Author: vision 21

اسماعیلی برادری کابزدلانہ قتل

ساءرہ ظفر واقعہ کے ردعمل سے صاف ظاہر ہے کیا حقیقت ہے کیا بتایا جا رہا ہے اس سانحہ میں داعش کو ملوث کر کے ہمارے اصلی دشمن کو بچایا جا رہا ہے انسان  کو اللہ تعالی نے اشرف الخلو قات پیدا کیا ہے انسان کے لیے ریڑی کی ہڈی نمایاں حیثیت رکھتی ہے ریڑھ کی ہڈی کے بغیر  انسان اس کیڑے کی  ماند  ہوتا ہے جو اپنا جسم زمین پر  گھسیٹ گھسیٹ کر چلتا ہے کراچی پاکستان کے نہ صرف  سب سے بڑے شہر کے طور پر مشہور ہے بلکہ اسے روشنیوں کا شہر بھی کہا جاتا ہے۔ کراچی تجارت کے لحاظ سے اپنی مثال آپ رکھتا ہے اگر یہ کہا جائے  کہ کراچی پاکستان کی ریڑھ کی ہڈی ہے تو ہر گز غلط نہیں ہوگا ۔جب سے پاکستا ن  معرض وجود میں آیا ہمیشہ سے پاکستان مخالف لوگوں کی یہ کوشش رہی ہے کہ کراچی کبھی بھی نہ پھیلے پھولے کراچی میں بھتہ خوری  دہشت  گردی ٹارگٹ کلنگ ہمیشہ سے رہے

خو ن کا کھیل اب بلوچستان میں

                                                     سائرہ ظفر مری قسمت میں یا رب کیا نہ تھی دیوار پتھر کی  کہاں تک رووں اس خیمے کے پیچھے قیامت ہے سو جا بیٹا ہا ں سونے سے پہلے یہ ضرور یاد رکھنا آیت الکرسی پڑھ کر سونا۔ہو سکتا ہے آج میرے بچے نے آیت الکرسی نہ پڑھی ہو۔چلو کوئی بات نہیں آج میں خود پڑھ کر پھونک دوں گی ۔لیکن ماں کیوں ،روزانہ مجھے بھی تلقین کرتی ہو اور خود بھی 3دفعہ آیت الکرسی پڑھ کر پھونکتی ہو۔بیٹا تین دفعہ پڑھنے سے بندہ اللہ تعا لی کی حفاظت میں رہتا ہے۔کوئی اس کا کچھ نہیں بگاڑ سکتا ہے۔10 اپریل 2015 کو بلوچستان کے علاقے تر بت میں دہشت گردوں نے خون کی ایسی ہولی کھیلی کہ خیمے میں سوئے ہوئے مزدوروںپر اندھا دھند فائرنگ کر دی سیکیورٹی کے نام کالے لباس میں ملبوس پولیس اہلکار کے کان پر جوں تک نہ رینگی دہشت گرد بغیر کسی ڈرو …

Ibn Khaldun, Islam’s Man for All Seasons

By Benedikt Koehler Tensions tearing at the basis of Islamic societies are never more acute than when stoked in the name of Islam. Idealists invoking Islam as a lever for change spark upheavals that time and again hand power to cynics. Looking for an explanation why Islamic societies wallow in paralysis, some suggest Islamic societies stagnate because Islam itself does not admit of contemplating change in society, that Islam, to put it simply, comes without a toolkit for handling social change. To think so is tempting – but wrong.

Syrian child photographed ‘surrendering to camera because she thought it was a gun’  

 Turkish photographer Osman Sağırlı took this picture at a Syrian refugee camp This photo of a Syrian child so scarred by war that she stared into a camera lens believing it was the barrel of a gun and raised her arms in surrender has  been shared around the world. The fear in the little girl’s eyes as she bit her lip to stop herself crying has caused an outpouring of emotion about the “heart-breaking” image showing how “humanity failed” in the Syrian civil war. It spread across social media this week after it was tweeted by a photojournalist in Gaza. Nadia Abu Shaban’s post on 24 March has been shared more than 14,000 times, sparking threads on Reddit and other forums being inundated with thousands of comments. She said the child thought the photographer had “a weapon not a camera” but the lack of further information caused viewers to speculate that the image was fake, posed or taken in an unrelated situation. But now the man who took the photo has come forward to explain …

عوام کو ریلیف کی فراہمی ہمارا نصب العین ہے

پاکستان ایک بارپھر  دہشت گردی کی زد میں ۔ خیر یہ کوی نئی اور حیرت انگیز بات نہیں ہے ۔  پشاور کے دردناک  واقعے کے بعد اب لاہور کے گرجا گھرکو  بربریت کا نشانہ بنایا گیا ہے  ۔ 15 مارچ  2015 ایک اور واقعہ  دہشت گردوں   نے خون کی ایسی ہولی کھیلی ۔ پورا  لاہور جاگ اٹھا اور کہیں معصوم بچوں  کی لاشیں ، کہیں  زخموں سے نڈھال بزرگ  زخموں سے چور  چور  آہیں اور سسکیاں  لے رہے تھے ۔   میڈیا  دھڑا دھڑ  خبروں پہ خبریں دے رہا تھا ۔  پورا یوحنا آباد  ایمبولینس  کی آوازوں سے گونج رہا تھا ۔   ایسے میں حکومت