Month: July 2017

Changing myths requires consultation — II

Remember democracy is not just a bad election. It has to be framed to allow elections to deliver good government responsive to the needs to people 16-Jul-17by Nadeemul Haque Raza Rumi argued recently that there are 5 myths in the Pakistani discourse that need to be put to rest. In his view these are the ‘Doctrine of Necessity,’ ‘Strategic depth,’ ‘Use of Proxies’, ‘Ummah’ and ‘China will fix all’. Raza is right. A large part of our media and intellect is discussing these myths. I would argue that Raza’s 5 myths stem from our inability to configure proper democracy. Any democratic government with an open process of policymaking with due diligence (research and reporting through white papers and documentation), public consultation (forums with government provided information and genuine participation) and open decision-making processes (forums at all levels with proper public participation and open minutes even if with a lag), ghosts and monsters can be confronted. Simple. No decision without first, adequate public scrutiny, second documentation and consultation at all levels including the public, and finally …

چونتیس( 34)خاندان

عمران خان کا دائیاں ہاتھ اسد عمر اور نواز شریف کا بائیاں ہاتھ زبیر عمر آپس میں سگے بھائی ہیں ٹھیک اسی طرح پنجاب میں عابدہ حسین کی فیملی ہو یا پھر جنوبی پنجاب کے گیلانیوں سے لیکر سندھ کے پگارہ تک کی فیملی ہو . یہ سب آپس میں خونی رشتہ رکھتے ہیں اندروں سندھ کے وڈیرے ہوں یا بلوچستان کے سردار یہاں بھی پارٹیز بھلے مختلف ہوں پر خون ایک ہی ہے اور آپس میں بہت خوشگوار تعلقات رکھتے ہیں . اگر پاکستانی سیاست کو دیکھیں تو بمشکل 34 خاندان ہیں جو جمہوریت ہو یا آمریت ، طاقت کا محور انہی 34 خاندانوں کے گرد گھومتا ہے دولت کے انباروں کے مینار انہی کے کے بلند سے بلند تر ہوئے جارہے . آج تحریک انصاف کی ” انقلابی ” ناز بلوچ صاحبہ پیپلز پارٹی کو پیاری ہوگئیں . یقیناً اب ان میں بہت سی خامیاں نظر آنے لگیں گی پر یاد رہے کہ یہ ناز بلوچ عبدللہ بلوچ کی بیٹی ہے . ان باپ بیٹی کا بہت دلچسپ معامله ہے ، عبدللہ بلوچ …

خادم حسین نام ہے میرا

میں ان دنوں جوہر شادی ہال (J complex) کے اندر کو یوٹرن مارتی ہوئی سڑک کے اُس طرف اک فلیٹ میِں رہتا تھا. اس پوش کالونی کے ساتھ ساتھ جاتی سڑک کے کنارے کنارے ہوٹل، جوس کارنر، فروٹ کارنر بھی چلتے چلے جاتے ہیں،. اس چوک کے دائیں طرف اک نکڑ تھی جس پر اک ریڑھی کھڑی ہوتی تھی، رمضان کے دن تھے، شام کو فروٹ خریدنے نکل کھڑا ہوتا تھا. مجھے وہ دور سے ہی اس ریڑھی پہ رکھے تروتازہ پھلوں کی طرف جیسے کسی ندیدہ قوت نے گریبان سے پکڑ کر کھینچا ہو. میں آس پاس کی تمام ریڑھیوں کو نظر انداز کرتا ہوا اس آخری اور نکڑ پہ ذرہ ہٹ کے لگی ریڑھی کو جا پہنچا. اک نگہ پھلوں پہ ڈالی اور ماتھے پہ شکن نے آ لیا کہ یہ فروٹ والا چاچا کدھر ہے؟ ادھر اُدھر دیکھا کوئی نہیِں تھا. رمضان کی اس نقاہت و سستی کی کیفیت میں ہر کسی کو جلدی ہوتی ہے، اس شش و پنج میں اک گیارہ بارہ سال کا بچہ گزرا، مجھے دیکھ کر کہنے …

نواز شریف کے خلاف سازش کرنے والا کردار

نوازشریف کے خلاف سازش کرنے والا ایک گھناؤنا کردار تو بے نقاب ہوگیا۔ آئیں، اس کے بارے میں تھوڑا سا جاننے کی کوشش کریں۔ 60 کی دہائی میں گورنمنٹ کالج لاہور سے ابتدائی تعلیم حاصل کرنے کے بعد وہ برطانیہ چلا گیا اور وہاں جاکر اپنی مزید تعلیم جاری رکھی۔ پھر وہاں سے فنانشل سیکٹر کا تجربہ حاصل کرنے کے بعد چہرے مبارک پر داڑھی سجائی اور اپنے والد کے کہنے پر اس کے ساتھ سعودی عرب رہنا شروع کردیا۔ وہاں اس نے سعودی عرب میں ایک امریکی بنک میں نوکری شروع کی اور اپنے والد اور اس کے قریبی رشتے داروں کو پرکشش منافع پر انویسٹمنٹ کرنے کا جھانسہ دیا اور ان کی ساری رقم ہتھیا لی۔ اگر رقم صرف والد کی ہوتی تو وہ بے چارہ صبر کرلیتا، لیکن چونکہ آدھے خاندان کا مال لٹ چکا تھا، اس لئے والد نے اپنے بے ایمان بیٹے سے رقم کی واپسی کا مطالبہ کی جو کہ اس نے پورا کرنے سے انکار کردیا۔ مجبوراً اس کے باپ نے 1980 میں سعودی عرب میں اپنے بیٹے …

Raza RUMI argued recently that there are 5 myths in the Pakistani discourse that need to be put to rest

.In his view these are the ‘Doctrine of Necessity,’ ‘Strategic depth,’ ‘Use of Proxies’, ‘Ummah’ and ‘China will fix all’. Raza is right. A large part of our media and intellect is discussing these myths. I would argue that Raza’s 5 myths stem from our inability to configure proper democracy. Any democratic government with an open process of policymaking with due diligence (research and reporting through white papers and documentation), public consultation (forums with government provided information and genuine participation) and open decision-making processes (forums at all levels with proper public participation and open minutes even if with a lag), ghosts and monsters can be confronted. Simple. No decision without first, adequate public scrutiny, second documentation and consultation at all levels including the public, and finally full disclosure. There is no democracy without these 3 steps. Democracy is not mere elections but a complete process for running government for the welfare of a free and sovereign people. Change is not PM whim but his leadership of a process This is what universities and think tanks …

منصب سے الگ ہونے کا وقت

بابر ستار جے آئی ٹی رپورٹ حقیقی، بامعانی اور نتیجہ خیز جسٹس کے لئے اختیار کیے جانے والے انصاف پر مبنی طریق ِ کار کی حمایت میں بذات ِ خود ایک مضبوط دلیل ہے ۔ پاناما کیس میں تین رکنی اکثریتی بنچ نے درست فیصلہ کرتے ہوئے وزیر ِاعظم اور اُن کے خاندان کے خلاف الزامات کی تحقیقات عدالت کی نگرانی میں کرانے کا حکم دیا ۔ جے آئی ٹی رپورٹ نے شریفوں کی وضاحت اور بیانیے کا پردہ چاک کرکے رکھ دیا ۔ اب اُن کے پاس جے آئی ٹی کی رپورٹ کوسپریم کورٹ میں چیلنج کرنے کا موقع ہوگا ۔ عدالتیں فیصلہ قیاس کی بجائے سچ کی بنیاد پر کرتی ہیں۔ اور سچ وہ ہوتا ہے جسے ٹھوس حقائق کی تائید حاصل ہو۔ ہم نے فی الحال پی ایم ایل (ن) کو جے آئی ٹی کے مواد پر مربوط اور مدلل تنقید کرتے نہیں سنا۔ حکمران جماعت تین دلائل کو آگے بڑھا رہی ہے ۔ پہلا یہ کہ جے آئی ٹی اپنی تشکیل کے اعتبار سے متعصب تھی ۔ اس کا اختیار کردہ …

نیشنل بینک کے سربراہ سے پوچھے گئے سوالا ت اور ان کے جوابات

نیشنل بینک آٖف پاکستان کے سربراہ سعید احمد سے پوچھے گئے جے آئی ٹی کے سوالات اور ان کے جوابات ۔۔۔۔۔۔۔۔ ! سوال ۔۔۔۔۔۔ آپ سعودی عرب میں کیوں گرفتار ہوئے تھے ؟ جواب ۔۔۔۔۔ ” وہاں کمپنی کے مالک نے مجھ پر فراڈ کا الزام لگا کر پکڑوا دیا تھا “