعلیم یافتہ اور بہت ذہین بندہ ہے ، جس نے ملک کی اعلی درسگاہوں سے تعلیم حاصل کی ہے اور میں اس کو اچھی خاصی تنخواہ دیتا ہوں ۔اس لئے میں ایک کمہار کی بجائے اپنے افسر کی بات پر یقین رکھ کر سفر جاری رکھوں گا ۔دو پہر  کے بعد ہی بارش شروع ہو گئی اور بارش بھی طوفانی بارش کہ جس میں بادشاہ اور ملکہ کا سارا سامان بھی بھیگ گیا ۔ بادشاہ  وہیں سے واپس مڑا اور راج دھانی میں پہنچتے ہی محکمہ موسمیات کے افسر کو قتل کروا دیا اور بندے بھیج کر کمہار کو دربار میں بلایا ۔ دربار میں بلا کر بادشاہ نے کمہار کو محکمہ موسمیات کی نوکری کی پیش کش کی ۔ بادشاہ کی پیش کش پر کمہار نے بادشاہ کو بتایا کہ میرے پاس کوئی علم عقل نہیں ہے ، میں یہ نوکری کرنے کا اہل نہیں ہوں ۔ جہاں  تک بات ہے بارش کی پشین گوئی کی تو  وہ اس طرح ہے کہ اس کا اندازہ میں گدھے کے کان دیکھ کر لگاتا ہوں. جب بھی گدھے کے کان مرجھائے ہوئے ہوتے ہیں اس  کے بعد بہت بارش ہوتی ہے ۔ یہ سن کر بادشاہ نے بجائے کمہار کے گدھے کو کلرک رکھ لیا ۔وزیر اعظم جناب نواز شریف نے پارلیمنٹ میں بھر پور کہانی سُنائی ایسے لگ رہا تھا کہ ایوان میں عوام کی ووٹوں سے منتخب ہونے والے گدھوںکو  لوری سُنا رہے ہیں۔7 سوالوں کا جواب دینے کے بجائے جناب نےایسا دُکھڑا سُنایا کہ  جناب کے حواری دُکھی ہو گئے ۔پانامالیکس کے بعد وزیراعظم صاحب  گدھے کے کانوں کی طرح مُرجھائے ہوئے ہیں۔اور کمار کی طرح نواز شریف کے ساتھی کسی بھی سیاسی بارش سے بچنے کا انتطار کر رہے ہیں۔لیکن حقیقت اور سچائی کی بنیاد پر یہ کہنا ہر گز غلط نہیں ہو گا کہ حکومت کو اس دفعہ سیاسی بارش لے ڈوبے گئی اگر اپوزیشن حضرات نے گدھوں کا کام نہ سر انجام دیا تو۔

This entry was posted in: Uncategorized

by

Vision 21 is Pakistan based non-profit, non- party Socio-Political organisation. We work through research and advocacy for developing and improving Human Capital, by focusing on Poverty and Misery Alleviation, Rights Awareness, Human Dignity, Women empowerment and Justice as a right and obligation. We act to promote and actively seek Human well-being and happiness by working side by side with the deprived and have-nots.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s