literacy, Pakistan, Political Parties, politics, Poverty, Uncategorized, youth
Leave a Comment

عوام کی طاقت


تحریر:سائرہ ظفر

 

نہ تو زمیں کے لیے نہ آسماں کے لیے

جہاں ہے تیرے لیے تُو نہیں جہاں کے لیے۔

روزانہ کی طرح آج بھی آنکھ کھلتے ہی ریموٹ  کے ساتھ ٹی وی   پر مختلف نیوز چینل کو دیکھتے ہی ایک خبر پر نظر پڑی کہ ترکی میں باغیوں نے قبضہ کر لیا ہے۔ مسلح فوج استنبول اور انقرہ کی سڑکوں پر نکل آئی۔ انہوں نے مرکزی ائرپورٹ اور شاہراہوں کو بند کر دیا جبکہ فضائیہ کے طیارے نیچی اڑان پر شہر کے اوپر منڈلاتے رہے۔ ایک بغاوت برپا تھی۔

باغیوں  نے ترکی کو اپنی لپیٹ میں لیا ہوا تھا۔ہر طرف باغیوں کا راج تھا۔افراتفری برپا تھی۔مسلسل باغی فوجیوں نے ریاستی نشریاتی ادار ےTRT پر قبضہ کر کے تمام نشریات بند کر دیں اور جب نشریات بحال ہوئیں تو فوجی ٹی وی اینکرزکو اعلامیہ پڑھنے پر زور دے رہے تھےجس کے مطابق:ترک مسلح افواج نے ملکی انتظامات پر مکمل طور پر قبضہ کر لیا ہے تاکہ آئینی نظم و ضبط ، انسانی حقوق اور آزادیوں قانون کی بالادستی اور عمومی تحفظ کو بحال کیا جائے جن کو نقصان پہنچا ہے۔ تمام عالمی معاہدے برقرار رہیں گے۔ ہمیں امید ہے کہ تمام ممالک کے ساتھ ہمارے اچھے تعلقات برقرار رہیں گے.یہ ترکی میں آٹھویں بغاوت کی کوشش تھی اور اگر یہ کامیاب ہو جاتی تو 1960ء سے لے کر اب تک یہ پانچویں کامیاب بغاوت ہوتی۔ لیکن حالات و واقعات مختلف سمت چل پڑے جب وزیرِ اعظم نے عالمی میڈیا میں ایک بیان جاری کیا۔ اس نے کہا:’’یہ ترک جمہوریت پر حملہ ہے۔ مسلح افواج کے اندر سے ایک گروہ نے سلسلہ اختیارات سے بالا تر ہو کر جمہوری منتخب حکومت کو گرانے کی کوشش کی ہے۔ مسلح افواج کی طرف سے دیئے گئے بیان کی فوجی کمان نے اجازت نہیں دی۔ ہم تمام دنیا سے ترک عوام کے ساتھ یکجہتی کرنے کی اپیل کرتے ہیں۔ کچھ دیر کے بعد صدر اردگان CNN Turk پر ویڈیو کال پر نمودار ہوا اور اس نے لوگوں سے باہر نکل کر چوکوں اور ائرپورٹوں پر قبضہ کرتے ہوئے بغاوت سے لڑنے کی اپیل کی۔ردِعمل انتہائی تیز تر تھا۔ ہزاروں AKP کے حمایتی سڑکوں پر نکل کر فوجیوں کے سامنے کھڑے ہو گئے، ان کے ٹینکوں پر چڑھ گئے اور یہاں تک کہ کچھ ٹینکوں کو چھین کر چلاتے ہوئے لے گئے۔ جھڑپوں میں کافی لوگ زخمی ہوئے لیکن تحریک بغاوت پر حاوی ہوتی نظر آئی۔ ساتھ ہی ساتھ تمام سیاسی جماعتوں نے بغاوت کی مخالفت کر دی۔ CHPجو اس وقت ترکی میں حقیقی اپوزیشن جماعت ہے۔اس کے قائد نے صدر کی حمایت کا اعلان کرتے ہوئے اپنی پارٹی کے حامیوں کو سڑکوں پر آنے کا کہہ دیا۔ بہت سے لوگ AKP کے شدید خلاف ہونے کے باوجود بغاوت کی مخالفت میں باہر نکلے۔ اردگان سے شدید نفرت کے باوجود لوگ 1980sء کی دہائی کی خونی آمریت کو نہیں بھولے۔ چند ہزار فوجیوں کو کئی ہزار مظاہرین نے جلد ہی گھیرے میں لے لیا۔ چند ہی گھنٹوں میں بغاوت کا شیرازہ بکھرنے لگا۔ ہر جگہ جارحانہ مظاہرین اور افوج کی اعلی قیادت کے صدر کی حمایت میں اعلانات کے بعد فوجی پسپا ہونے لگے۔ صدر اردگان ائرپورٹ پر وارد ہوا اور اعلان کیا کہ ’’بغاوت‘‘ کو کچلا جا چکا ہے۔ پھر اس نے ساتھ ہی یہ اعلان بھی کر دیا کہ تمام باغی عناصر کا فوج سے خاتمہ کر دیا جائے گا اور ’’پورا ملک صاف کر دیا جائے گا‘‘۔ ساری رات بڑے شہروں میں جھڑپیں چلتی رہیں جس کی وجہ سے کئی سو ہلا ک ہو گئے اور ایک ہزار سے زیادہ زخمی ہو گئے۔ بہرحال بغاوت جلد ہی کچل دی گئی اور اردگان نے دوبارہ سے اپنی طاقت کو مستحکم کر لیا۔اس ساری صورتحال میں ترکی کی غیور عوام نے اپنے لیڈر کی بات پر لبیک کہا کیونکہ اُن کا لیڈر اُن کی ہر بات پر لبیک کہتا ہے۔اُس نے کبھی بھی اپنی عوام کو تنہا نہیں چھوڑا اور یہی بات تھی کہ ترک عوام نے اپنے لیڈر کے لیے اپنی جان کی پروا کیے بغیر 5 گھنٹے میں اپنے لیڈر  کو اُس کی کرسی واپس کی۔یہ سب کچھ ترکی میں ہوا ہے لیکن پاکستانی لیڈز کے لیے  بہت بڑا سبق ہے جس طرح کا سلوک پاکستانی گورنمنٹ  اپنی عوام کے ساتھ کر رہی ہے ۔یہ نہ ہو بہت جلد ہی پاکستانی عوام جہموریت کو صفہ ہستی سے مٹا کر آمریت کے حق  میں ہمیشہ کے لیے ووٹ دے دیں۔

by

Vision 21 is Pakistan based non-profit, non- party Socio-Political organisation. We work through research and advocacy for developing and improving Human Capital, by focusing on Poverty and Misery Alleviation, Rights Awareness, Human Dignity, Women empowerment and Justice as a right and obligation. We act to promote and actively seek Human well-being and happiness by working side by side with the deprived and have-nots.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s