Latest Posts

Offshore assets – IV

General: 1. In my first article on the subject, published on 26 October2016, I had identified that there can be various structures in practice for the ownership of ‘Offshore Assets’ by Pakistani citizens. In this part of the article, I will dilate on various ownership structures, under which such assets can be held. These structures have direct bearing with the tax incidence in Pakistan, therefore, this part of the article is to be read in conjunction with what has been stated in Part III that covered various tax aspects on this subject.

Two Primary Structures 

2. There are primarily two structures in relation to Offshore Assets.

(i) Structures where Offshore Structures also own Pakistan Assets;

(ii) Structures exclusively owning Offshore Assets.

3. In the first case, foreign companies, trusts, and other forms of organisation, as identified in the following paragraphs, are formed/interposed directly or indirectly to hold Pakistan assets, including shares of listed and unlisted companies.

In the second case, such structures own only foreign assets.

4. In this connection, at the outset, it is stated the structures identified and explained in the following paragraphs are not unique in character with reference to Pakistani owners. These are generic situations and by and large remain same irrespective of the ownership of such structures.

5. The subject of sources and availability of funds for forming foreign companies have been identified in Part I of this series of articles; that aspect will not be repeated in this article.

6. It is important to note that State Bank of Pakistan for very valid reason does not permit such kinds of ownership, if the funds for the acquisition of foreign entity are not acquired through mechanism provided in Foreign Exchange Regulation Act, 1947. Nevertheless, as stated in my earlier article, the acquisition of foreign exchange through Foreign Currency Accounts (Protection) Ordinance, 2001 remains unquestionable for reasons explained under the earlier articles.

Generic Structures 

7. In the following illustrations which consist of 5 primary cases in diagrammatic form, I have tried to describe the process of maintaining offshore assets. Cases 1 to 5 have intentionally been prepared in a manner that whole process becomes understandable for common reader. In this connection, it is reiterated that these structures are not peculiar to Pakistan. All these structures are universally applicable, nevertheless, each country designs its corporate, fiscal and exchange laws according to her own socio-economic requirements.

Entity incorporated outside Pakistan is a separate person that is entitled to borrow or lend in Pakistan. Accordingly, the assets of that intervening company can be substantially different from the initial capital of the Pakistan resident. This is the process used generally to acquire properties in the West. The companies are usually incorporated in jurisdiction being tax haven. If that jurisdiction allows ‘Bearer Shares’ then transfer becomes a lot easier and swift. At the same time, bearer shares lead to loss of financial trail. In some jurisdictions bearer companies are also called ‘trust companies’.

This structure is an addition to Case II. In this situation, a foreign trust is formed by a person, say Mr A for the benefit of his dependants. Mr A becomes the settlor. His children are the beneficiaries. Trust can be discretionary or otherwise. In case of discretionary trust, there is no defined benefit for the beneficiaries, and the same depends on the discretion of settlor. The other party generally known is a ‘trustee’. The role of the trustee is effectively being the manager only. In my article relating no taxation, I deliberated in detail the present tax disclosure requirements with respect to trust structure. This is one of the most important, unattended subjects in Pakistan taxation.

In principle, the only difference between Case III and Case IV is that in the fourth structure, assets of the offshore setup also include assets in Pakistan. There is nothing illegal or impermissible under the law if assets in Pakistan are held in this manner. Ownership of assets in Pakistan is held by a foreign enterprise. For all purposes, it is a foreign owned asset.

Rationale and Firewalls 

8. Detailed analysis of these structures reveal that there are many firewalls under the existing regime of Pakistan that allow effective maintenance of Offshore Assets by Pakistani citizens. In that situation, a question may arise whether or not there could be a legislation or regulation in Pakistan that would enable Pakistanis to disclose all offshore assets, directly or indirectly, held offshore. This is a very debatable and difficult subject.

9. The primary question in this regard is whether there is a need for such disclosure if the transactions do not fall within the ambit of anti-money laundering law. Secondly, if such prescriptions are made then they may be abused to harass an honest business person, and many Pakistani citizens may opt to relinquish citizenship instead of unnecessary disclosure. In this regard, the primary objective of all provisions should be minimum regulations instead of policing. This requires that introduction of any such requirement be made after taking into account all these factors. These comments do not, in any manner, mean providing protection to money laundering or evasion of Pakistan tax. Whole debate and analysis about the Offshore Assets is being made to segregate that ownership of offshore company and offshore asset is not a crime. If the money and funds for the same have been acquired through crime then there is no excuse for the same. These two primary kinds of assets are, therefore, required to be segregated.

Nationlisation and Business Confidence 

10. With reference to the aforesaid discussion, read with earlier comments, the primary consideration is that my discussion in limited to funds and sources which are dealt within legal means and represent the structures which businesses may create inter-alia for various reasons. In the whole process, we should not forget that during the socialistic tendency of Bhutto regime, there was a ‘nationalisation’ of Pakistan assets of all major industrial families that led to a deep sense of insecurity for assets held in Pakistan. That environment has partly been diluted over the time; however, the inconsistent political rhetoric and quality and capacity of regulators are contributory factors in not cementing the required confidence. Secondly, the cases of genuine business people are merged and handled, especially in media and press, in the manner similar to those dealing in corrupt practices. This tendency evaporates the gesture of goodwill required in creating conducive environment for stable sustainable economic decision.

11. The history of the financial regulations, especially fiscal regulations, reveals that there is no concrete step to promote documentation and corporatization. On the contrary, there are provisions in the taxation law that provide perpetual immunity if foreign exchange is involved. That particular regime (Section 111(4) of the Income Tax Ordinance, 2001) and many others, such a presumptive tax regime, are root causes of low level of documentation and corporatization. It is reiterated that popular political rhetoric over-ride long-term objective that leads to perpetual problem in tax structure.

12. With reference to structure referred above, it can be summarised that it is a simple financial management issue, and legislation, including investigation, on such matter can only be made by personnel competent in that subject. It is not a legal question.

13. In the last part of these articles, I would try to provide some recommendation for an evolutionary process on the matter of possible reporting of offshore assets of Pakistan citizens.

Copyright Business Recorder, 2016

“مجھے تو یہی بتایا گیا تھا“

Worth reading ‘Pirchi PM’

(جناب اظہارالحق کی تازہ تحریر )

انہوں نے مجھے ایک شام وزیراعظم ہاوس میں بلا لیا۔ وزیراعظم صاحب بڑے تپاک سے ملے اور انہوں نے گفتگو کے آغاز ہی میں یہ وضاحت پیش کردی کہ میں بڑا نظریاتی آدمی ہوں۔ قانون کی بالادستی پر یقین رکھتا ہوں۔ میری حکومت نے مشرف کو سپریم کورٹ حکم پر ملک چھوڑنے کی اجازت دی ہے۔ میں نے وزیراعظم صاحب سے اختلاف کیا اور بتایا کہ سپریم کورٹ نے مشرف کا نام ای سی ایل سے نکالنے کے حکم کو برقرار تو رکھا لیکن اپنے فیصلے میں صاف لکھا کہ وفاقی حکومت مشرف کے خلاف آئین کی دفعہ چھ کی خلاف ورزی کا مقدمہ جاری رکھنے اور ان کی نقل و حرکت کے با رے میں کوئی بھی فیصلہ کرنے میں آزاد ہے۔ یہ سن کر وزیراعظم صاحب نے حیرانی ظاہر کی تو میں نے عرض کیا کہ جناب سپریم کورٹ کا فیصلہ منگوا لیں۔ کچھ ہی دیر میں فیصلہ آ گیا جو صرف دو صفحات پر مشتمل تھا۔ میں نے وزیراعظم کو یہ فیصلہ پڑھ کر سنایا تو انہوں نے کہا کہ مجھے تو یہی بتایا گیا تھا کہ سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد حکومت کو مشرف کا نام ای سی ایل سے نکالنا پڑے گا۔“
یہ پیرا گراف ایک معروف صحافی کے کالم کا حصہ ہے جو سات اگست کو شائع ہوا۔ اس سے معلوم ہوتا ہے کہ جنرل مشرف کیس میں سپریم کورٹ کا فیصلہ جو صرف دو صفحات پر مشتمل تھا‘ سابق وزیراعظم میاں محمد نوازشریف کے مطالعے سے محروم رہا۔ جنرل مشرف نے ان کے اقتدار کو ختم کر کے حکومت پر قبضہ کرلیا تھا۔ پھر میاں صاحب معاہدہ کر کے ملک سے باہر چلے گئے تو اس نے انہیں واپس نہیں آنے دیا۔ آئے تو ایئرپورٹ ہی سے واپس بھیج دیا۔ اگر میاں صاحب دشمنوں کی فہرست بنائیں تو کیا عجب‘ جنرل پرویز مشرف کا نام کئی دوسرے ناموں سے اوپر ہو۔ یہ بھی ہوسکتا ہے کہ وہ پانچ نام بھی‘ جن کا میاں صاحب جی ٹی روڈ پر ذکر کرتے رہے‘ جنرل صاحب کے نام کے نیچے ہی جگہ پائیں۔ ستم ظریفی دیکھیے کہ اتنے بڑے دشمن کے حوالے سے عدالت عظمیٰ فیصلہ دیتی ہے۔ فیصلہ سینکڑوں نہیں‘ صرف دو صفحوں پر مشتمل ہے۔ مگر میاں صاحب یہ دو صفحے بھی نہیں پڑھتے۔
آخر وجہ کیا تھی؟ کیا وہ پڑھنے سے قاصر تھے‘ یا پڑھنا کسر شان سمجھتے تھے؟ بہرطور وجہ کوئی بھی ہو‘ یہ طے ہے کہ وہ پڑھتے لکھتے کچھ نہیں تھے۔ قرائن بتاتے ہیں کہ وہ فائلیں خود پڑھتے تھے نہ ان پر کچھ لکھتے تھے۔ تحقیق کرنے والوں کے لیے یہ ایک زبردست موضوع ہے۔ وزارت عظمیٰ کے تین ادوار میں کتنی فائلوں پر ان کے لکھے ہوئے نوٹ یا احکام ان محققین کو ملیں گے؟ طریق کار‘ جو سننے میں آیا ہے یہ تھا کہ ان کے میر منشی‘ جو ڈپٹی پرائم منسٹر تھے‘ ان سے فائلیں ”Discuss“ کرتے تھے اور پھر فائلوں پر خود ہی احکام لکھتے تھے۔
میاں صاحب کے اس ”طرز حکومت“ کی ایک اور مثال اس وقت نمایاں ہوئی جب وزیراعظم شاہد خاقان عباسی نے ای سی سی کی صدارت اسحاق ڈار صاحب سے لے کر اپنے آپ کو سونپی۔
یہاں تھوڑی سی وضاحت ای سی سی کے بارے میں ضروری ہے تاکہ قارئین کو اس کی اہمیت کا اندازہ ہو جائے۔ اس کا پورا نام ”اکنامک کوآرڈی نیشن کمیٹی“ ہے۔ یہ حکومت کی اہم ترین کمیٹی ہے جو معیشت اور معاشی ترقی کے ضمن میں بنیادی فیصلے کرتی ہے۔ اقتصادی پالیسیاں‘ مالی استحکام کے لیے اقدامات‘ صنعت و تجارت‘ زراعت‘ درآمدات و برآمدات‘ ٹیرف‘ دیگر محصولات توانائی‘ غرض تمام مسائل جو ملک کی اقتصادی ترقی کے لیے ریڑھ کی ہڈی کی طرح ہیں‘ ای سی سی میں زیربحث آتے ہیں اور فیصلے صادر ہوتے ہیں۔ اس کا سربراہ وزیراعظم ہوتا ہے۔ کلیدی محکموں کے انچارج وزرا اس کے اجلاس بطور ممبر اٹنڈ کرتے ہیں۔ بے نظیر بھٹو اور شوکت عزیز بطور وزیراعظم اس کے اجلاسوں کی صدارت بنفس نفیس کرتے تھے۔ یوسف رضا گیلانی بھی خود ہی کرتے رہے۔ گیلانی صاحب کے عہد کے اواخر میں شوکت ترین وزیر خزانہ تعینات ہوئے تو وہ کرنے لگے۔ تاہم جب تک میاں نوازشریف وزیراعظم رہے‘ چار سال میں انہوں نے ملک کے اس اہم ترین ادارے کے کسی ایک اجلاس کی صدارت بھی نہ کی۔
اس کی کیا وجہ ہو سکتی ہے؟ ظاہر ہے کہ وہی وجہ ہے جس کی بنا پر انہوں نے دو صفحوں کا فیصلہ نہ پڑھا اور کسی فائل کو شرف التفات نہ بخشا۔ یعنی بے نیازی اور قبائلی طرزِ حکومت۔ وہ کسی ایسے جھنجھٹ میں پڑنا پسند ہی نہ کرتے تھے جس میں دماغ پر زور ڈالنا پڑے۔ حکومت اسحاق ڈار صاحب کرتے تھے۔ وزیراعظم مری‘ لاہور اور بیرون ملک آمدورفت میں مشغول رہتے تھے۔
ایسا شخص جو دو صفحے بھی نہیں پڑھتا‘ فائل بھی نہیں دیکھتا‘ کسی اہم اجلاس کی‘ جس میں اعداد و شمار اور اقتصادی پیچیدگیاں ہوں‘ صدارت بھی نہیں کرتا‘ اس نے زندگی میں کوئی کتاب کیا پڑھی ہوگی؟ کوئی کتاب رسالہ دیکھتے تو معلوم ہوتا کہ انقلاب کسے کہتے ہیں۔ یہ جو جاتی امرا کے قریب پہنچ کر انہوں نے انقلاب کا نعرہ لگایا ہے تو وہ صرف اور صرف وزیراعظم ہاﺅس میں اپنی واپسی کو انقلاب سمجھتے ہیں۔ اگر ایسا نہیں ہے تو چار سال میں انہوں نے کسی انقلاب کا نام کیوں نہ لیا؟ ان کے دہنِ مبارک سے کبھی کسی تعلیمی‘ زرعی یا معاشی پالیسی کی وضاحت نہیں سنی۔ ترقی سے مراد ان کی شاہراہیں ہیں اورانقلاب سے مراد یہ ہے کہ وزیراعظم بنیں اور رہیں۔
پرانے زمانوں میں جب بادشاہ شکار کھیلتے تھے تو ایک جم غفیر لشکریوں اور درباریوں کا ان کے ہمراہ ہوتا تھا۔ پورے جنگل پر قبضہ کرلیا جاتا تھا۔ شکار کو ہر طرف سے گھیر گھار کر بادشاہ کے نرغے میں لایا جاتا تھا۔ یوں جہاں پناہ شیر یا چیتے یا ہاتھی کا ”شکار“ کرتے تھے۔ سابق وزیراعظم بھی درباریوں کا جم غفیر لے کر نکلے۔ دو ہزار کی نفری تو اس انقلاب کے لیے دارالحکومت کے ترقیاتی ادارے ہی نے مہیا کردی۔ سات سو گاڑیاں بھی۔ پورے وفاقی حکومت‘ اس حکومت کے جملہ وسائل‘ پوری پنجاب حکومت‘ پنجاب حکومت کی افرادی قوت‘ گاڑیاں اور مالی وسائل بروئے کار لائے گئے۔ ان سب نے انقلاب کے گرد گھیرا تنگ کیا اور لاہور پہنچ کر وہ میاں صاحب کے مکمل نرغے میں آ گیا۔ اسی انقلاب کا اعلان وہاں یا اس کے قریب پہنچ کر کیا گیا۔
اس انقلاب کے اجزا کیا ہے؟ اڑھائی تین کروڑ کی گھڑی‘ کروڑوں اربوں کے فلیٹ‘ درجنوں کارخانے‘ جائیدادیں‘ محلات‘ سرکاری خزانے کا بے تحاشا استعمال۔
انقلاب آیا تو پہلا ہدف اس انقلاب کا وفاق اور پنجاب میں مسلم لیگ (ن) کی حکومتیں ہوں گی۔ انقلاب تبدیلی لے کر آتا ہے۔ میاں صاحب ایک لمحہ کے لیے بھی یہ ماننے کو تیار نہیں کہ وفاق میں انہی کی پارٹی کی حکومت ہے۔ وہ ایسا انقلاب چاہتے ہیں جس میں وہ اور صرف وہ و زیراعظم ہوں۔
آپ دنیا کے واحد حکومتی سربراہ تھے جو فائل خود نہ پڑھتے تھے نہ اس پر کچھ لکھتے تھے۔ ای سی سی کے اجلاس بھی خود نہیں اٹنڈ کرتے تھے۔ دو صفحے کا فیصلہ پڑھنا ان کے لیے عذاب تھا۔ آپ کا کیا خیال ہے وزارت خارجہ کی پالیسی کتنی فائلیں اپنوں نے دیکھی اور پڑھی ہوں گی؟ افغانستان‘ ایران‘ سعودی عرب اور بھارت کے معاملات میں انہوں نے کیا کچھ ان فائلوں پر تحریر کیا ہوگا؟ آپ ان کی صلاحیت کا اندازہ اس بات سے لگائیں کہ سعودی عرب میں جس اجلاس میں امریکی صدر ٹرمپ نے بھارت کو دہشت گردی کا شکار قرار دیا اور پاکستان کا ذکر تک نہ کیا‘ اس میں وہ بنفس نفیس شریک تھے۔ انہوں نے پاکستان کی اس سبکی پر چوں تک نہ کی۔ کوئی اور ہوتا تو سٹیج پر جا کر وضاحت کرتا۔ میزبان حکومت سے احتجاج کرتا۔
جب ہم قبائلی طرز حکومت کہتے ہیں تو یوں ہی نہیں کہتے۔ قبائلی طرز حکومت میں قبیلے کا سردار ہی سب کچھ ہوتا ہے۔ وہ کسی ادارے‘ وزارت یا محکمے کے مشورے کا پابند نہیں ہوتا۔ وزارت خارجہ کے فرشتوں کو بھی معلوم نہیں اور ملک کا وزیراعظم جندال سے ملاقات کررہا ہے۔ وزارت خارجہ کو علم ہی نہیں اور بھارتی وزیراعظم جاتی امرا پہنچ جاتا ہے۔ وزارت خارجہ بے خبر ہے اور قطر سے وفد آ جاتا ہے۔ مہینوں لندن رہتے ہیں اور کوئی قائم مقام وزیراعظم ملک میں نہیں ہوتا۔ قبیلے کے سردار کی صاحبزادی عملاً سرداری سنبھال لیتی ہے۔
امید واثق ہے کہ سپریم کورٹ کے اس فیصلے کو‘ جس کی بنا پر آپ نااہل ہوئے آپ نے ابھی تک نہیں پڑھا۔ کالم کے شروع میں معروف صحافی کے کالم کا جو اقتباس دیا گیا ہے اس کی رُو سے ”وزیراعظم صاحب نے یہ سن کر حیرانی ظاہر کی۔“ اب بھی انہیں یہی بتایا گیا ہے کہ آپ نے تنخواہ نہیں لی۔ اس لیے نااہل قرار دیئے گئے۔ کوئی جا کر انہیں پورا فیصلہ سنائے تو وہ یقینا حیرت سے کہیں گے۔ ”مجھے تو یہی بتایا گیا۔“
اکبر اعظم ناخواندہ تھا مگر ہر کتاب‘ ہر فائل‘ ہر کاغذ پڑھواتا تھا اور فیصلے لکھواتا تھا۔ اعظم اس کے نام کا پیدائشی حصہ نہ تھا۔ پچاس برس دن رات کام کر کے یہ لقب کمایا۔ ایک ایک گھوڑا اس کے سامنے داغا جاتا تھا۔ میاں صاحب ناخواندہ نہیں۔ ماشاءاللہ تعلیم یافتہ ہیں مگر جو اسلوب حکومت کرنے کا انہوں نے دکھایا اس سے یہ قطعاً معلوم نہیں ہوتا کہ تعلیم یافتہ ہیں۔ کسی سے معاشی ترقی ہی کی تعریف پوچھ لیتے۔ معلوم ہو جاتا کہ صرف سڑکوں کو ترقی نہیں کہتے۔ اس میں صحت‘ تعلیم‘ صنعت‘ زراعت‘ افرادی قوت اور بہت کچھ اور بھی شامل ہے۔
چار سال میں انہوں نے ملک میں کتنی یونیورسٹیوں‘ کتنے کالجوں‘ کتنے ہسپتالوں کا دورہ کیا۔ زرعی پالیسی میں کیا حصہ ڈالا اور تو اور سینٹ اور قومی اسمبلی میں بھی مہینوں نہیں گئے۔ کابینہ کے وزرا ملاقات کے لیے ترستے رہتے تھے اور صحافیوں کی مدد لینے کے لیے مجبور تھے۔
انقلاب جاتی امرا سے چل پڑا ہے۔ بس پہنچنے ہی والا ہے۔ بیوی بہت دیر سے کہہ رہی ہے کہ پکانے کے لیے گھر میں کچھ نہیں۔ سبزی لا کر دو۔ میں اس ڈر سے دکان پر نہیں جا رہا کہ پیچھے سے انقلاب نہ آ جائے۔

روہنگیا مسلمانوں پر ظلم کی انتہا

برما (میانمار) میں بودھ مت کے انتہا پسندوں اور برمی فوج کے ہاتھوں اراکان کے روہنگیا مسلمانوں کے قتل عام کی انتہا ہو گئی ہے۔ گزشتہ دو روز میں مزید 370مسلمان شہید کر دیئے گئے ہیں، 30ہزار مسلمانوں کے گھر جلا دیئے گئے،87 ہزار لٹے پٹے مسلمان پناہ کے لئے بنگلہ دیش کی سرحد پر پہنچ گئے جو چند ہزار سرحد کے اندر داخل ہو سکے انہیں بنگلہ دیش کی فوج فائرنگ کا نشانہ بنا رہی ہے۔ اسی دوران جان بچانے کے لئے ہجرت کرنے والے مسلمانوں کی تین کشتیاں الٹنے سے 26افراد جاں بحق ہو گئے۔ مسلمانوں کو اس سفاکی سے قتل کیا جا رہا ہے کہ ان کی سربریدہ لاشیں کھلے آسمان تلے پڑی ہیں۔ دنیا سوشل میڈیا پر یہ سب کچھ دیکھ رہی ہے، مسیحی پیشوا پوپ فرانسس بھی کہنے پر مجبور ہو گئے ہیں کہ انہیں مسلمان ہونے کی سزا دی جا رہی ہے۔ اقوام متحدہ نے بھی اپنی ایک قرارداد میں بجا طور پر تسلیم کیا ہے کہ اس وقت روئے زمین پر سب سے مظلوم برما کے مسلمان ہیں۔ برما کی جمہوریت پسند رہنما نوبیل انعام یافتہ آنگ سان سوچی جس نے آمریت کے خلاف سالہا سال صعوبتیں کاٹیں اس کی موجودگی میں فوج مسلمانوں کو قتل کے علاوہ زندہ جلا رہی ہے، کی پارٹی برما میں آج برسر اقتدار ہے۔ پاکستان کی وزارت خارجہ نے اس پر شدید احتجاج کیا ہے۔ قومی اسمبلی میں اس مسئلہ پر تحریک التوا پیش کی گئی ہے۔ نوبیل انعام یافتہ ملالہ یوسف زئی نے سوچی سے اپیل کی ہے کہ وہ برما میں مسلمانوں پر مظالم بند کرائیں۔ برما کے مظلوم مسلمانوں کو انسانیت سوز سلوک سے بچانے کے لئے عالمی ضمیر سویا ہوا ہے اور سلامتی کونسل بھی مداخلت نہیں کر رہی۔ ضرورت اس بات کی ہے کہ عالمی ادارے کے علاوہ او آئی سی اس صورتحال کا فوری نوٹس لے اور لاکھوں روہنگیا مسلمانوں پر مظالم رکوانے کے لئے اپنا کردار ادا کرے، انہیں اس ملک میں وہ تشخص دیا جائے جس کے تحت وہ وہاں چھ سو سال سے رہ رہے ہیں۔

امریکہ۔ ہوئے تم دوست جس کے ..

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے پاکستان مخالف بیانات پر پاکستان کے عوامی حلقوں میں حیرت اور افسوس کا اظہار کیا جارہا ہے۔ امریکہ کا اتحادی بننے کے بعد 50 کی دہائی سے آج تک پاکستان کو امریکہ کی جانب سے کئی بار وعدہ فراموشی، لاتعلقی اور مخالفانہ رویوں کا سامنا کرنا پڑا ہے۔ امریکہ کی نسبت اس کے حلیف کئی یورپی ممالک کے ساتھ پاکستان کے تعلقات زیادہ خوشگوار اور پُراعتماد رہے ہیں۔ دنیا میں سیاسی استحکام اور معاشی ترقی میں امریکہ اور چند یورپی ممالک یقیناً آگے ہیں۔ ایشیا میں پہلے جاپان اور پھر چین کے علاوہ کوریا، ویت نام، ملائشیا نے بھی معاشی ترقی میں شان دار مثالیں قائم کی ہیں۔ لیکن کچھ عرصہ پہلے تک پاکستان کے پالیسی ساز امریکہ اور مغربی یورپی ممالک کے ساتھ تعلقات کو زیادہ اہمیت دیتے رہے ہیں۔ ہم نے ایشیائی ممالک کے ساتھ گہرے تعلقات کو ایک طویل عرصے تک اپنی ترجیحات میں شامل نہیں کیا۔ ہم سرمایہ دارانہ نظام کے وکیل اور جنگوں کو اپنی معاشی ترقی کا محور بنانے والے امریکہ کی خوش نودی کے طلب گار بنے رہے۔ امریکہ کے ساتھ تعلقات کو پاکستان کی خارجہ پالیسی کا بنیادی نکتہ بنایا جانا پاکستان کے سیاسی اور اقتصادی مفاد میں تھا یا اس فیصلے کی وجوہات ہماری ذہنی مرعوبیت اور ردعمل کی نفسیات میں بھی پنہاں ہیں؟ بین الاقوامی فورسز مثلاً اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل میں پاکستان کی زیادہ مدد امریکہ نے نہیں بلکہ پاکستان کے پڑوسی دوست ملک چین نے کی ہے۔ چین نے کبھی بھی پاکستان کے ساتھ مخالفانہ یا لاتعلقی والا رویہ اختیار نہیں کیا۔ جبکہ پاکستان امریکہ تعلقات میں امریکی مفادات ہمیشہ حاوی رہے۔
امریکہ کو پاکستان میں فوجی اڈوں کی فراہمی، لاہور میں پاکستانیوں کے قاتل ریمنڈ ڈیوس کی رہائی سمیت دیگر کئی معاملات میں امریکہ کے پاکستان سے مطالبات بلا روک ٹوک ہوئے۔ دوسری طرف پاکستان سے امریکی مطالبات یا توقعات کو ہمیشہ امریکی قوانین کے تحت برتا گیا۔
امریکہ سے مختلف ممالک کے تعلقات کا جائزہ لینے سے پتہ چلتا ہے کہ جس ملک نے امریکہ کے ساتھ جتنی زیادہ وفاداری اور تابع داری کا مظاہرہ کیا اسے امریکہ نے اتنا ہی دبا کر رکھا۔ کئی عرب اور ایشیائی ممالک کی مثالیں ہمارے سامنے ہیں۔ اس کے برعکس جن ممالک کے حکمرانوں نے امریکہ کے ساتھ تعلقات میں شخصی مفادات اور ذاتی مصلحتوں کے بجائے اپنے قومی مفادات کو مقدم رکھا ان ممالک میں ترقی اور استحکام آیا۔ سب سے نمایاں مثال امریکہ کے پڑوسی ملک کیوبا کی ہے۔ کیوبا کے لیڈر صدر فیڈل کاسترو ایک بہت محب وطن اور انتہائی دیانت دار شخص تھے۔ امریکہ نے انہیں اقتدار سے ہٹانے کے لیے خفیہ اور اعلانیہ کئی کوششیں کیں لیکن امریکہ فیڈل کاسترو یا ان کے ملک کیوبا کا راستہ روک نہ سکا۔ فیڈل کاسترو کا جینا مرنا اپنے ملک اور اپنی قوم کے لیے تھا۔ انہوں نے سیاست اور عوامی عہدے کو اپنے لیے دولت کے حصول کا ذریعہ نہیں بنایا۔ فیڈل کاسترو کی کوئی آف شور کمپنی نہیں تھی۔ انہوں نے کیوبا سے باہر اپنے ذاتی بینک اکاؤنٹ نہیں کھولے، کوئی جائیداد نہیں بنائی۔ فیڈل کاسترو اور ان کے اہل خانہ اپنے علاج کے لیے کیوبا سے باہر نہیں جاتے تھے۔ ان کے خاندان کے بچے مہنگے پرائیویٹ اسکولوں میں بھی نہیں پڑھتے تھے۔ اسلامی ملکوں میں بھی ایسی دو مثالیں موجود ہیں۔ ایک ملائیشیا کے لیڈر مہاتیر محمد، دوسرے ترکی کے مقبول ترین حکمران رجب طیب اردوان۔ طیب اردوان کو ترک معاشرے کے اسلامی سوچ رکھنے والے اور دیگر معتدل مزاج طبقات کی حمایت حاصل ہے لیکن رجب طیب اردوان کی خارجہ پالیسی جذباتیت کے بجائے ٹھوس حقائق کو سامنے رکھ کر ترتیب دی گئی ہے۔
دنیا میں جمہوریت کا چیمپئن ملک امریکہ اندرون ملک جو چاہے کہتا رہے، بین الاقوامی تعلقات میں وہ اس نظریے پر کاربند ہے کہ بیرون امریکہ اصل اہمیت جمہوری یا غیر جمہوری نظاموں کی نہیں ہے بلکہ صرف اور صرف امریکی مفادات کی ہے۔ جو ممالک امریکہ کے مفادات پورے کر رہے ہوں وہاں انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں یا شخصی حکومتوں پر امریکہ کو کوئی اعتراض نہیں ہوتا۔
پاکستان میں ایک طبقہ امریکہ کے ساتھ وفادارانہ اور تابع دارانہ تعلقات کو اہم سمجھتا ہے جبکہ ایک طبقہ امریکہ کو آنکھیں دکھانے اور اس کے ساتھ مکمل عدم تعاون کی پالیسی چاہتا ہے۔ میرے نزدیک یہ دونوں نقطہ ہائے نظر انتہا پسندانہ ہیں۔ بین الاقوامی تعلقات میں مذہب، لسان، نسل کے تعلق کے بجائے ملکوں کے اپنے اپنے مفادات کو ترجیح دی جاتی ہے۔ حالیہ دنوں میں اس کا عملی مظاہرہ سعودی عرب اور خلیج کے دیگر مسلم اور عرب ممالک کے اپنے ایک برادر مسلم عرب ملک قطر کے ساتھ تنازع کی شکل میں بھی ہورہا ہے۔
ہم پاکستانیوں کو اس حقیقت کو تسلیم کرلینا چاہیے کہ خارجہ پالیسی کی تشکیل و ترتیب میں جذباتیت کے بجائے حقیقت پسندی اور وقت کے تقاضوں کو پیش نظر رکھنا ضروری ہوتا ہے۔ پاکستان کی مسلح افواج کا شمار دنیا کی بہترین افواج میں ہوتا ہے۔ ایک اہم بات یہ ہے کہ پاکستانی قوم میں اپنی فوج کے لیے محبت اور احترام کے جذبات پائے جاتے ہیں۔ کسی ملک کے استحکام اور ترقی کے لیے اس کے عوام اور فوج کے درمیان اعتماد کا تعلق انتہائی ضروری ہے۔ پاکستانی قوم کو اپنی مسلح افواج پر بھرپور اعتماد ہے۔ اس اعتماد کو برقرار رکھنے اور اسے مزید ترقی دینے کے لیے پاکستان میں جمہوری اداروں کا استحکام ضروری ہے۔ یہ استحکام عوام اور ریاست کے سب اداروں کی مشترکہ ذمہ داری ہے۔ حکومت کو عوام کی جتنی زیادہ تائید حاصل ہوگی بین الاقوامی تعلقات میں اس کی پوزیشن اتنی ہی زیادہ مضبوط ہوگی۔
خارجہ پالیسی ایک بہت نازک اور حساس معاملہ ہے۔ خارجہ پالیسی بنانے اور وقتاً فوقتاً مختلف اہم فیصلے کرنے کے لیے انتہائی ذہین، باصلاحیت، شاطر، دوربین اور دور اندیش محب وطن، معاملہ فہم اصحاب علم و دانش کی ضرورت ہوتی ہے۔ خارجہ پالیسی عوامی اجتماعات میں نہیں بنائی جاتی۔ انتخابات کے دوران یا دیگر کسی موقع پر خارجہ پالیسی کے ایک دو نکات کو عوامی جذبات ابھارنے کے لیے زیر بحث لایا جانا اور بات ہے لیکن ان مواقع پر بھی خارجہ پالیسی کے لیے عوامی جذبات سے رہنمائی نہیں لی گئی بلکہ عوامی جذبات ابھار کر طے شدہ پالیسی کے چند نکات پر عوامی تائید حاصل کی گئی۔ امریکی صدارتی انتخابی مہمات میں ایسا کئی بار دیکھا گیا ہے۔ ویت نام سے امریکی فوجوں کی واپسی کا معاملہ ہو، عراق میں تباہی پھیلانے والے ہتھیاروں کا الزام عائد کرکے اقتصادی پابندیاں عائد کرنا ہو، افغانستان پر پہلے روسی مداخلت کے خلاف اور بیس سال بعد خود امریکی مداخلت کے نکات پر صدارتی امیدواروں نے اپنی ترجیحات عوام کے سامنے بیان کیں لیکن انتخابات جیتنے کے بعد ضروری نہیں کہ ان نکات پر عمل بھی ہوا ہو۔ تازہ ترین مثال خود ڈونلڈ ٹرمپ کی افغان پالیسی کی ہے۔
پاکستان کو دنیا کے ہر ملک کے ساتھ اپنے مفادات کے تحت سفارتی تعلقات قائم رکھنے چاہئیں۔ کشمیری عوام کو حق خود ارادیت دیا جانا لازمی ہے۔ دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پاکستان نے سب سے زیادہ قربانیاں دی ہیں۔ ان قربانیوں کا اعتراف ہونا چاہئے۔
اپنے پڑوسی مسلم ملکوں سے تعلقات کی بات ہو، امریکہ کے ساتھ تعلقات کی نوعیت ہو، سی پیک کی تعمیر ہو، پاکستان کو اپنی خارجہ پالیسی جذباتیت یا امریکہ سے مرعوبیت والے مائنڈ سیٹ کے ساتھ نہیں بلکہ خالصتاً پاکستان کے مفادات کے تابع رکھ کر ترتیب دینی ہوگی۔ اس مقصد کے حصول کے لیے جہاں سب متعلقہ اداروں کی بامعنی مشاورت ضروری ہے وہیں یہ بھی لازمی ہے کہ خارجہ پالیسی بنانے والے سیاست دان اور افسران امریکہ، برطانیہ، اسپین، سوئٹزر لینڈ یا عرب ممالک میں دولت جمع کرنے والے اور بیرون ملک جائیدادیں بنانے والے نہ ہوں۔
اللہ کے نبی حضرت عیسیٰ علیہ السلام کا ارشاد گرامی ہے کہ انسان کا دل وہاں ہوتا ہے جہاں اس کا مال ہوتا ہے۔

قلم فالج زدہ ہےلفظ سارے برف جیسے ہیں

کیا کبھی اس ملک میں کوئی ایسا دن بھی آئے گا جب اس قسم کی غیرمہذب بلکہ غیرانسانی اور منحوس خبریں ڈھونڈنے سے بھی کہیں دکھائی اور سنائی نہیں دیں گی کہ….وزیراعلیٰ پنجاب جیسے ’’خادم‘‘ کے صرف 8سرکاری دفاتر ہیں جن میں صرف 188افسروں سمیت صرف 701ملازمین تعینات ہیں۔ کلب روڈ 1، 5، 7، 8، 90شاہراہ قائداعظمؒ، پنجاب اسمبلی، ارفع کریم ٹاور وغیرہ کے دفاتر مشیر و دیگر استعمال کر رہے ہیں۔ 180ایچ ماڈل ٹائون کو سکیورٹی وجوہات پر کیمپ آفس کا درجہ دیا گیا ہے جبکہ دستاویزات میں صرف 2دفتر دکھائے گئے ہیں۔ وزیراعلیٰ کے ہیلی کاپٹر پر42، گرائونڈ طیارے پر 4پائلٹس سمیت 44اہلکار تعینات ہیں اور صرف 25کروڑ کا بجٹ مختص ہے۔ گاڑیوں کا پورا فلیٹ موجود ہے، کاغذات میں صرف دو کا بتایا گیا ہے۔ روس سے ہیلی کاپٹر لانا 4ارب میں پڑا۔دروغ برگردن راوی، میں نے یہ سب کسی اخبار سے مستعار لیا ہے تاکہ عوام کو اس مقروض ملک کے حکمرانوں کے لائف اسٹائل کا اندازہ ہو اور وہ جان سکیں کہ ان کی زندگیاں اس قدر قابل رحم کیوں ہیں۔ اس طرح تو انگریز سرکار اور استعمار نے بھی اس دھرتی کے ساتھ نہ کیا تھا جتنی بیدردی سے یہ لوگ اس گنگا میں اشنان کر رہے ہیں۔ یہ تام جھام تو ترقی یافتہ متمول ملک کے حکمرانوں کو بھی نصیب نہیں۔ چند ڈالر فالتو خرچ کریں تو انہیں اپنے اپنے عہدوںاور عزت کے لالے پڑ جاتے ہیں لیکن ان کودیکھو….. ہم جیسوں کولکھتے ہوئے شرم آنے لگی ہے، انہیں یہ سب کرتے ہوئے نہیںآتی۔ سچی بات ہے مجھ جیسے کودن کو تو آج تک اس بات کا ہی کوئی علم نہیں کہ اس ملک کا صدر اور اس کے گورنرز عوام کو کس بھائو پڑتے ہیں اور اس ’’لاگت‘‘ کے جواب میں بھوکے ننگے عوام کو دیتے کیا ہیں؟ادھر مریم نواز نے شفاف، صاف، آزادانہ، منصفانہ اور غیر جانبدارانہ ضمنی انتخاب کے لئے نوکریوں کی لوٹ سیل لگا دی ہے۔ ملازمتوں کے لئے درخواستوں کے ڈھیر نمٹائے جارہے ہیں۔ ناراض کارکنان راضی ہونا شروع ہوگئے ہیں تاکہ ہر قیمت پر بازی جیتی جاسکے چاہے ہر شے کا سوا ستیاناس ہوجائے کہ یہی جمہوریت ہے اور بے شک جمہوریت بہترین انتقام ہے لیکن صرف عوام سے۔شہر کو برباد کرکے رکھ دیا اس نے منیرؔشہر کو برباد میرے نام پر اس نے کیاعوام کا نام لے کر عوام کو برباد کرنے کی ایسی روشن مثالیں اور کون سی ’’جمہوریہ‘‘ پیش کرسکتی ہیں؟ تو یقین مانیں انجام بھی ایسا ہی ہوگا ۔ سنا ہے ’’ابومریم‘‘ بھی پرواز کے لئے پرتول رہے ہیں۔ عید اپنے وطن میں منائیں گے۔ایسے مستقل حالات ِ حاضرہ پر ہزار لعنت کہ اس عمر میں سن رسیدہ اعصاب ان کے متحمل نہیں ہوسکتے لیکن کیا کریں؟ کدھر جائیں کہ ’’امیگریشن‘‘ کے لئے لمبا انتظار ضروری بھی ہے، مجبوری بھی….. سروائیول کی صرف ایک ہی صورت ہےکہ آدمی ایسی بلڈپریشر دشمن خبروں سے نظریں چرا کر شاعری کی طرف نکل جائے حالانکہ مدت ہوئی میں شاعری اور فکشن سے گریز کرتا ہوں۔ عرصہ بعد ڈھنگ کا شعری مجموعہ سامنے آیا ہے۔ دیوان کا عنوان ہے ’’مرے لہجے میںعیسیٰ بولتا ہے‘‘ شاعر کا نام ہے مجتبیٰ حیدر شیرازی جو پیشہ ور شاعر نہیں، قانون دان ہے لیکن پیشہ ور شاعروں سے قرنوں آگے۔ شیرازی میں ایک ہی برائی ہے کہ وہ میرا دوست بھی ہے۔ عشروں پہلے ہم دونوں نے جی بھر کے ’’ایران گردی و جہان گردی‘‘ کی تھی۔ پھر اسے قانون اور مجھے کالم نگاری کھا گئی۔ وہ وفاقی دارالحکومت اور میں صوبائی دارالحکومت کا قیدی ہو گیا لیکن ’’ترے خیال سے غافل نہیں رہا‘‘ والی بات ہے۔اس نے جو مجموعہ مجھے بھجوایا ہے اس پر لکھا۔’’میرے ہمزاد ایسے دوست حسن نثار کی نذر‘‘اس پر عدیم ہاشمی مرحوم یاد آیا جس نے کہا تھا؎کٹ ہی گئی جدائی بھی ایسا نہیں کہ مر گئےتیرے بھی دن گزر گئے، میرے بھی دن گزر گئے۔ہم سب دراصل یہاں دن ہی گزار رہے ہیں یا شاید وقت ہمیں گزار رہا ہے ورنہ زندگیاں تو یہاںصرف چند ہزار خاندان گزار رہے ہیں جن کے لئے یہ ملک اک ایسی چراگاہ ہے جس کی گھاس ہمیشہ قومی پرچم کی طرح سبز رہتی ہے۔ باقی سب اس پرچم کی ’’سفید پٹی‘‘ سے زیادہ کچھ نہیں کیونکہ مخصوص خاندانوں کے علاوہ باقی سب ’’اقلیت‘‘ہیں۔اور اب سنئے مجتبیٰ حیدر شیرازی کے چند شعر جن کے لئے اتنی لمبی تمہید باندھی ہے۔تعلق کی ریاضی میں نفی ہونا مقدر تھابہت دشوار تھا لیکن یہی ہونا مقدر تھا…..OOO…..دشوار ہی سہی یہ ارادہ کیا تو ہےاس بار خود سے ملنے کا وعدہ کیا تو ہے…..OOO…..وقف رنج و ملال کر دیا ہےزندگی نے نڈھال کر دیا ہے…..OOO…..زخم کاغذ پہ بو گئی ہوگی ٹیس تھی لفظ ہوگئی ہوگی…..OOO…..جاگتی آنکھوں سے خوابوں کو بسر کرتے ہیںاپنے حصے کے عذابوں کو بسر کرتے ہیں…..OOO…..درپیش امتحاں ہیں اگر انتظار کےبیٹھے ہوئے ہیں راہ میں پائوں اتار کے…..OOO…..قلم فالج زدہ ہے لفظ سارے برف جیسے ہیںکہانی آگ کی ہے استعارے برف جیسے ہیں۔

ٹرمپ سےٹرمپ تک

ٹرمپ سےٹرمپ تکآج پھر موضوعات کا متنجن کیونکہ سب ہی تھوڑے تھوڑے ضروری ہیں لیکن سب سےپہلےچیئرمین سینیٹ رضا ربانی جو متوازن اور نیک نام سیاست دان ہونے کےساتھ ساتھ ممتازدانشور اور بہترین انسان بھی ہیں۔ آپ نے حالیہ ’’ٹرمپیوں‘‘ کے جواب میں اپنے مخصوص دھیمے دھیرے انداز سے ہٹ کر کہا ہے کہ ’’ہمیں ویت نام کمبوڈیا نہ سمجھا جائے۔امریکہ نے غلطی کی توپاکستان امریکی فوجیوں کا قبرستان بن جائےگا‘‘ہمیں عمل اور ردعمل …..قول اور فعل میں اعتدال و میانہ روی کا حکم ہے ۔ خارجہ امور اور پاک امریکہ تعلقات کی اتار چڑھائو سے بھرپور تاریخ کو ایک طرف رکھتے ہوئے پہلی حقیقت یہ ہے کہ ڈونلڈ ٹرمپ امریکہ نہیں، امریکی تاریخ کا محض ایک ’’مختصر‘‘ سا مرحلہ ہے ۔ دوسری گزارش یہ کہ افراد اور اقوام کے درمیان تعلقات کا ایک آفاقی، ازلی اور ابدی اصول ہے کہ دوستوں کے ساتھ دوستی قائم رکھو، جو نیوٹرل ہوں انہیں دوستی کے دائرے میں لانے کی کوشش کرو اور جو دشمن ہو اسے نیوٹرل کرنے کی کوشش کرو۔ احتیاطاً یہ کہنا بھی ضروری ہے کہ قوموں کے درمیان ’’دوستی ‘‘ اور ’’دشمنی ‘‘ کے الفاظ میں نے وسیع تر معنوں میں استعمال کئے ہیں اور اس سے میری مراد ٹین ایجرز کی سی دوستی اور دشمنی ہرگز نہیں ۔ یہ یاد دلانا بھی ہرگز ضروری نہیں کہ ہم بوجوہ ایک انتہائی جذباتی ہجومی ہیں جو دو انتہائوں کے درمیان پڑائو کرنا پسند نہیں کرتا جبکہ دھرتی کی صدیوں پر محیط دانش ہمیں بتاتی ہے کہ نہ اتنے میٹھے بنو کہ نگل لئے جائو اور نہ اتنے کڑوے ہو جائو کہ تھوک دیئےجائو۔اجتماعی دانش بروئے کار لانے کا وقت ہے اور یہ حکومتی فیصلہ سو فیصد درست کہ حکومت سیاسی اور عسکری رہنمائوں کے ساتھ سرجوڑ کر بیٹھے، مشترکہ حکمت عملی وضع کی جائے دوست ملکوں اور اپنے عوام کو اعتماد میں لیا جائے، اپنا اندرونی گند تیزی سےصاف کیا جائے اپنے گھر کی از سر نو تنظیم و ترتیب کا اہتمام کیا جائے توایسی کوئی سچوئشن نہیں جس کا سامنا نہ کیا جائے ۔اب چلتے ہیں اپنے ’’مقامی ٹرمپ‘‘ کی طرف سب سے پہلے ان کی اہلیہ بیگم کلثوم نواز کی بیماری جس پر صدر، آرمی اور فضائیہ چیفس کے ساتھ ساتھ عمران خان اور زرداری فیملی کی نیک تمنائیں قابل تحسین ہیں کہ دراصل یہی ہمارا کلچرتھا جو گزشتہ چند برسوں سے بتدریج روبہ زوال دکھائی دے رہا تھا۔ سب کی دعا ہے کہ اللہ پاک انہیں ہمت، حوصلہ، صحت دے اور ماں کا گھنا سایہ بچوں کے سروں پر سلامت رکھے کہ بچے بوڑھے بھی ہو جائیں تومائوں کیلئے بچے ہی رہتے ہیں ۔ میاں نواز کو میں نے ’’مقامی ٹرمپ‘‘ ان کی ہوڑمت کے باعث لکھا ہے جن کی تازہ ترین ’’سرگرمیوں‘‘ نے پہلے تو مجھے حیران کر دیا لیکن پھر یاد آیا کہ استاد نے صحیح کہا تھا کہ ’’چھٹتی نہیں ہے منہ سے یہ کافر لگی ہوئی ‘‘ واقعی حکمرانی کا نشہ باقی تمام نشوں کا باپ ہے۔ ایک اخباری خبر کے مطابق’’نااہل وزیر اعظم نے صوبائی سیکرٹریز کے اہم اجلاسوں کی صدارت شروع کر دی ہے وہ صوبائی محکموں کی کارکردگی کا جائزہ لیتےاور احکامات جاری فرماتےہیں جبکہ شہباز شریف ان ’’تجاوزات‘‘ پر مکمل خاموشی اختیار کئے ہوئےہیں۔ کمال ہے بطور وزیراعظم نہ اسمبلی کو درشن دیتےتھے، نہ کابینہ اجلاسوں کے تکلف میں پڑتےتھے نہ بیشتر وزراء کو شرف ملاقات سے نوازتے تھے لیکن اب ؟ یہاں مجھے اورنگزیب عالمگیر یاد آ رہے ہیں۔ معزول شہنشاہ شاہ جہان نے وقت گزاری کیلئےفرزند دلبند حاضر سروس شہنشاہ عالمگیرسے فرمائش کی کہنظربندی کے دوران انہیں بچوں کو پڑھانے کی سہولت ، اجازت دی جائےتاکہ وہ ’’تعمیری سرگرمیوں‘‘ میں خود کو مصروف رکھ سکیں۔پرہیز گار لیکن سمجھ دار و برسر اقتدار اورنگزیب عالمگیر نے یہ کہتے ہوئے خواہش مسترد کر دی کہ ’’حکمرانی کا سودا سر سے نہیں نکلا، اب بچوں پر حکم چلا کر شوق حکمرانی کی تسکین چاہتےہیں‘‘ شہباز شریف شاباش کے مستحق ہیں کہ چپ اور دم دونوں سادھ رکھے ہیں۔آخر پر امریکن انٹیلی جنس ایجنسی کے سابق سربراہ جیمز کلپرکا یہ تبصرہ کہ ’’ڈونلڈ ٹرمپ ذہنی مریض اور امریکن صدر کے عہدہ کیلئے ’’نااہل‘‘ ہیں‘‘ تو کوئی کیا کرے ؟ دنیا کی لگامیں بہت سے ’’نااہل‘‘ لوگوں کے ہاتھوں میں رہی ہیں اب بھی ہیں اور آئندہ بھی رہیں گی لیکن دنیا چلتی رہی چل رہی ہے اور تب تک چلتی رہےگی جب تک اسے بنانے والا اسے چلانے میں دلچسپی لےگا۔کالم کا آغاز ہی اس کا انجام سمجھیں کہ ٹرمپ سے شروع ہو کر ٹرمپ پر ختم لیکن یہ طے ہے کہ ٹرمپ صرف ٹرمپ ہے ، امریکہ نہیں سو یہ حقیقت سامنے رکھ کر ہی سٹریٹیجی پر کام کیا جائے اور اپنے گریبانوں میں بھی جھانک لینا چاہئے کہ اول تو پاکستان جیسے ملک کا موجودہ حالات میں بھی سرے سے کوئی وزیر خارجہ ہی نہ تھا اور اب ہے بھی توکون ؟ خواجہ آصف ؟کہاں امور خارجہ او ر کہاں خواجہ آصف ؟ میں یہ سوچتے ہی سر پکڑ کے بیٹھ جاتا ہوں کہ خواجہ کس قسم کی خارجہ کرے گا۔میاں صاحب تو پھر ’’پرچیاں‘‘ پڑھ لیتے تھے، خواجہ سے تو یہ بھی نہیں ہونا۔ ذوالفقار علی بھٹو سے خواجہ آصف تک …..کیسی بلندی کیسی پستی !

Cover Story: The Punjab’s Robber Barons

Punjab Chief Minister Shahbaz Sharif has awarded mega development projects worth dozens of billions of rupees in the province to Chinese companies without open international bidding. He has also provided interest-free loans from the provincial exchequer to certain private companies in flagrant violation of official rules and regulations. And still Shahbaz Sharif portrays himself as a paragon of virtue and honesty.

A majority of the Punjab’s high-profile development works, including energy plants and transport infrastructure, are shrouded in secrecy on the pretext that they are part of the China-Pakistan Economic Corridor (CPEC) and as such, any details pertaining to them cannot be made public without permission from the Chinese government.

In principle, all government contracts fall under the aegis of the Public Procurement Regulatory Authority (PPRA) and are subject to its rules, but the Shahbaz Sharif administration has found ways to bypass these rules. One of the means it employs to do so is to award contracts without international bidding to Chinese firms, which in turn hire local sub-contractors – who are mostly the Sharif family’s front-men – to execute these projects. Thus, Shahbaz Sharif awards lucrative contracts to his hand-picked men through a sub-contract system.

Another method of avoiding genuine competition among contractors and bidders is to frame terms and conditions in the tender that is floated which suit only a favourite company. This ‘rigged bidding’ is a practice that has been commonplace in Turkey for some time, and is now being replicated in Punjab.

Prime Minister Nawaz Sharif and Chief Minister Shahbaz Sharif maintain a close relationship with Turkish President Recep Tayyip Erdogan. The Turkish private conglomerate company, Albayrak, is a favourite company for both, the Sharifs and Erdogan. President Erdogan started favoring Albayrak with lucrative contracts when he was the mayor of Istanbul. According to Turkish media, when the Justice and Development Party aka AKP rose to power, Albayrak became the Turkish government’s favourite group for privatisation. The Turkish press is rife with stories of massive corruption in the privatisation of public assets during the Erdogan regime.

punjab-youth-internship-programAgainst the backdrop of the brotherly ties between the two heads of state, Turkish companies have launched a number of projects in the Punjab, including solid waste management, power generation, transport, construction of low-cost houses in the province, and the setting up of theme parks in Lahore. Three major projects currently being executed by Turkish firms include the Lahore Waste Management Company, the Lahore Metro Bus service and a radio taxi service. The Lahore Waste Management Company has outsourced solid waste management in different zones of the city to two Turkish waste management companies – Albayrak and Ozpak. Albayrak has also been given the contract to run metro buses and a taxi service in Lahore.

The 1180-MW Bhikki power project being built near Sheikhupura since March 2015 is one example of Shahbaz Sharif’s arbitrary style of governance. In October 2015 Prime Minister Nawaz Sharif laid the foundation stone of the project to be built by a Chinese contractor. According to an official statement, the plant will be jointly set up by Harben Electric International of China and American General Electric at a cost of 55 billion rupees.

Ahad Cheema, a grade-19 DMG officer and known henchman of the Sharif family, was made the chief executive officer of the Quaid-e-Azam Thermal Power Company which is to execute the power project. This, although Cheema was serving as director general of the Lahore Development Authority (LDA) at that time. He was hired as CEO at the whopping salary of two million rupees, in addition to receiving a salary and perks as a DMG officer alongside. It was only when a petition was moved in the Lahore High Court challenging Cheema’s dual post after several months of his appointment, that he was finally relieved of his office at the LDA.

When the work started on the power plant in 2015, Ahad Cheema asked the provincial finance department to provide a 15 billion rupees interest-free loan – bridge financing in technical parlance – to Harben for the procurement of machinery from General Electric, USA for the power plant. The provincial finance department raised queries on the issuance of the hefty bridge financing as it was not part of the agreement, but Cheema refused to respond to the objections raised. CM Shahbaz Sharif intervened in the matter, convened a meeting and reportedly insulted the top officers of the finance department for not obliging Cheema. Resultantly, the provincial finance secretary Yousuf Khan immediately sought a transfer from the Punjab.

caracas-slider1

The 170-billion rupee Orange Line Metro Rail project in Lahore has also been awarded to a Chinese company without open international bidding. The provincial government told the Lahore High Court it could not provide the terms and conditions of the project without the consent of the Chinese government as it is part of the CPEC. It also said that one of the conditions of the CPEC financing is that all the projects related to it would be awarded to Chinese companies without open international bidding – up till now the norm in such projects.

Insiders maintain that China’s EXIM Bank will provide the proposed loan for the project on interest rate of six per cent. Ironically, the Asian Development Bank (ADB) was willing to finance an underground mass rail transit project in Lahore at an interest rate of 0.5 per cent. That did not transpire. Meanwhile, the Chinese Bank approved a loan of 30 billion rupees as late as May, 10 months after work on this project started.

To make up for the shortfall, until the EXIM loan kicked in, the Punjab government started diverting funds from the health and education sectors to the Orange Line Metro Rail project for procuring land and civil works. The provincial government also obtained a loan of 15 billion rupees from the Bank of Punjab at an interest rate of eight per cent for this project. So the Punjab government has not merely spent at least 30 billion rupees from the provincial kitty to date on the metro project, it has also undertaken the project in contravention of the obligatory Public Procurement Regulatory Authority (PPRA) rules and regulations, which stipulate that all contracts like the metro should be awarded to contractors such as the Habib Construction Company only after open bidding.

It has, in fact, become routine in Punjab for the provincial government to use official funds in the name of bridge financing under the cover of Chinese and Turkish investment.

That Shahbaz Sharif is a man in a hurry can be gauged from how he has undertaken various projects. In 2009, CM Shahbaz Sharif decided to set up Danish schools in certain districts of the province and spent five billion rupees on building these schools without even preparing a mandatory PC-1 for the project. The funds were spent from the non-development funds earmarked for the construction of schools in violation of the rules.

Similarly, when Imran Khan’s popular showing in Lahore in October 2011 created ripples in Punjab politics, Shahbaz Sharif rushed to launch a metro bus project in Lahore. The work on the 30-billion rupee project was started in haste without even doing the requisite soil testing for the pillars of the elevated track. The provincial Planning and Development Department raised 11 objections to the project, but it was executed without addressing them.

The provincial government spent an additional 20 billion rupees in acquiring land for the metro bus project and building the roads that had been dug up for the metro track. This cost was not, however, shown as part of the project, clearly to escape criticism. Similarly,the real, exorbitant cost of building the metro track between Rawalpindi and Islamabad – which the Punjab government claims cost 45 billion rupees – has also been kept under wraps.

shahbaz

And currently history is being repeated in the laying of Lahore’s metro rail. If the purchase of land for the project, repair of the excavated roads and streets, sewers and water lines etc on the track is taken into account, the real cost of the project is no less than 200 billion rupees. That means the Lahore Orange Line project will cost around 6.0 billion rupees per kilometre – and that’s by official accounts – making it the most expensive transport project in the country’s history.

Then there’s the case of Lahore’s Multan Road, a major city artery. It was remodelled and widened in four years starting from 2010, at a cost of 11 billion rupees. This year, the LDA excavated the newly-built road to instal the pillars for the metro train.

The bottom line: official funds worth tens of billions of rupees have been squandered in Lahore at the whims of Shahbaz Sharif, while the countryside is thirsting for even a small amount of funds for the maintenance of village and town streets, clean water and schools. Hundreds of basic health units in the province are without doctors, schools without classrooms and people sans even basic amenities such as drinking water.

Shahbaz Sharif’s obsession with metro bus and rail projects is understandable given the highly inflated cost of these projects at home. Compare these to similar projects in other parts of the world and the picture becomes clear. In Beijing, China, for example, a metro bus project was built in 2013 at a cost of 4.8 million dollars per kilometre and in Paris a similar project cost 7 million dollars. Lahore’s project was built the same year at more than double the cost, i.e. 11 million dollars per kilometre. In 2014, Shahbaz Sharif’s government built the Rawalpindi metro bus project at a cost of 20 million dollars per kilometre. Now Lahore’s metro train project is underway at a cost of more than 55.5 million dollars per kilometre.

Senior civil engineers in Punjab say that the rulers receive at least 30 per cent in kickbacks and commissions if an official civil works project is completed on ground according to specifications. In case of defective construction, the kickbacks can go up to 50 per cent. No surprises then that the rulers are more interested in building roads and buildings than investing in the education and health sectors. And under cover of China and Turkey, where companies are notorious for massive corruption, it has become much easier to hide kickbacks and stash the funds in foreign banks and real estate.

The metro bus services in Lahore and Rawalpindi are running on a government subsidy, but they are nonetheless touted as a big achievement.The Punjab government provides a subsidy of more than two billion rupees per year for the Lahore Metro bus and 1.2 billion rupees per year for the Rawalpindi Metro Bus. Additionally, the federal government pitches in with a 800-million-rupee subsidy for the Rawalpindi-Islamabad Metro Bus.

In Lahore, a passenger pays Rs. 20 for one-way travel. The government, meanwhile, has to pay a subsidy of Rs.40 per passenger to the private Turkish company, Albayrak Holdings, which operates the bus service. Under the agreement, a subsidiary company of Albayrak provides the buses for the service, and oversees their maintenance and operations. According to the agreement, the government pays 362 rupees per km for the Turkish company buses for mutually agreed upon mileage covered daily, and whether the buses ply this distance or not, it receives the price fixed in the agreement. The company has provided 52 buses for the metro bus service and is responsible for their operational expenditures and their fuel.

The Punjab government meanwhile, pays the expenditure of all supporting staff at stations, electricity bills and other costs. Due to this favourable arrangement, the Turkish company has reportedly recovered its investment within a year

Real estate in the Punjab is proving another goldmine for some of the PML-N’s top guns who are raking in millions by misusing their official authority. PML-N supremos are on a buying spree of lands in the vicinity of Lahore city with the help of police officers who coerce poor farmers to sell their agricultural lands at throwaway prices to political heavyweights. Once the lands are bought, the provincial government starts building roads and laying other civic infrastructure in those areas, pushing up the value of the land manifold.

A case in point: tens of billions of rupees were spent from the public kitty to build expressways, lay trunk sewerage and other amenities on Raiwind Road where the Sharif family bought hundreds of acres in the 1990s at a rate of 600,000 to 800,000 rupees per acre. Now the same land is priced at 70-80 million rupees per acre, thanks to the massive development on or around it by the government. And chances are this will multiply manifold once the under-construction ‘Alaska Barrier,’ a four-foot thick wall duly fortified by iron mesh, is constructed around the 350-acre perimeter of the Sharifs’ private Jatti Umra estate on Raiwind Road. So far 40 crore rupees have already been spent on the wall, and it is estimated it will cost another 30 crore rupees to complete – if it does not exceed the planned budget. As for funding for this “high-sensitivity, high-security” project, the money has been taken from the non-development funds of the Punjab police department.

metro-bus

OtherPML-N leaders have, meanwhile made fortunes by occupying and forcibly buying lands near the Lahore airport terminal. These days, Burki Road and the River Ravi vicinity close to Sharqpur are the targets of the PML-N land mafia.

How reckless Shahbaz Sharif is in spending public funds can be assessed by the fact that he has in just this tenure as Punjab CM, spent more than 25 billion rupees from the provincial exchequer on publicity campaigns in the print and electronic media proclaiming his achievements. Civil servants in the Punjab Information Department told Newsline that the provincial government’s advertisement budget has gone up astronomically since Shahbaz Sharif became chief minister in 2008.

“During 10 months of the ongoing fiscal year, political advertisements worth about five billion rupees have been dished out to the media, all aimed at building a good image of the Shahbaz Sharif government. Also, equally important, the government uses the lure of attractive advertisement revenues to keep the mainstream media in line,” says a civil servant in the Punjab Secretariat.

No wonder, Urdu-language newspapers particularly, publish three-column headlines of Shahbaz Sharif’s propaganda statements on the upper half of the front pages of the newspapers every day. The CM’s statements are published verbatim with the headlines, sub-headlines and words that are issued from the provincial Directorate General of Public Relations (DGPR). Publicity drives using banners, flyers and posters on the walls of buildings on the streets of Lahore, announcing even the smallest achievement (in most cases still just on paper) of the provincial government, are part of the junior Sharif’s penchant for self-promotion.

An ensemble of pliable junior civil servants posted to senior positions, including Tauqeer Shah (principal secretary to Shahbaz Sharif till 2013 and posted out after the Model Town massacre in 2014), Ahad Cheema, Usman Anwar, Fawad Hasan Fawad (former secretary health, Punjab and now principal secretary to the prime minister) are said to be the Sharif family’s regular abettors and enablers in their financial shenanigans.

Shahbaz Sharif is a showman who rules the Punjab as much through media stunts and propaganda campaigns as he does through his administrative abilities. But even with all the spanking new roads, the metros, the publicity campaigns and the tall promises, it is hard to ignore the fact that not one day passes when one child or more does not die for want of oxygen and ventilators in one or other of Punjab’s government-run hospitals.