All posts filed under: Uncategorized

ماں جی آپ نے اپنا دل صاف کرنا کس سے سیکھا؟

انہوں نے ہنستے ہوئے جواب دیا کہ دودھ والے سے۔ سارہ بھی اس بات پر ہنس پڑی، پھرکچھ دیر قبل جیٹھانی سے فون پر اپنی تلخ کلامی پر شرمندہ ہوتے ہوئے ساس سے مخاطب ہوئی پتہ نہیں غصّے میں زیادہ ہی بول جاتی ہوں، بڑی ہیں مجھ سے لیکن انکی عادتیں بھی تو دیکھیں پچھلی بار بھی .. خیر چھوڑیں آپ بتائیں ناں ماں جی جیسے میں آپ سے اکثر باتیں سیکھتی ہوں آپ نے یہ بات کہاں سے سیکھی ؟کیونکہ میں نے اتنے عرصے میں آپکو لوگوں کی شکایتیں کرتے نہیں دیکھا ،حالانکہ کچھ لوگوں کے بہت غلط رویے بھی آپ کے ساتھ دیکھے ہیں میں نے۔ ماں جی نے بڑی بہو کیساتھ سارہ کی بدکلامی کو یکسر نظرانداز کرتے ہوۓ مسکراتے ہوۓ جواب دیا۔ “پتر مذاق نہیں سچ بتا رہی ہوں۔ واقعی دودھ والے ہی نےسکھایا تھا یہ سبق ، میں چھوٹی تھی جب کوئی بارہ سال کی رہی ہونگی ،فجر پر بھائی اور ابّا جی تو مسجد گۓ ہوتے امّاں جی صحن میں قران پڑھ رہی ہوتیں کہ دودھ والے بابے کی …

’’ رائیونڈ محل کی کہانی‘‘

لاہور میں موجود نواز شریف کی رہائش گاہ کو رائیونڈ محل کہا جاتا ہے۔ یہ نواز شریف کی والدہ کے نام پر ہے۔رائونڈ محل کا احاطہ 1700 ایکڑ یا 13600 کنال ہے (ملحقہ خریدی گئی زمین بھی شامل کی جائے تو 25000 ہزار کنال سے زائد )۔ یہاں جانے کے لیے ایک خصوصی گیٹ بنایا گیا ہے جس پر نواز شریف کی والدہ بیگم شمیم شریف اور بیٹی مریم نواز کے نام بڑے بڑے حروف میں کندہ کیے گئے ۔ شاہی رہائش گاہ میں 3 باورچی خانے، 3 ڈرائینگ روم، ایک سوئمنگ پول ، ایک مچھلی فارم ، ایک چھوٹا سا چڑیا گھر اور ایک جھیل شامل ہے۔ اس علاقے میں میاں شریف نے جو زمین خریدی اس کو قومی خزانے سے پیسے خرچ کر کے جدید سہولیات سے آراستہ کیا گیا۔اس رہائش گاہ میں تقریباً 1500 ملازمین کام کرتے ہیں جنکی مجموعی ماہانہ تنخواہ کروڑوں روپے بنتی ہے۔وزیراعطم نواز شریف جب دوسری بار وزیرآعظم بنے تب انہوں نے رائیونڈ محل کی تعمیر و آرائش پر خصوصی توجہ دی۔ تعمیرات کا یہ کام(FWO) فرنٹیئر ورکس …

Changing myths requires consultation — II

Remember democracy is not just a bad election. It has to be framed to allow elections to deliver good government responsive to the needs to people 16-Jul-17by Nadeemul Haque Raza Rumi argued recently that there are 5 myths in the Pakistani discourse that need to be put to rest. In his view these are the ‘Doctrine of Necessity,’ ‘Strategic depth,’ ‘Use of Proxies’, ‘Ummah’ and ‘China will fix all’. Raza is right. A large part of our media and intellect is discussing these myths. I would argue that Raza’s 5 myths stem from our inability to configure proper democracy. Any democratic government with an open process of policymaking with due diligence (research and reporting through white papers and documentation), public consultation (forums with government provided information and genuine participation) and open decision-making processes (forums at all levels with proper public participation and open minutes even if with a lag), ghosts and monsters can be confronted. Simple. No decision without first, adequate public scrutiny, second documentation and consultation at all levels including the public, and finally …

چونتیس( 34)خاندان

عمران خان کا دائیاں ہاتھ اسد عمر اور نواز شریف کا بائیاں ہاتھ زبیر عمر آپس میں سگے بھائی ہیں ٹھیک اسی طرح پنجاب میں عابدہ حسین کی فیملی ہو یا پھر جنوبی پنجاب کے گیلانیوں سے لیکر سندھ کے پگارہ تک کی فیملی ہو . یہ سب آپس میں خونی رشتہ رکھتے ہیں اندروں سندھ کے وڈیرے ہوں یا بلوچستان کے سردار یہاں بھی پارٹیز بھلے مختلف ہوں پر خون ایک ہی ہے اور آپس میں بہت خوشگوار تعلقات رکھتے ہیں . اگر پاکستانی سیاست کو دیکھیں تو بمشکل 34 خاندان ہیں جو جمہوریت ہو یا آمریت ، طاقت کا محور انہی 34 خاندانوں کے گرد گھومتا ہے دولت کے انباروں کے مینار انہی کے کے بلند سے بلند تر ہوئے جارہے . آج تحریک انصاف کی ” انقلابی ” ناز بلوچ صاحبہ پیپلز پارٹی کو پیاری ہوگئیں . یقیناً اب ان میں بہت سی خامیاں نظر آنے لگیں گی پر یاد رہے کہ یہ ناز بلوچ عبدللہ بلوچ کی بیٹی ہے . ان باپ بیٹی کا بہت دلچسپ معامله ہے ، عبدللہ بلوچ …

خادم حسین نام ہے میرا

میں ان دنوں جوہر شادی ہال (J complex) کے اندر کو یوٹرن مارتی ہوئی سڑک کے اُس طرف اک فلیٹ میِں رہتا تھا. اس پوش کالونی کے ساتھ ساتھ جاتی سڑک کے کنارے کنارے ہوٹل، جوس کارنر، فروٹ کارنر بھی چلتے چلے جاتے ہیں،. اس چوک کے دائیں طرف اک نکڑ تھی جس پر اک ریڑھی کھڑی ہوتی تھی، رمضان کے دن تھے، شام کو فروٹ خریدنے نکل کھڑا ہوتا تھا. مجھے وہ دور سے ہی اس ریڑھی پہ رکھے تروتازہ پھلوں کی طرف جیسے کسی ندیدہ قوت نے گریبان سے پکڑ کر کھینچا ہو. میں آس پاس کی تمام ریڑھیوں کو نظر انداز کرتا ہوا اس آخری اور نکڑ پہ ذرہ ہٹ کے لگی ریڑھی کو جا پہنچا. اک نگہ پھلوں پہ ڈالی اور ماتھے پہ شکن نے آ لیا کہ یہ فروٹ والا چاچا کدھر ہے؟ ادھر اُدھر دیکھا کوئی نہیِں تھا. رمضان کی اس نقاہت و سستی کی کیفیت میں ہر کسی کو جلدی ہوتی ہے، اس شش و پنج میں اک گیارہ بارہ سال کا بچہ گزرا، مجھے دیکھ کر کہنے …

نواز شریف کے خلاف سازش کرنے والا کردار

نوازشریف کے خلاف سازش کرنے والا ایک گھناؤنا کردار تو بے نقاب ہوگیا۔ آئیں، اس کے بارے میں تھوڑا سا جاننے کی کوشش کریں۔ 60 کی دہائی میں گورنمنٹ کالج لاہور سے ابتدائی تعلیم حاصل کرنے کے بعد وہ برطانیہ چلا گیا اور وہاں جاکر اپنی مزید تعلیم جاری رکھی۔ پھر وہاں سے فنانشل سیکٹر کا تجربہ حاصل کرنے کے بعد چہرے مبارک پر داڑھی سجائی اور اپنے والد کے کہنے پر اس کے ساتھ سعودی عرب رہنا شروع کردیا۔ وہاں اس نے سعودی عرب میں ایک امریکی بنک میں نوکری شروع کی اور اپنے والد اور اس کے قریبی رشتے داروں کو پرکشش منافع پر انویسٹمنٹ کرنے کا جھانسہ دیا اور ان کی ساری رقم ہتھیا لی۔ اگر رقم صرف والد کی ہوتی تو وہ بے چارہ صبر کرلیتا، لیکن چونکہ آدھے خاندان کا مال لٹ چکا تھا، اس لئے والد نے اپنے بے ایمان بیٹے سے رقم کی واپسی کا مطالبہ کی جو کہ اس نے پورا کرنے سے انکار کردیا۔ مجبوراً اس کے باپ نے 1980 میں سعودی عرب میں اپنے بیٹے …

Raza RUMI argued recently that there are 5 myths in the Pakistani discourse that need to be put to rest

.In his view these are the ‘Doctrine of Necessity,’ ‘Strategic depth,’ ‘Use of Proxies’, ‘Ummah’ and ‘China will fix all’. Raza is right. A large part of our media and intellect is discussing these myths. I would argue that Raza’s 5 myths stem from our inability to configure proper democracy. Any democratic government with an open process of policymaking with due diligence (research and reporting through white papers and documentation), public consultation (forums with government provided information and genuine participation) and open decision-making processes (forums at all levels with proper public participation and open minutes even if with a lag), ghosts and monsters can be confronted. Simple. No decision without first, adequate public scrutiny, second documentation and consultation at all levels including the public, and finally full disclosure. There is no democracy without these 3 steps. Democracy is not mere elections but a complete process for running government for the welfare of a free and sovereign people. Change is not PM whim but his leadership of a process This is what universities and think tanks …