Latest Posts

Vision 21

A Company Registered under Section 42 of Companies Ordinance 1984. Corporate Universal Identification No. 0073421

Vision 21 is Pakistan based non-profit, non- partisan Socio-Political organisation. We work through research and advocacy. Our Focus is on Poverty and Misery Alleviation, Rights Awareness, Human Dignity, Women empowerment and Justice as a right and obligation.

We act and work side by side with the deprived and have-nots.

We invite you to join us in this mission. We welcome your help. We welcome your comments and suggestions. If you are interested in writing on Awaam, please contact us at: awaam@thevision21.org

Awaam      by   Vision21

↑ Grab this Headline Animator

Financing burden of CPEC

ISHRAT HUSAIN — UPDATED about 5 hours ago
 WHATSAPP 25 COMMENTS EMAIL PRINT

The writer is former governor of the State Bank of Pakistan.
The ongoing debate on the impact of CPEC projects on future external payments’ obligations is welcome, but should be informed by analysis based on facts rather than opinion.

The total committed amount under CPEC of $50 billion is divided into two broad categories: $35bn is allocated for energy projects while $15bn is for infrastructure, Gwadar development, industrial zones and mass transit schemes. The entire portfolio is to be completed by 2030. Therefore, the implementation schedule would determine the payments stream. Energy projects are planned for completion by 2020, but given the usual bureaucratic delays, it won’t be before 2023 that all projects are fully operational. Under the early harvest programme, 10,000 MW would be added to the national grid by 2018. Therefore, the disbursement schedule of energy projects is eight years (2015-2023). Infrastructure projects such as roads, highways, and port and airport development, amounting to $10bn, can reasonably be expected to be concluded by 2025, while the remaining projects worth $ 5bn would spill over into the 2025-30 period.

Examine: Hidden costs of CPEC

Given the above picture, it is possible to prepare a broad estimate of the additional burden on Pakistan’s external payment capacity in the coming years. As the details of each project become available, the aggregate picture can be refined further. The margin of error would not cause significant deviation.

It is possible to prepare an estimate of the additional burden on our external payments’ capacity.
The entire energy portfolio will be executed in the IPP mode —as applied to all private power producers in the country. Foreign investors’ financing comes under foreign direct investment; they are guaranteed a 17pc rate of return in dollar terms on their equity (only the equity portion, and not the entire project cost). The loans would be taken by Chinese companies, mainly from the China Development Bank and China Exim Bank, against their own balance sheets. They would service the debt from their own earnings without any obligation on the part of the Pakistani government.

Import of equipment and services from China for the projects would be shown under the current account, while the corresponding financing item would be FDI brought in by the Chinese under the capital and finance account. Therefore, where the balance of payments is concerned, there will not be any future liabilities for Pakistan.

To the extent that local material and services are used, a portion of free foreign exchange from the FDI inflows would become available. (Project sponsors would get the equivalent in rupees). For example, a highly conservative estimate is that only one-fourth of the total project cost would be spent locally and the country would benefit from an inflow of $9bn over an eight-year period, augmenting the aggregate FDI by more than $1bn annually. This amount can be used to either finance the current account deficit or reduce external borrowing requirements. Inflows for infrastructure projects for local spending would be another $4bn over 15 years.

Taking a highly generous capital structure of 60:40 debt-to-equity ratio for energy projects, the total equity investment would be $14bn. Further, assuming the extreme case that the entire equity would be financed by Chinese companies (although this is not true in the case of Hubco and Engro projects, where equity and loans are being shared by both Pakistani and Chinese partner companies) the 17pc guaranteed return on these projects would entail annual payments of $2.4bn from the current account.

CPEC’s second component, ie infrastructure, is to be financed through government-to-government loans amounting to $15bn. As announced, these loans would be concessional with 2pc interest to be repaid over a 20- to 25-year period. This amount’s debt servicing would be the Pakistan government’s

How oppressed are Muslims in India?

Muslims offer Eid prayers at the Jama Masjid, Delhi | Reuters
Muslims offer Eid prayers at the Jama Masjid, Delhi | Reuters

Muslims in India form the largest religious minority in the country. According to the 2011 Census, they comprise 14.4 per cent of India’s total population — roughly 174 million people. To use the word ‘minority’ for them, therefore, is misleading: they are the third-largest Muslim population anywhere in the world, after Indonesia and Pakistan. Minority status, however, refers to a group’s relative power vis-à-vis other groups rather than to its numbers alone (note the case of women everywhere or blacks in South Africa during the apartheid). In that sense, then, Indian Muslims certainly are a minority, particularly when one considers the growing influence of Hindu right-wing forces since the 1980s.

But just how oppressed are Muslims in India? For Pakistanis – and particularly for those whose families migrated from India – this question is a source of endless curiosity, not the least because the answer either justifies or undermines the very notion of the Pakistani nation-state. If Indian Muslims, in fact, are oppressed then – regardless of Pakistan’s myriad internal troubles – the people of Pakistan can still breathe a sigh of relief that they live in a land of their own. On the flip side, if Indian Muslims are not oppressed, then what exactly was the Partition trauma about? As academic literature produced on Indian Muslims in recent years tells us, there are no simple answers to these questions.

This sense of marginalisation has been steadily increasing since the rise to prominence of Hindu right-wing ideologies

Scholarly interest in Indian Muslims is not recent and can be traced to the colonial period. Orientalist scholars during the British era presented the subcontinent as a patchwork of different religious groups — an understanding that informed the policies of the colonial state and made its task of ruling its Indian subjects manageable. This understanding was echoed by the indigenous Hindu and Muslim elites who used religious identity as a means of shoring up their own power (a practice that continues even today on both sides of the religious divide and, indeed, on both sides of the India-Pakistan border). On the whole, this approach hindered the fluidity of beliefs and religious practices across communal boundaries which has always existed in the subcontinent, and which persists despite hindrances even today.

Saba Naqvi has documented the subcontinent’s syncretic traditions in her book In Good Faith: A Journey in Search of an Unknown India. She highlights many instances of boundary crossing that regularly take place across religious divides despite the best efforts of right-wing forces. For the most part, however, scholarship on religious communities in India has continued to repeat the notion that the most significant divide in that country – and the one that creates conflict most frequently – is the one between Hindus and Muslims. While this simplifies a much more complex reality, it subtly reinforces the logic of the two-nation theory.

Most of the scholarship on Indian Muslims produced in the last 50 years mimics the Orientalist approach in two important ways: it views one of the largest Muslim populations in the world as a homogenous and unified group; and, for the most part, it views that population through the lens of the north Indian urban elite. Books such as Hasan Suroor’s India’s Muslim Spring: Why is Nobody Talking about It? deny the vast diversity that exists among Indian Muslims in terms of region, class, sect, gender, and caste.

Hindu extremists demolish Babri mosque in Ayodhya, triggering widespread Hindu-Muslim violence in 1992 | AFP
Hindu extremists demolish Babri mosque in Ayodhya, triggering widespread Hindu-Muslim violence in 1992 | AFP

His work, instead, focuses largely on middle-class, urban, north Indian Muslims as he argues that there has been an “awakening” among India’s Muslims which is driving them away from their supposed historical insularity and conservatism. In order to underscore his argument, he implies that there are two categories dividing the Muslim population of India: “good Muslims”, who are liberal and moderate in their political and religious leanings, and “bad Muslims”, who are conservative and fundamentalist in their outlook. Such a division is not just without any scholarly basis, it is also troubling as it drastically reduces the myriad political and religious views prevalent among Muslims living in different parts of India.

Similarly, Salman Khurshid, a prominent Congress politician since the 1980s, has recently made his own attempt to diagnose the problems of Indian Muslims. His book At Home in India: A Restatement of Indian Muslims is more a memoir than an academic study, but it suffers from a similar malaise as some other books, in that it attempts to represent all Indian Muslims through the experience of a few members of the urban elite. Much of the book is dedicated to revisiting debates over Muslim personal law – which preoccupied many writers throughout the 1980s and the 1990s – along with recounting of the history of Aligarh Muslim University, the quintessential bastion of the north Indian Muslim elite.

Though both Suroor and Khurshid raise the issue of a growing sense of marginalisation among Indian Muslims, neither is able to deal with this question in a meaningful way because their work is not sufficiently grounded in field research. Both are also, sadly, apologetic in tone, taking great pains to prove that Muslims are loyal subjects of the Indian state — a strategy used by minority elites to secure their position within the power structure since the colonial period.

Fortunately, such simplistic approaches to the study of Indian Muslims are waning. A new generation of scholars is emerging from different disciplines whose work is grounded in empirical research. Two recent books, for instance, shed light on the complexity and diversity among Muslims in India through the lens of political history.

Also read: Strangers in the house: The adverse effects of solidifying ethnic boundaries

The first, Muslim Political Discourse in Postcolonial India: Monuments, Memory, Contestationby Hilal Ahmed takes an innovative approach to understanding the evolution of Muslim politics in north India. The author focusses, in particular, on the discourse related to Indo-Islamic historic buildings such as the Jama Masjid in Delhi and the Babri Masjid in Ayodhya as a means for understanding the construction of Muslims as a political group by a variety of actors. In the process of unpacking how Muslim unity is asserted through these key sites, Ahmed cleverly demonstrates the constructed, contested and evolving nature of Indian Muslim identity itself.

His approach is important in that it does not take the category of Muslims as a given; rather, it traces the construction of this political category as a process that is both contested and continuously evolving. The book also moves away from simplistic binaries such as communal/secular that have plagued many other discussions of Indian Muslims.

One of the most notable recent contributions to the understanding of Muslim histories in India is Mohammad Sajjad’s Muslim Politics in Bihar: Changing Contours. It moves away from the former centres of Mughal power which have generally been the focus of studies on Indian Muslims. Sajjad’s carefully researched work outlines the rich history of political mobilisation among Muslims in Bihar, the third-most populous state in India and one with a significant Muslim population, from the colonial period to the present. The author highlights the resistance amongst Bihari Muslims to the two-nation theory. This has largely been overlooked in studies of the pre-independence period which generally focus on Punjab, Uttar Pradesh and Bengal.

Sajjad, however, points out that Muslim political groups in Bihar were both anti-colonial and anti-separatist in orientation and regularly allied with Hindu groups in their political struggles. In the postcolonial period, he describes the movement for the promotion of Urdu – which began in the 1950s and continued through the 1980s – as a mass-based campaign, not carried out in religious and communal terms, but instead, on the basis of the rights guaranteed to linguistic minorities in the Indian constitution.

Sajjad points to another subject hitherto untouched by other scholars: the question of caste among Muslims. Though Muslim elites in India would have us believe that there is no caste system among Indian Muslims, the 1990s witnessed the emergence of two significant movements: the All-India Backward Muslim Morcha and the All India Pasmanda Muslim Mahaz. These two movements campaigned for the rights of lower-caste Muslims in Bihar.

Sajjad’s contribution is important in two ways. First, it focusses on a part of India that is under-researched when it comes to the study of Indian Muslims. Second, it not only highlights the issue of caste amongst Muslims but also focusses on mobilisation among – and also led by – non-elite groups. For this reason, his is a welcome addition to the existing literature on Indian Muslims.

Prayers being offered on the last day of the holy month of Ramzan at Jama Masjid, Dehli | Reuters
Prayers being offered on the last day of the holy month of Ramzan at Jama Masjid, Dehli | Reuters

Though many Muslims in India occupy various important positions in the state and the society – which mostly depends on where they come from and what are their class, caste, and gender – a growing sense of marginalisation among Muslims across India is hard to deny. This sense of marginalisation has been steadily increasing since the rise to prominence of Hindu right-wing ideologies and organisations during the 1980s, when the Babri Masjid/Ram Janmabhoomi issue was used to sharpen religious divides across India. While the occurrence of communal violence has declined since the 2002 Gujarat pogrom, the alienation felt by religious minorities – including Muslims and Christians – has continued to increase, particularly after the victory of Narendra Modi as prime minister in the 2014 election.

The marginalisation of Muslims in India is, indeed, well documented. In the mid-2000s, the Indian government commissioned two studies — the Sachar Committee Report of 2006 and the Misra Commission Report of 2007. These highlighted a higher prevalence of discrimination towards Muslims and socio-economic deprivation among them as compared to other religious groups. Little concrete action, however, has been taken to address these issues at the policy level. If anything, the situation has only worsened.

The ruling Bharatiya Janata Party (BJP) and its partner organisations in the Hindu right have started a concerted campaign against all religious minorities, including Muslims. The main features of this campaign include protests against the so-called ‘love jihad’ – Muslim men allegedly converting Hindu women to Islam by trapping them in love affairs – and ‘ghar wapsi’(homecoming) initiatives which convert Muslims and Christians ‘back’ to Hinduism. Moves towards Hinduisation have also been taking place across India.

While Hindu nationalist groups are waging a concerted campaign against all religious minorities in their efforts to Hinduise India, Islamist forces are doing the same and even worse to religious minorities on this side of the border.

For example, the government in the state of Maharashtra – where the Shiv Sena has successfully drummed up anti-Muslim sentiments for years – recently imposed a ban on beef trading. This will disproportionately harm poor Muslims working in meat and leather industries. All of these are signs of growing intolerance and a gradual yet steady process of de-secularisation, which do not bode well for religious minorities in India.

As a result of these shifts in the Indian polity, academics have also begun to investigate the issue of marginalisation more seriously. One issue that has received attention in recent years is that of the spatial segregation of Muslims, particularly in urban areas. Two recent books discuss this issue in depth. The first one, Muslims in Indian Cities: Trajectories of Marginalisation, is edited by two French scholars, Christophe Jaffrelot and Laurent Gayer. It is a collection of studies on Muslim mohallas – exclusively Muslim neighbourhoods or ghettos – in cities across India. Each chapter is dedicated to a different city and includes portraits of major cities such as Mumbai, Ahmedabad, Delhi and Lucknow.

The book also includes research on cities which are rarely the focus of studies on Indian Muslims. These include Cuttack in Orissa, Kozhikode in Kerala and Bangalore in Karnataka.

By providing detailed studies of such diverse geographical sites, Muslims in Indian Citiesdraws attention to the vast diversity of experiences that exists among Indian Muslims. It provides a nuanced understanding of the issue of marginalisation, highlighting the fact that the reasons for spatial segregation of Muslims vary in different cities depending on the context. In cities such as Ahmedabad and Mumbai – where large-scale communal violence has taken place in the past – the level of spatial segregation and insecurity among Muslims is predictably high. In cities in southern and eastern parts of India, where Hindu nationalist groups have historically had less of a presence, Muslims are generally in a relatively secure position vis-à-vis other religious groups. This may be changing, however, as the Hindu right wing rapidly makes inroads into those parts of India as well.

An Indian Muslim man walks into a mosque in New Delhi. A portrait of Mahatma Gandhi hangs on the wall of the  Delhi Police Headquarters in the background | AP
An Indian Muslim man walks into a mosque in New Delhi. A portrait of Mahatma Gandhi hangs on the wall of the Delhi Police Headquarters in the background | AP

My own book Questioning ‘the Muslim Woman’: Identity and Insecurity in an Urban Indian Locality focusses on the issue of marginalisation and insecurity among women living in Delhi. The book deliberately focusses on the experiences of Muslim women, who had previously only been viewed in a simplistic manner through the lens of the veil and personal law. Based on research conducted over the course of a year in Zakir Nagar, a neighbourhood situated in Delhi’s ‘Muslim belt’, my book highlights multiple and shifting factors that determine one’s experience of insecurity even within the same locality. If a range of experiences can exist within such a small geographical area as Zakir Nagar, one can only imagine the diversity of experiences that may exist within a huge country.

At the same time, Questioning ‘the Muslim Woman’ demonstrates a growing sense of marginalisation among all Muslims which is tied to the historical memory of various incidents of violence, beginning with the Partition. I conducted my research almost a decade ago and Muslim localities – including Zakir Nagar – have continuously grown since then. This points to the fact that marginalisation amongst Muslims is not decreasing, and may actually be growing as the forces of Hindutva become stronger across India.

Also read: Who feels safe in Pakistan

The state, too, has contributed to this sense of marginalisation. Since the Mumbai terror attacks in 2008, Muslim men have increasingly become the targets of the state’s security forces. They face human rights abuses during siege and search operations carried out under the pretext of anti-terrorism operations, both within and outside the confines of the law. Two young men were killed in 2008 in the infamous Batla House encounter, which occurred in the same area where I had conducted my research; many others have been arrested without charge from that same area and countless more from across India.

Manisha Sethi’s book, Kafkaland: Prejudice, Law and Counterterrorism in India, carefully documents the dark underbelly of counterterrorism in which fake encounters and illegal detentions are regularly used as a means of asserting state power against unwanted citizens. Such state excesses have only increased the sense of alienation among Muslims — particularly those living in urban areas. Consequently, along with Dalits and Adivasis, Muslims make up a disproportionately high percentage of the prison population, mirroring the situation of African Americans in the United States.

One positive outcome of these negative developments is that there seemingly is a steady decline in generalist studies of Indian Muslims. Most of the recent literature, instead, suggests a growing maturity among scholars marked by an awareness of the diversity that exists within this vast population. There is also a shift towards empirically grounded studies. There are, however, still several areas that require further exploration, which is good news for budding scholars. These include the issue of caste among Muslims (a subject that also requires attention in Pakistan), which has remained a taboo for too long.

There is also a gaping hole in academic literature when it comes to studies of Muslims living in the southern and eastern parts of India – particularly in Assam – which houses the highest percentage of Muslims in the population of any state in India.

Muslims offer Eid prayers at the Jama Masjid, Delhi | Reuters
Muslims offer Eid prayers at the Jama Masjid, Delhi | Reuters

In order to correct the elite bias that has existed for long within academic literature on Indian Muslims and to properly understand the issue of socio-economic marginalisation among the community, more research needs to be conducted on poor and middle-class Muslims who comprise the vast majority of the Muslim population in India. Finally, more attention must be paid to the gendered experiences of being Muslim, moving beyond the simplistic notion of Muslim women ‘behind the veil’ and taking into account the growing insecurity among Muslim men.

Finally, to return to the fraught question with which I began this essay: just how oppressed are Indian Muslims? Though the formulation of this question is problematic for multiple reasons – not least of which is the assumption of uniformity amongst this group – I will hazard an answer: while Indian Muslims are undoubtedly facing increasing insecurity and marginalisation – particularly as Hindu right-wing forces become more powerful – they are still in a more secure position than religious minorities in Pakistan.

While Hindu nationalist groups are waging a concerted campaign against all religious minorities in their efforts to Hinduise India, Islamist forces are doing the same and even worse to religious minorities on this side of the border. The marginalisation of Muslims in India, therefore, must be viewed within the wider context of growing religious majoritarianism in South Asia as a whole — a process that began picking up steam in both India and Pakistan during the 1980s.

Also read: Heart of Darkness: Shia resistance and revival in Pakistan

Additionally, India is still officially a secular state where the rights of religious minorities are enshrined in the constitution, despite Modi government’s best efforts to the contrary. Unfortunately, the same cannot be said of Pakistan where the Objectives Resolution solidified a second-class constitutional status for non-Muslim Pakistanis and where the definition of ‘Muslim’ itself is continuously shrinking. Rightly or wrongly, for many secular-minded Indians who are concerned about the deteriorating situation of religious minorities in their country, Pakistan stands as a warning of what might be in store for them in the not-too-distant future if they fail to quickly correct their path.


جنگل منگل

 

تحریر:ساحرہ ظفر

“میرا  اور تمھارا معاہدہ صرف اس جنگل تک آنے کا ہوا تھا  یہ دیکھو لمبے لمبے دانت ناکام  جانورو میں تم سب کو کھا جاؤں گا ایک ایک کر کے

مگر میں نرم دل ہوں  میں تم سب کو جہموری حق دوں گا کہ تم لوگ اپنا فیصلہ آپ کر سکو تاکہ مجھے اپنا فیصلہ  کرنے میں آسانی ہو۔”

Read More

قاتل بھی میں مقتول بھی میں

تحریر:ساحرہ ظفر

میرے مولا کرم ہو کرم ۔ میرے مولا کرم ہو کرم

تم سے فریاد کرتے ہیں ہم

میرے مولا کرم ہو کرم

یہ زمیں اور یہ آسماں

تیرے قبضے میں ہے دو جہاں

تو ہی سنتاہے سب کی صدا

تو ہی رکھتا ہے سب کا بھرم

اللہ تو پاک ہے رحمان ہے رحیم ہے ساری کائنات کا خالق ہے محبتوں کے علمبردار  کی روح  خون  و خون ہو گئی۔ماں کا لعل  بیوی کا سہاگ  بیٹے کا باپ  بیوی کا شوہر  اور بوڑھے باپ کا واحد سہارا  اُس کا جوان بیٹا  سفاک دشمن نے ہمیشہ کے لیے صفحہ ہستی سے مٹادیا ۔

اگر تھوڑی سی نظر دوڑائی جائے کے دھماکہ کرنے والی جگہ کا مقام اور مرتبہ کیا تھا تو  ہر ذی شعور انسان  اس طرح  کے مکرو کام کرنے سے پہلے ہزار بار سوچے اصل میں قلندر ترکی زبان کا لفظ ہے اور اس کے معنی ایسا شخص جو دُنیا   کو چھوڑ کر صرف اللہ کا ہو جائے اس  مقام پر ایک روضہ ہے  اس روضے  میں  حضرت ابراہیم مجاب کی قبر مبارک ہے ۔

مجاب کے معنی جس کا جواب آتا ہو  تاریخ میں آتا ہے کہ  ابراہیم مجاب کو امام حسین علیہ السلام   کو سلام کا جواب دیتے تھے ابراہیم مجاب حسین علیه السلام کے روضے میں بہت آتے اور وہیں انکا ٹھکانہ تھا۔

صرف روضے کی خدمت میں  اپنی پوری زندگی زندگی گزار دی

اس سے پہلے

آج چوتھے دن سے پاکستان میں یکے دیگر انسانی جانوں کا ضیاع ہو رہا ہے پشاور ،کراچی  اور کوئٹہ کے بعد اب

پاکستان کے صوبہ سندھ میں سیہون کے مقام پر صوفی بزرگ لعل شہباز قلندر کے مزار کے احاطے میں ہونے والے خود کش دھماکے میں 88 افراد ہلاک اور 250 زخمی ہوئے ہیں۔ لعل شہباز قلندرؒ کے مزار کے احاطے میں اس وقت دھماکا ہوا جب زائرین کی جانب سے دھمال ڈالا جا رہا تھا۔.

مارنے والا بھی انسان اور مرنے  والا بھی  انسان جہاں صوفیوں کی محفل سجی تھی وہا ں کھیلا  دشمن نے اپنا  ایسا کھیل جس کو دیکھ کر انسانیت بھی شرما گئی ۔شیعہ برادری کو ایک دفعہ  ٹارگٹ کر کے  پھرشعیہ   سُنی جنگ کو ہوا دی جا رہی ہے چلو ایک سیکنڈ کے لیے مان لیتے ہیں  یہ سب ناگہانی آفات ہیں کسی وقت کسی جگہ  بھی ہو سکتی ہیں لیکن ان آفات سے بچنے کے لیے ہمارے پاس  اتنے گندے انتظامات ہیں   کہ ایک مریض کو ہسپتال تک پہنچتے پہنچتے  ایک ایک دن گزر جاتا ہے آگ بجھانے کیے لیے مناسب  انتطامات  نہ ہونے کی وجہ سے نقصان زیادہ ہوتا ہے  برائے نام ہسپتال اور ایمولینس کی قلت  کی وجوہات  ان سارے حالات کو   ایک طرف رکھ کر ہر  دفعہ سیکورٹی ہائی الرٹ کرنا  دہشت گردی سے بچنے کا حل نہیں بلکہ  بنیادی ضرورتوں  کو مہیا کرنے کی ضرورت ہے اگر یہی حالات رہے تو ریاست خون خوار جنگل کی شکل اختیار کر جائے گی۔  میں اس حوالے سے مزید بات اپنے اگلے بلاگ میں کروں گی۔

 

معروف ادیبہ بانو قدسیہ

معروف ادیبہ بانو قدسیہ 28 نومبر 1928 کو مشرقی پنجاب کے ضلع فیروز پور میں پیدا ہوئیں اور تقسیم ہند کے بعد لاہور آگئیں۔
ان کے والد بدرالزماں ایک گورنمنٹ فارم کے ڈائریکٹر تھے اور ان کا انتقال 31 سال کی عمر میں ہوگیا تھا۔ اس وقت ان کی والدہ ذاکرہ بیگم کی عمر صرف 27 برس تھی۔ بانو قدسیہ کی اپنی عمر اس وقت ساڑھے تین سال تھی۔ ان کا ایک ہی بھائی پرویز تھا جن کا انتقال ہوچکا ہے۔ بانو قدسیہ نے ابتدائی تعلیم اپنے آبائی قصبے ہی میں حاصل کی۔ انھیں بچپن سے ہی کہانیاں لکھنے کا شوق تھا اور پانچویں جماعت سے انھوں نے باقاعدہ لکھنا شروع کردیا۔
ہوا یوں تھا کہ وہ جب پانچویں جماعت میں تھیں تو ان کے اسکول میں ڈراما فیسٹیول کا انعقاد ہوا، جس میں ہر کلاس کو اپنا اپنا ڈراما پرفارم کرنا تھا۔ بہت تلاش کے باوجود بھی کلاس کو تیس منٹ کا کوئی اسکرپٹ دستیاب نہ ہوا۔ چنانچہ ہم جولیوں اور ٹیچرز نے اس مقصد کے لیے بانو قدسیہ کی طرف دیکھا، جن کی پڑھنے لکھنے کی عادت کلاس میں سب سے زیادہ تھی، ان سے درخواست کی کہ ’’تم ڈرامائی باتیں کرتی ہو لہٰذا یہ ڈراما تم ہی لکھ دو‘‘۔ بانو قدسیہ نے اس چیلنج کو قبول کیا اور بقول ان کے ’’جتنی بھی اُردو آتی تھی اس میں ڈراما لکھ دیا‘‘۔ یہ ان کی پہلی کاوش تھی، اس ڈرامے کو اسکول بھر میں فرسٹ پرائز کا حقدار ٹھہرایا گیا۔ اس حوصلہ افزائی کے بعد وہ دسویں جماعت تک افسانے اور ڈرامے ہی لکھتی رہیں۔ طویل عرصے تک وہ اپنی کہانیوں کی اشاعت پر توجہ نہ دے پائیں اور ایم اے اُردو کرنے کے دوران اشفاق احمد کی حوصلہ افزائی پر ان کا پہلا افسانہ ’’داماندگی شوق‘‘ 1950 میں اس وقت کے ایک سرکردہ ادبی جریدے ’’ادبِ لطیف‘‘ میں شایع ہوا۔
اپنے لکھنے کے حوالے سے بانو قدسیہ کہتی ہیں کہ ’’میں نے کسی سے اصلاح نہیں لی اور نہ کبھی کچھ پوچھا تاوقتیکہ میری شادی نہیں ہوگئی، پھر اشفاق احمد صاحب میرے بڑے معاون و مددگار بلکہ استاد ہوئے۔ انھوں نے مجھ سے کہا اگر تمہیں لکھنا ہے تو ایسا لکھو کہ کبھی مجھ سے دو قدم آگے رہو اور کبھی دو قدم پیچھے، Competition پورا ہو۔ اس کا مجھے بڑا فائدہ ہوا۔ اشفاق صاحب نے Encourage بھی کیا اور Discourage بھی۔ میری کئی باتوں پر خوش بھی ہوئے۔ آخر تک ان کا رویہ استاد کا ہی رہا، میں انھیں شوہر کے ساتھ ساتھ اپنا استاد بھی سمجھتی رہی ہوں، جو کچھ مجھے آپ آج دیکھ رہے ہیں وہ اشفاق احمد صاحب کی وجہ سے ہی ہوں‘‘۔
بانو قدسیہ نے ایف اے اسلامیہ کالج لاہور جب کہ بی اے کنیئرڈ کالج لاہور سے کیا، جس وقت انھوں نے بی اے کا امتحان دیا اس وقت 47 کے فسادات کی آگ پھیل چکی تھی، گورداس پور اور شاہ عالمی اس آگ کی لپیٹ میں آچکے تھے۔ اس آگ کے دریا میں بانو قدسیہ بی اے کے پیپرز دینے کے لیے ایف سی کالج جاتی رہیں کیونکہ فسادات کی وجہ سے کنیئرڈ کالج میں امتحانی سینیٹر نہ کھل سکا تھا۔ بی اے کا امتحان کسی طرح دے دیا، فسادات پھیلتے چلے گئے، بانو قدسیہ اپنے خاندان کے ہمراہ گورداس پور میں جہاں مسلمانوں کی اکثریت تھی، مطمئن تھیں کہ یہ حصہ پاکستان کے حصے میں آئے گا، مگر رات بارہ بجے اعلان ہوگیا کہ گورداس پور پاکستان میں نہیں ہے چنانچہ بانو قدسیہ اپنے کنبے کے ہمراہ پتن پہنچیں جہاں سے رات کو قافلے نکل کر جاتے تھے اور اکثر قافلے رات کو قتل کردیے جاتے تھے۔ بانو قدسیہ کا آدھا قافلہ بچھڑ گیا تھا اور آدھا قتل ہوگیا تھا، تین ٹرک پاکستان پہنچے، ایک میں بانو قدسیہ، ان کی والدہ اور بھائی بچ گئے تھے، دوسرے رشتے دار قتل کردیے گئے۔
پاکستان پہنچ کر بانو قدسیہ کو بی اے کے رزلٹ کا پتا چلا جس میں انھیں کامیابی ملی تھی۔ 1949 میں انھوں نے گورنمٹ کالج لاہور میں ایم اے اُردو میں داخلہ لیا۔ یہاں اشفاق احمد ان کے کلاس فیلو تھے، دونوں کی مشترکہ دلچسپی ادب پڑھنا اور لکھنا تھا۔ دسمبر 1956 میں بانو قدسیہ کی شادی اشفاق احمد سے ہوگئی۔ دونوں رائٹرز تھے اور ادب سے گہرا شغف رکھتے تھے۔شادی کے بعد دونوں رائٹرز کام میں جُت گئے، ایک سال بعد انھوں نے ایک ادبی رسالے ’’داستان گو‘‘ کا اجراء کیا، تمام کام خود کرتے تھے، رسالے کا سرورق بانو قدسیہ کے بھائی پرویز کا فنِ کمال ہوتا تھا جو ایک آرٹسٹ تھے۔ چار سال تک ’’داستان گو‘‘ کا سلسلہ چلا پھر اسے بند کرنا پڑا۔ اشفاق احمد ریڈیو پر اسکرین رائٹر تھے، وہ دونوں ریڈیو کے لیے ڈرامے لکھتے تھے۔ ’’تلقین شاہ‘‘ 1962ء سے جاری ہوا۔ اس کے ساتھ ساتھ اشفاق احمد ایوب خان کے ہاتھوں تازہ تازہ سرکاری ہونے والے ایک جریدے ’’لیل و نہار‘‘ کے ایڈیٹر بن گئے تھے۔
ٹیلی ویژن نیا نیا ملک میں آیا تو اس کے لیے اشفاق احمد اور بانو قدسیہ مسلسل لکھنے لگے۔ اشفاق احمد کی کوئی سیریز ختم ہوتی تو بانو قدسیہ کی سیریل شروع ہوجاتی تھی۔ ٹی وی کے پہلے ایم ڈی اسلم اظہر نے اشفاق احمد کو ٹی وی کا سب سے پہلا پروگرام پیش کرنے کی دعوت دی۔ اس پروگرام میں انھوں نے ٹیلی ویژن کو متعارف کرایا تھا۔ اشفاق احمد ٹی وی کے پہلے اناؤنسر تھے، ان کا ریڈیو پر بہت وسیع تجربہ تھا۔ یہاں ایک اطالوی فلم بنی تھی، اس کے بھی اشفاق احمد مترجم تھے، ٹی وی پر سب سے پہلا ڈراما ’’تقریب امتحان‘‘ ان ہی کا ہوا تھا۔
ریڈیو اور ٹی وی پر بانو قدسیہ اور اشفاق احمد نصف صدی سے زائد عرصے تک حرف و صورت کے اپنے رنگ دکھاتے رہے۔ ٹی وی پر بانو قدسیہ کی پہلی ڈراما سیریل ’’سدھراں‘‘ تھی جب کہ اشفاق احمد کی پہلی سیریز ’’ٹاہلی تھلے‘‘ تھی۔ بانو قدسیہ کا پنجابی میں لکھنے کا تجربہ ریڈیو کے زمانے میں ہی ہوا۔ ریڈیو پر انھوں نے 1965 تک لکھا، پھر ٹی وی نے انھیں بے حد مصروف کردیا۔ بانو قدسیہ نے ٹی وی کے لیے کئی سیریل اور طویل ڈرامے تحریر کیے جن میں ’دھوپ جلی‘، ’خانہ بدوش‘، ’کلو‘ اور ’پیا نام کا دیا‘ جیسے ڈرامے شامل ہیں۔ اس رائٹر جوڑے کے لکھے ہوئے ان گنت افسانوں، ڈراموں، ٹی وی سیریل اور سیریز کی مشترقہ کاوش سے ان کا گھر تعمیر ہوا۔
لاہور کے جنوب میں واقع قیامِ پاکستان سے قبل کی ماڈرن بستی ماڈل ٹاؤن کے ’’داستان سرائے‘‘ میں اشفاق احمد اور بانو قدسیہ کی یادیں بکھری ہوئی ہیں، ان دونوں کا تخلیقی سفر جیسے جیسے طے ہوتا گیا ’’داستان سرائے‘‘ کے نقوش اُبھرتے گئے۔ آج ’’داستان سرائے‘‘ ان دونوں کی شب و روز محنت کا امین ہے۔ بقول بانو قدسیہ کے ’’شادی کے بعد مفلسی نے ہم دونوں میاں بیوی کو لکھنا پڑھنا سکھادیا تھا‘‘۔ اشفاق احمد نے ایک فلم ’’دھوپ سائے‘‘ بھی بنائی تھی جو باکس آفس پر فلاپ ہوگئی تھی اور ایک ہفتے بعد سینما سے اُتر گئی تھی۔ ’’دھوپ سائے‘‘ کی کہانی بانو قدسیہ نے لکھی تھی، ڈائریکشن کے علاوہ اس فلم کا اسکرین پلے اشفاق احمد نے لکھا تھا۔ بانو قدسیہ نے افسانوں، ناولز، ٹی وی و ریڈیو ڈراموں سمیت نثر کی ہر صنف میں قسمت آزمائی کی۔ 1981 میں شایع ہونے والا ناول ’’راجہ گدھ‘‘ بانو قدسیہ کی حقیقی شناخت بنا۔ موضوع کے لحاظ سے یہ ناول درحقیقت ہمارے معاشرے کے مسائل کا ایک ایسا تجزیہ ہے جو اسلامی روایت کے عین مطابق ہے اور وہ لوگ جو زندگی، موت اور دیوانگی کے حوالے سے تشکیلی مراحل میں گزر رہے ہیں، بالخصوص ہمارا نوجوان طبقہ، ان کے لیے یہ ایک گراں قدر حیثیت کا حامل ناول ہے۔
یہ ناول مڈل کلاس کی جواں نسل کے لیے محض اسی لیے دلچسپی کا باعث نہیں ہے کہ ناول کے بنیادی کردار یونیورسٹی کی کلاس میں ایک دوسرے سے آشنا ہوتے ہیں بلکہ اس لیے کشش کا باعث ہے کہ بانو قدسیہ نے جذبات اور اقدار کے بحران کو اپنے ناول کا موضوع بنایا ہے اور اسلامی اخلاقیات سے عدم وابستگی کو اس انتشار کا سبب اور مراجعت کو ’’طریقہ نجات‘‘ بتایا ہے۔ راجہ گدھ کا مطالعہ کرنے والے خوب جانتے ہیں کہ یہ کتنا اچھا ناول ہے۔ راجہ گدھ کے 14 سے زائد ایڈیشن شایع ہوچکے ہیں۔
بانو قدسیہ نے 27 کے قریب ناول، کہانیاں اور ڈرامے لکھے، راجہ گدھ کے علاوہ بازگشت، امربیل، دوسرا دروازہ، تمثیل، حاصل گھاٹ اور توجہ کی طالب، قابلِ ذکر ہیں۔ ان کی ادبی خدمات کے اعتراف میں حکومتِ پاکستان کی جانب سے انھیں 2003 میں ’’ستارۂ امتیاز‘‘ اور 2010 میں ’’ہلالِ امتیاز‘‘ سے نوازا گیا۔ اس کے علاوہ ٹی وی ڈراموں پر بھی انھوں نے کئی ایوارڈز اپنے نام کیے اور اب انھیں کمال فن ایوارڈ سے نوازا جارہا ہے 28 نومبر 1928 کو مشرقی پنجاب کے ضلع فیروز پور میں پیدا ہوئیں اور تقسیم ہند کے بعد لاہور آگئیں۔
ان کے والد بدرالزماں ایک گورنمنٹ فارم کے ڈائریکٹر تھے اور ان کا انتقال 31 سال کی عمر میں ہوگیا تھا۔ اس وقت ان کی والدہ ذاکرہ بیگم کی عمر صرف 27 برس تھی۔ بانو قدسیہ کی اپنی عمر اس وقت ساڑھے تین سال تھی۔ ان کا ایک ہی بھائی پرویز تھا جن کا انتقال ہوچکا ہے۔ بانو قدسیہ نے ابتدائی تعلیم اپنے آبائی قصبے ہی میں حاصل کی۔ انھیں بچپن سے ہی کہانیاں لکھنے کا شوق تھا اور پانچویں جماعت سے انھوں نے باقاعدہ لکھنا شروع کردیا۔
ہوا یوں تھا کہ وہ جب پانچویں جماعت میں تھیں تو ان کے اسکول میں ڈراما فیسٹیول کا انعقاد ہوا، جس میں ہر کلاس کو اپنا اپنا ڈراما پرفارم کرنا تھا۔ بہت تلاش کے باوجود بھی کلاس کو تیس منٹ کا کوئی اسکرپٹ دستیاب نہ ہوا۔ چنانچہ ہم جولیوں اور ٹیچرز نے اس مقصد کے لیے بانو قدسیہ کی طرف دیکھا، جن کی پڑھنے لکھنے کی عادت کلاس میں سب سے زیادہ تھی، ان سے درخواست کی کہ ’’تم ڈرامائی باتیں کرتی ہو لہٰذا یہ ڈراما تم ہی لکھ دو‘‘۔ بانو قدسیہ نے اس چیلنج کو قبول کیا اور بقول ان کے ’’جتنی بھی اُردو آتی تھی اس میں ڈراما لکھ دیا‘‘۔ یہ ان کی پہلی کاوش تھی، اس ڈرامے کو اسکول بھر میں فرسٹ پرائز کا حقدار ٹھہرایا گیا۔ اس حوصلہ افزائی کے بعد وہ دسویں جماعت تک افسانے اور ڈرامے ہی لکھتی رہیں۔ طویل عرصے تک وہ اپنی کہانیوں کی اشاعت پر توجہ نہ دے پائیں اور ایم اے اُردو کرنے کے دوران اشفاق احمد کی حوصلہ افزائی پر ان کا پہلا افسانہ ’’داماندگی شوق‘‘ 1950 میں اس وقت کے ایک سرکردہ ادبی جریدے ’’ادبِ لطیف‘‘ میں شایع ہوا۔
اپنے لکھنے کے حوالے سے بانو قدسیہ کہتی ہیں کہ ’’میں نے کسی سے اصلاح نہیں لی اور نہ کبھی کچھ پوچھا تاوقتیکہ میری شادی نہیں ہوگئی، پھر اشفاق احمد صاحب میرے بڑے معاون و مددگار بلکہ استاد ہوئے۔ انھوں نے مجھ سے کہا اگر تمہیں لکھنا ہے تو ایسا لکھو کہ کبھی مجھ سے دو قدم آگے رہو اور کبھی دو قدم پیچھے، Competition پورا ہو۔ اس کا مجھے بڑا فائدہ ہوا۔ اشفاق صاحب نے Encourage بھی کیا اور Discourage بھی۔ میری کئی باتوں پر خوش بھی ہوئے۔ آخر تک ان کا رویہ استاد کا ہی رہا، میں انھیں شوہر کے ساتھ ساتھ اپنا استاد بھی سمجھتی رہی ہوں، جو کچھ مجھے آپ آج دیکھ رہے ہیں وہ اشفاق احمد صاحب کی وجہ سے ہی ہوں‘‘۔
بانو قدسیہ نے ایف اے اسلامیہ کالج لاہور جب کہ بی اے کنیئرڈ کالج لاہور سے کیا، جس وقت انھوں نے بی اے کا امتحان دیا اس وقت 47 کے فسادات کی آگ پھیل چکی تھی، گورداس پور اور شاہ عالمی اس آگ کی لپیٹ میں آچکے تھے۔ اس آگ کے دریا میں بانو قدسیہ بی اے کے پیپرز دینے کے لیے ایف سی کالج جاتی رہیں کیونکہ فسادات کی وجہ سے کنیئرڈ کالج میں امتحانی سینیٹر نہ کھل سکا تھا۔ بی اے کا امتحان کسی طرح دے دیا، فسادات پھیلتے چلے گئے، بانو قدسیہ اپنے خاندان کے ہمراہ گورداس پور میں جہاں مسلمانوں کی اکثریت تھی، مطمئن تھیں کہ یہ حصہ پاکستان کے حصے میں آئے گا، مگر رات بارہ بجے اعلان ہوگیا کہ گورداس پور پاکستان میں نہیں ہے چنانچہ بانو قدسیہ اپنے کنبے کے ہمراہ پتن پہنچیں جہاں سے رات کو قافلے نکل کر جاتے تھے اور اکثر قافلے رات کو قتل کردیے جاتے تھے۔ بانو قدسیہ کا آدھا قافلہ بچھڑ گیا تھا اور آدھا قتل ہوگیا تھا، تین ٹرک پاکستان پہنچے، ایک میں بانو قدسیہ، ان کی والدہ اور بھائی بچ گئے تھے، دوسرے رشتے دار قتل کردیے گئے۔
پاکستان پہنچ کر بانو قدسیہ کو بی اے کے رزلٹ کا پتا چلا جس میں انھیں کامیابی ملی تھی۔ 1949 میں انھوں نے گورنمٹ کالج لاہور میں ایم اے اُردو میں داخلہ لیا۔ یہاں اشفاق احمد ان کے کلاس فیلو تھے، دونوں کی مشترکہ دلچسپی ادب پڑھنا اور لکھنا تھا۔ دسمبر 1956 میں بانو قدسیہ کی شادی اشفاق احمد سے ہوگئی۔ دونوں رائٹرز تھے اور ادب سے گہرا شغف رکھتے تھے۔شادی کے بعد دونوں رائٹرز کام میں جُت گئے، ایک سال بعد انھوں نے ایک ادبی رسالے ’’داستان گو‘‘ کا اجراء کیا، تمام کام خود کرتے تھے، رسالے کا سرورق بانو قدسیہ کے بھائی پرویز کا فنِ کمال ہوتا تھا جو ایک آرٹسٹ تھے۔ چار سال تک ’’داستان گو‘‘ کا سلسلہ چلا پھر اسے بند کرنا پڑا۔ اشفاق احمد ریڈیو پر اسکرین رائٹر تھے، وہ دونوں ریڈیو کے لیے ڈرامے لکھتے تھے۔ ’’تلقین شاہ‘‘ 1962ء سے جاری ہوا۔ اس کے ساتھ ساتھ اشفاق احمد ایوب خان کے ہاتھوں تازہ تازہ سرکاری ہونے والے ایک جریدے ’’لیل و نہار‘‘ کے ایڈیٹر بن گئے تھے۔
ٹیلی ویژن نیا نیا ملک میں آیا تو اس کے لیے اشفاق احمد اور بانو قدسیہ مسلسل لکھنے لگے۔ اشفاق احمد کی کوئی سیریز ختم ہوتی تو بانو قدسیہ کی سیریل شروع ہوجاتی تھی۔ ٹی وی کے پہلے ایم ڈی اسلم اظہر نے اشفاق احمد کو ٹی وی کا سب سے پہلا پروگرام پیش کرنے کی دعوت دی۔ اس پروگرام میں انھوں نے ٹیلی ویژن کو متعارف کرایا تھا۔ اشفاق احمد ٹی وی کے پہلے اناؤنسر تھے، ان کا ریڈیو پر بہت وسیع تجربہ تھا۔ یہاں ایک اطالوی فلم بنی تھی، اس کے بھی اشفاق احمد مترجم تھے، ٹی وی پر سب سے پہلا ڈراما ’’تقریب امتحان‘‘ ان ہی کا ہوا تھا۔
ریڈیو اور ٹی وی پر بانو قدسیہ اور اشفاق احمد نصف صدی سے زائد عرصے تک حرف و صورت کے اپنے رنگ دکھاتے رہے۔ ٹی وی پر بانو قدسیہ کی پہلی ڈراما سیریل ’’سدھراں‘‘ تھی جب کہ اشفاق احمد کی پہلی سیریز ’’ٹاہلی تھلے‘‘ تھی۔ بانو قدسیہ کا پنجابی میں لکھنے کا تجربہ ریڈیو کے زمانے میں ہی ہوا۔ ریڈیو پر انھوں نے 1965 تک لکھا، پھر ٹی وی نے انھیں بے حد مصروف کردیا۔ بانو قدسیہ نے ٹی وی کے لیے کئی سیریل اور طویل ڈرامے تحریر کیے جن میں ’دھوپ جلی‘، ’خانہ بدوش‘، ’کلو‘ اور ’پیا نام کا دیا‘ جیسے ڈرامے شامل ہیں۔ اس رائٹر جوڑے کے لکھے ہوئے ان گنت افسانوں، ڈراموں، ٹی وی سیریل اور سیریز کی مشترقہ کاوش سے ان کا گھر تعمیر ہوا۔
لاہور کے جنوب میں واقع قیامِ پاکستان سے قبل کی ماڈرن بستی ماڈل ٹاؤن کے ’’داستان سرائے‘‘ میں اشفاق احمد اور بانو قدسیہ کی یادیں بکھری ہوئی ہیں، ان دونوں کا تخلیقی سفر جیسے جیسے طے ہوتا گیا ’’داستان سرائے‘‘ کے نقوش اُبھرتے گئے۔ آج ’’داستان سرائے‘‘ ان دونوں کی شب و روز محنت کا امین ہے۔ بقول بانو قدسیہ کے ’’شادی کے بعد مفلسی نے ہم دونوں میاں بیوی کو لکھنا پڑھنا سکھادیا تھا‘‘۔ اشفاق احمد نے ایک فلم ’’دھوپ سائے‘‘ بھی بنائی تھی جو باکس آفس پر فلاپ ہوگئی تھی اور ایک ہفتے بعد سینما سے اُتر گئی تھی۔ ’’دھوپ سائے‘‘ کی کہانی بانو قدسیہ نے لکھی تھی، ڈائریکشن کے علاوہ اس فلم کا اسکرین پلے اشفاق احمد نے لکھا تھا۔ بانو قدسیہ نے افسانوں، ناولز، ٹی وی و ریڈیو ڈراموں سمیت نثر کی ہر صنف میں قسمت آزمائی کی۔ 1981 میں شایع ہونے والا ناول ’’راجہ گدھ‘‘ بانو قدسیہ کی حقیقی شناخت بنا۔ موضوع کے لحاظ سے یہ ناول درحقیقت ہمارے معاشرے کے مسائل کا ایک ایسا تجزیہ ہے جو اسلامی روایت کے عین مطابق ہے اور وہ لوگ جو زندگی، موت اور دیوانگی کے حوالے سے تشکیلی مراحل میں گزر رہے ہیں، بالخصوص ہمارا نوجوان طبقہ، ان کے لیے یہ ایک گراں قدر حیثیت کا حامل ناول ہے۔
یہ ناول مڈل کلاس کی جواں نسل کے لیے محض اسی لیے دلچسپی کا باعث نہیں ہے کہ ناول کے بنیادی کردار یونیورسٹی کی کلاس میں ایک دوسرے سے آشنا ہوتے ہیں بلکہ اس لیے کشش کا باعث ہے کہ بانو قدسیہ نے جذبات اور اقدار کے بحران کو اپنے ناول کا موضوع بنایا ہے اور اسلامی اخلاقیات سے عدم وابستگی کو اس انتشار کا سبب اور مراجعت کو ’’طریقہ نجات‘‘ بتایا ہے۔ راجہ گدھ کا مطالعہ کرنے والے خوب جانتے ہیں کہ یہ کتنا اچھا ناول ہے۔ راجہ گدھ کے 14 سے زائد ایڈیشن شایع ہوچکے ہیں۔
بانو قدسیہ نے 27 کے قریب ناول، کہانیاں اور ڈرامے لکھے، راجہ گدھ کے علاوہ بازگشت، امربیل، دوسرا دروازہ، تمثیل، حاصل گھاٹ اور توجہ کی طالب، قابلِ ذکر ہیں۔ ان کی ادبی خدمات کے اعتراف میں حکومتِ پاکستان کی جانب سے انھیں 2003 میں ’’ستارۂ امتیاز‘‘ اور 2010 میں ’’ہلالِ امتیاز‘‘ سے نوازا گیا۔ اس کے علاوہ ٹی وی ڈراموں پر بھی انھوں نے کئی ایوارڈز اپنے نام کیے اور اب انھیں کمال فن ایوارڈ سے نوازا جارہا ہے

(اسفند یار خان(ایس ایل پی طالبعلم

 

تحریر:ساحرہ ظفر:

میرے ابو ایک مزدور ہیں۔میری پیدائش سے پہلے والد صاحب ایک کوٹھی میں کام کرتے تھے۔مالک نے کام کے ساتھ رہنے کے لیے سرونٹ کواٹر دیا   اس وجہ سے امی بھی ابو کے ساتھ اسلام آباد آگئی ۔

کچھ عرصے میں میری پیدائش  ہوئی  میرا نام بھی اُن آنٹی نے رکھا تھا جن کے گھر میں  ہم رہتے تھے۔کچھ عرصے بعد  ابو  کی نوکری چُھوٹ گئی  ہم سب گاؤں چلے گئے۔

گاؤں میں پڑھنے لکھنے کا کوئی اتنا خاص رواج نہیں تھا  اور  سکول نہ ہونے کے برابر تھے  ابو شہر میں نوکری ڈھونڈتے رہے آخر کار ابو  ایک دفعہ پھر نوکری ڈھونڈنے میں کامیاب ہو گئے جس سے ہمارے گھر کا خرچ  آرام سے چل سکتا تھا ہم  دوبارہ گاؤں چھوڑ کر شہر آگئے  اور کرائے کے گھر میں  رہنا شروع کر دیا   والد صاحب کو پڑھانے کا بہت شوق تھا انہوں نے ہم دونوں بھائیوں کو سکول میں پہلی کلاس میں  داخل کروایا  چھوٹے بھائی نے کچھ دن سکول جانے کے بعد صاف انکار کر دیا کہ وہ اب سکول نہیں جائے گا لیکن مجھے سکول جانے کا بہت شوق تھا میں نے   اپنے  سکول جانے اور سیکھنے کو اپنا مقصد بنا لیا   ۔

کچھ مہینے بعد سکول والوں نے کہا کہ کل آپ نے   پیسے جمع کروانے ہیں کیونکہ آپ کے سکول کا فنڈ بڑھ گیا ہے اس طرح روز اساتذہ ایک نئی رسید ہاتھ میں تھما دیتے کبھی کاپیاں اور کبھی کتابیں لانے کا کہتے

مجھے اپنے  گھر کے حالات کا پتا تھا کہ میرے والدین کتنی مشکل سے میری فیس پوری کرتے ہیں   میں نے تنگ آکر سکول چھوڑ دیا ۔

ابو نے گورنمنٹ سکول میں میرے داخلے کا پتا  کیا لیکن  بے فارم نہ ہونے کی وجہ سے   میرا  داخلہ وہاں بھی نہ ہو سکا اب میں تھک ہار کر ابو کے ساتھ مزدوری کرنے لگا  لیکن ایک آس اور یقین اب بھی تھا کہ میں سکول ضرور جاؤں گا ۔

تقریبا 10 سال میں نے  ابو کے ساتھ مزدوری   کی اس دوران مجھے بہت شرمندگی ہوتی جب  حساب کتاب کے چھوٹے  چھوٹے معاملات مالک لکھنے کے لیے کہتا تو میں لکھ نہیں پاتا اس طرح اکثر موقعوں پر بہت باتیں سُنی پڑتی ۔

مزدوری کے دوران میرے ایک دوست نے   بتایا کہ سکیم تھری میں ایک سکول ہے جو بچوں کو مفت پڑھاتے ہیں  میں نے جونہی یہ بات سُنی تو دوسرے دن سکول  میں داخلہ لے لیا  مجھے اپنا نام تک لکھنا نہیں آتا تھا میں اپنی کلاس میں سب سے بڑا تھا  لیکن اس کے باوجو میں نے  اپنی پڑھائی کا ایک سال پورا کیا اب اللہ کا شکر ہے نہ صرف میں اپنا نام لکھ سکتا ہوں بلکہ میں نویں کلاس کا طالب علم ہوں  میں پڑھائی کے ساتھ ساتھ نوکری کرتا ہوں  میرے خواب میری منزل ابھی بہت  بڑی اور آگے ہے ابھی  یہ شروعات ہے ۔

بانو قدسیہ کاسندر سپنا بیت گیا

مستنصر حسین تارڑ
لاہور ائر پورٹ کے لاؤنج میں ایک وہیل چیئر میں سفید بالوں والی ایک ابھی تک خوشنما بوڑھی عورت ایک ڈھے چکے تناور شجر کی مانند سرجھکائے بیٹھی تھی اور اس کا دراز قامت بیٹا اپنے عظیم باپ کی شباہت کا پرتو اسکے سفید بالوں پر دوپٹہ درست کر رہا تھا…میں نے قریب ہو کر سلام کیا اور انہوں نے لرزتے ہاتھوں سے مجھے ایک مہربان تھپکی دی اور کہنے لگی’’ مستنصر تم آگئے ہو‘‘ میں نے کہا’’ بانو آپا مجھے اطلاع ہوگئی تھی کہ اسلام آباد جانے والی پرواز میں دو گھنٹے کی تاخیر ہوگئی ہے اس لئے میں قدرے تاخیر سے پہنچا‘‘ بانو قدسیہ کو یوں دیکھ کر میرا دل رنج سے بھرگیا…انکے چہرے پر جو اداسی اور بڑھاپے کی تھکن تھی اسے دیکھ کر مجھے گیتا دت کا گانا’’ میرا سندر سپنا بیت گیا‘‘ یاد آئے چلا جا رہا تھا کہ بانو آپا کے سندر سپنے اشفاق احمد کو بیتے ہوئے بھی کتنے ہی برس ہوگئے تھے…میں نے جھک کر ان سے کہا’’ بانو آپا… آپ کو نہیں آنا چاہئے تھا…آپ سفر کے دوران تھک جائیں گی…اور وہاں اکیڈمی آف لیٹرز کی ادیبوں کی کانفرنس میں ادیبوں کا جو ہجوم ہوگا وہ آپ سے ملنے اور باتیں کرنے کا شائق ہوگا تو آپ تھک جائیں گی‘‘ اس ہیں۔
ن کے بیٹے اسیر نے کہا’’ تارڑ صاحب…اماں برسوں سے…جب سے ابا گئے ہیں گھر سے کم ہی نکلتی تھیں، کسی سے ملاقات بھی نہیں کرتی تھیں کہ ان کی صحت اجازت نہیں دیتی تو میں نے انہیں قائل کیا کہ اماں تھوڑی سی ہمت کریں میں آپ کو اٹھا کر لے جاؤنگا۔
گھر سے نکلیں ان لوگوں سے ملیں جو آپ سے محبت کرتے ہیں، آپ بہتر محسوس کریں گی…اپنا’’ کمال فن‘‘ ایوارڈ وزیراعظم سے خود وصول کریں… میں آپ کاخیال رکھوں گا…تو تارڑ صاحب… یہ میرے اصرار کرنے پر اور اکیڈمی کے چیئرمین عبدالحمید کی درخواست پر گھر سے نکلی ہیں اور دیکھ لیجئے ابھی سے بہتر محسوس کر رہی ہیں…بانو آپا اس دوران کبھی اونگھ میں چلی جاتیں اور کبھی مسکرانے لگتیں اور مجھ سے میرے بچوں کے بارے میں پوچھنے لگتیں کہ وہ میرے بیٹے سمیر کی شادی پر خصوصی طور پر چلی آئی تھیں، کہنے لگیں’’ تم نے ایک اور ناول لکھا ہے جس کا نام خس و خاشاک کچھ ہے اور کچھ لوگوں نے اس کا بہت تذکرہ کیا ہے تو تم نے یہ ناول مجھے کیوں نہیں دیا‘‘ تو میں نے مسکرا کر کہا’’ بانو آپا یہ ناول بہت ضخیم ہے…اس کا حجم آپ کو تھکا سکتا ہے اسلئے پیش نہیں کیا’’ تو ذرا مصنوعی غصے سے بولیں’’ کیا میں نے اس سے پیشتر تمہارے تمام ناول نہیں پڑھے…ویسے تم کچھ بھی کرلو’’ بہاؤ‘‘ سے بڑا ناول نہیں لکھ سکتے۔
میں نے وعدہ کیا کہ واپسی پر میں’’ خس و خاشاک زمانے‘‘ ان کی خدمت میں پیش کروں گا…بانو آپا میرے ناول’’ بہاؤ‘‘ پر اٹک گئی ہیں ان زمانوں میں آج سے تقریباً بیس برس پیشتر جب یہ ناول شائع ہوا تو انہوں نے کہا تھا’’ مستنصر تم نے ’’ بہاؤ‘‘ کے بعد کوئی اور ناول نہیں لکھنا کہ اس سے بڑا ناول تم کبھی نہیں لکھ پاؤ گے‘‘ اور تب میں نے ڈرتے ڈرتے کہا تھا’’ بانو آپا، آپ کا حکم سر آنکھوں پر لیکن میں اس دوران ایک ناول’’ راکھ‘‘ نام کا لکھ چکا ہوں تو اس کا کیا کروں‘‘ بانو آپا نے’’ راکھ‘‘ پڑھنے کے بعد کہا یہ’’ بہاؤ‘‘ سے بڑا تو نہیں لیکن…تم نے اچھا کیا کہ یہ ناول لکھا…یہ’’ آگ کا دریا‘‘ سے کم نہیں…اب اور کوئی ناول نہ لکھنا یہی دو کافی ہیں، بانو آپانے اپنی سرگزشت میں خصوصی طور پر’’ بہاؤ‘‘ کا تفصیلی تذکرہ کیا ہے…میرا سندر سپنا بیت گیا…میں پریم میں سب کچھ ہارگئی، بے درد زمانہ جیت گیا…یہ بانو قدسیہ تھیں…اسیر جیسے اپنے بازو واکرکے انہیں وہیل چیئر سے اٹھاتے ہوئے کہتا تھا’’ اماں مجھے آغوش میں لے لو۔
میں آپ کو سنبھالتا ہوں‘‘ اور پھر جہاز کی نشست میں جیسے بانو قدسیہ کانچ کی ایک گڑیا ہوں، احتیاط سے بٹھاتا تھا تو میں رشک کرتا تھا…کہ بیٹے ہوں تو ایسے ہوں…’’ ایہہ پتر ہٹاں تے نہیں ملدے‘‘اکیڈمی آف لیٹرز نے یہ کرم کیا تھا کہ ہم دونوں کی بزرگی کو مدنظر رکھتے ہیں بائی ائر سفر کی سہولت دی تھی اور اسلام آباد ہوٹل میں رہائش کا بندوبست کیا تھا…لاہور سے اسلام آباد کا سفر بسوں کے ذریعے طے کرنا ہماری سکت سے باہر تھا…ویسے کسی ایسی بس میں بیٹھنا جس میں انواع و اقسام کے پرندے…میرا مطلب ہے ادیب اورشاعر ہم سفر ہوں کیسا پرتکلف سفر ہوگا…کیسے کیسے شاعر پرندے سفر کے دوران چہکتے چلے جاتے ہونگے، ہمیں بتایا گیا کہ لاہور سے نوے ادیب اور شاعر مدعو کئے گئے ہیں اور بقول اظہر جاوید کسی منچلے نے کہا کہ یار اگر اس میں فلاں افسانہ نگار یا فلاں شاعر بھی شامل کرلیا جائے تو بھی نوے کی گنتی پوری نہیں ہوتی، تو یہ بقیہ حضرات کون ہیں۔
اسلام آباد ائر پورٹ پر ایک گھنی مونچھوں والے دراز قامت، خواہ مخواہ مسکراتے ہوئے ایک سولنگی صاحب تھے جنہوں نے بصد احترام ہم تینوں کو…بانو آپا، اسیر خان اور مجھے اسلام آباد ہوٹل میں پہنچایا یہ سولنگی صاحب ہماری ایک فون کال پر ایک مونچھوں والے جن کی طرح فوراً حاضر ہو جاتے تھے۔اگلی سویر ادیبوں کی کانفرنس کا افتتاحی اجلاس… جسے نیشنل لائبریری میں ہونا تھا سیکیورٹی کے خدشات کے باعث وزیر اعظم ہاؤس کے قلعے کی دیواروں کے اندر منعقد ہونا قرار پایا…عجیب سلطنت ہے جس کا صدر اور وزیر اعظم ایک قلعے میں بند ہیں جس خصوصی کارمیں بانو آپا اور میں سفر کر رہے تھے اسے کوئی روکنے والا نہ تھا اور میں نے دیکھا کہ ہال میں داخل ہونے والے پاکستان کے مقتدر اوربزرگ ادیبوں کی ایک قطار ہے…ایسے ادیب اور شاعر جن کی پذیرائی کیلئے لوگ کھڑے ہوجاتے ہیں اور وہ سب مجرموں کی مانند ایک قطار میں کھڑے ہیں جیسے نازی جرمنی میں گیس چیمبر میں سپرد آتش کئے جانے والے یہودیوں کی قطار ہو…اور ان میں امجد اسلام، افتخار عارف اور چینی اردو سکالر ژونگ بھی شامل تھے۔
داخلے پر سیکیورٹی کے حضرات نے بھی ان کے ساتھ مجرموں ایسا سلوک کیا، خیبرپختونخوا کا ایک ادیب احتجاج کر رہا تھا، ہم نے کبھی قصر شاہی میں داخل ہونے کی خواہش نہ کی تھی…کسی وزیر یا وزیر اعظم سے ملاقات کی خواہش نہ کی تھی تو ہمیں یوں کیوں ذلیل کیا جا رہا ہے…میں احتجاج کے طورپر اس کانفرنس سے واک آؤٹ کرتا ہوں اور اپنے ادیب ہونے پر شرمندگی کااظہار کرتا ہوں، سیکیورٹی کے اہلکار ادیبوں کے ساتھ طالبان ایسا سلوک کر رہے تھے اور درست کر رہے تھے کہ ادیب بھی تو ایک نوعیت کے دہشت گرد ہوتے ہیں۔