Latest Posts

Vision 21

A Company Registered under Section 42 of Companies Ordinance 1984. Corporate Universal Identification No. 0073421

Vision 21 is Pakistan based non-profit, non- partisan Socio-Political organisation. We work through research and advocacy. Our Focus is on Poverty and Misery Alleviation, Rights Awareness, Human Dignity, Women empowerment and Justice as a right and obligation.

We act and work side by side with the deprived and have-nots.

We invite you to join us in this mission. We welcome your help. We welcome your comments and suggestions. If you are interested in writing on Awaam, please contact us at: awaam@thevision21.org

Awaam      by   Vision21

↑ Grab this Headline Animator

The games politicians play!

Dr Ikramul Haq, March 26, 2017

Pakistan has been borrowing or begging for bailouts while trillions of untaxed money are lying abroad

The games politicians play!

Federal Finance Minister Ishaq Dar, on March 7, 2017, told the National Assembly that “Pakistan will sign an agreement with Switzerland on exchange of information regarding bank accounts on March 21”. He informed the parliamentarians that “several media reports have surfaced over the years alleging that Pakistanis have evaded taxes — a hefty amount of over $180-200 billion — and stashed the money in Swiss banks”. He claimed the situation demanded that Pakistan should approach the Swiss government for a treaty surrounding the exchange of information.

Ishaq Dar did not tell the House what happened in August 2014 when the Chairman of Federal Board of Revenue (FBR) was to lead a delegation to Switzerland to “re-negotiate and upgrade treaty on Avoidance of Double Taxation [DTA] to retrieve and/or tax undeclared money deposited in the Swiss banks by Pakistani nationals. At the last moment, he was asked not to go and the Chief International Taxes, FBR, was sent alone! It was anticipated that there would be no agreement or if at all Switzerland did agree, they would disown it making the junior officer a scapegoat by alleging that he was not authorised to sign it! The plan worked as the politicians desired!!

The treaty renegotiated and inked after talks [August 24-26, 2014] was blocked first by political masters and reasons were found subsequently through hand-picked bureaucrats that was exposed in Pakistani cash in Swiss banks pulled out, The Express Tribune, February 22, 2017. The reasons for not honouring the renegotiated treaty are sham. It was claimed that reduction in rate of dividends to 5 per cent was unacceptable. Pakistan has 5 per cent dividends rate with over a dozen countries — this reduced rate was signed with Spain and Czech Republic in 2016, after political masters frustrated the Swiss Treaty!

Most-favoured nation status was just another play up, since Pakistan got a much better deal on royalty, interest and shipping. Swiss wanted assurance that if Pakistan gave better terms to any other country, they would demand the same. It was more of a technical thing hung in the distant future and also contingent upon many ‘ifs’ and ‘butts’ and had no price tag for Pakistan immediately as wrongly claimed in National Assembly by the finance minister.

Though our worthy finance minister was fully aware of the fact that majority of the offshore companies of Pakistanis were registered in British Virgin Islands, he did not take any initiative to sign a Tax Information Exchange Agreement (TIEA) with British Virgin Islands that India signed way back in 2011. Till today, no serious effort has been made for retrieving looted wealth invoking Swiss law (Foreign Illicit Assets Act (FIAA) of 18 December 2015) or tax losses caused by non-reporting of income by Pakistanis having off-shore accounts.

The successive governments in Pakistan, unfortunately, adopted a policy of appeasement towards tax cheats and looters of national wealth. Even private efforts to invoke extraordinary jurisdiction of Supreme Court and High Courts to retrieve looted wealth and untaxed money have not been fruitful.

On the contrary, the government is seriously considering extending amnesty to them! Even the Opposition has not tabled any bill in the Parliament to show its interest and concern in the matter proving emphatically that an unholy, anti-people alliance lurks among all forces of loot on this issue. It is high time that all the documents related to 2014 negotiations for Swiss Treaty are made public so that masses come to know about the game our politician play!

On March 21, 2017, according to a release of Press Information Department, Pakistan and Switzerland signed the revised Agreement on Avoidance of Double Taxation with respect to Taxes on Income. It says: “One of the highlights of the re-negotiated treaty is the replacement of the Article on ‘Exchange of Information’ with the new one reflecting the internationally accepted standard which is based on the OECD Model. The new Article on Exchange of Information will considerably expand the existing scope of information to be obtained on request basis for the enforcement of domestic tax laws. It will also provide access to bank information for tax purposes and such information shall not be refused solely because the information is held by a bank or other financial institution. For this purpose, the requesting state will be providing information to the requested state such as the identity of the person under investigation and period of time for which the information is requested.”

On October 1, 2010, the Swiss Parliament passed a law, The Restitution of Illicit Assets Act, 2010 (RIAA), empowering the Swiss Federal Tax Administration (FTA) to sign DTAs based on revised Article 26 of the OECD Model Tax Convention and cooperate with international requests for exchange of bank information of all kinds. In the wake of this development, many countries approached Switzerland to upgrade their DTAs to incorporate OECD’s Article 26.

The United States, Germany, France, United Kingdom, the Netherlands, Qatar, and India, after incorporating revised Article 26 of OECD, started reaping notable tax revenue gains and receiving capital back from Switzerland. Our men in power tried to hoodwink the masses by saying that they were going for Organization for Economic Cooperation and Development (OECD) Multilateral Convention on Mutual Administrative Assistance in Tax Matters. They were just buying time to ensure that no information comes to Pakistan till the time they rule!

We have been repeatedly writing since 2010 stressing the government to approach Switzerland for re-negotiating the DTA, but the matter was constantly delayed by politicians. Though FBR moved a summary in 2013 for re-negotiating the DTA with Switzerland, the PPP government did not respond. At least three summaries moved from time to time were shoved under the carpet. The reasons behind this were discussed in detail in our article, The Swiss accounts’, Business Recorder, September 9, 2013. Then President Asif Ali Zardari got his $60 million moved from Swiss banks and never bothered to inform the nation where the said money came from and how much tax was paid on it in Pakistan or elsewhere.

After pressure from inside and international donors, the present government gave approval on September 20, 2013 for renegotiation with the Swiss government, but played dirty tricks thereafter as narrated above. By not honouring the 2014 renegotiated treaty it allowed many people sufficient time to move away shady funds from Swiss banks. The fear is that now new treaty signed on March 21, 2017 will not yield the desired results after coming into force.

On March 9, 2014, the Ministry of Finance, in a written reply, told the National Assembly that the government “was engaging with Swiss authorities to get to the money, hidden away by various Pakistani nationals.” In a detailed response to a question raised by Dr Arif Alvi of the Pakistan Tahreek-i-Insaf (PTI), the ministry quoted statements by a Swiss banker and a former Swiss government minister: “One of the directors of Credit Suisse AG stated on record that $97 billion worth of Pakistani capital was deposited only in his bank.” Similarly, Micheline Calmy-Rey, a former Swiss Foreign Minister, “is reported to have put the amount of Pakistani money hidden in Switzerland at $200 billion — a statement that was never contradicted,” the statement added.

The Finance Ministry claimed that there were reasons to believe that the figures were correct. Later, Finance Minister Ishaq Dar said the government was working under the ambit of RIAA, which “allows the Swiss government to exchange information that was earlier considered confidential regarding money that might have been obtained illegally and deposited in Swiss banks”. He also briefed the House on the steps the government was taking to get the money back. All this proved to be a farce!

Amid a global squeeze on tax evasion, money laundering and blatant outflows of capital, Switzerland’s 11 largest banks, according to many reports, house nearly $7 trillion of the world’s total offshore liquidity stock of $32 trillion. Switzerland has traditionally been the oldest, the most formidable and the most popular secret banking jurisdiction, attracting massive sums of tax-evaded money from across the world into its banks with numbered-accounts. Since 2009, the US and EU have consistently been pressing Switzerland and other tax havens to allow international tax administrations to track illegal funds parked in their secretive banks.

The issue of tax avoidance by keeping accounts in tax havens has become a highly charged political issue in the world especially after Bahamas Leaks and Panama Leaks. Across much of Europe, particularly the richer northern countries are increasingly fed up with demands for bailout money from heavily indebted countries like Greece. A key demand of a recent bailout deal announced for Cyprus was that the nation should drastically shrink its role as a financial centre and, many in Germany suspect, a haven for money laundering.

In Pakistan’s case, we have been borrowing or begging for bailouts while trillions untaxed are lying abroad.

The successive governments in Pakistan, unfortunately, adopted a policy of appeasement towards tax cheats and looters of national wealth. Even private efforts to invoke extraordinary jurisdiction of Supreme Court and High Courts to retrieve looted wealth and untaxed money have not been fruitful. The Supreme Court in 2012 and 2013 declared the petitions filed by some individuals as “non-maintainable” and the same was the fate of many petitions in Lahore High Court. On the contrary, the Indian Supreme Court, in its historic decision of July 4, 2011 in the case of Ram Jethmalani and Other v Union of India [ (2011) 8 SCC 1=2011 PTR 1933 (S.C. Ind)], ordered to form a ‘Special Investigation Team’ (SIT) to supervise the government-led investigations into black money belonging to Indians, lying abroad. The Congress government did not implement it and went into review. However, the government of Narendra Modi after coming into power on May 26, 2014 immediately constituted SIT and has begun negotiations with Switzerland.

سنجیدہ اور نہایت با وقار تحریر.

میں اطمینان سے بیٹھا سگریٹ کے کش لگا رہا تھا کہ اچانک ڈرائنگ روم کا دروازہ کھلا اور میرے دوست کے والد صاحب کی شکل نظر آئی۔میں نے جلدی سے سگریٹ ایش ٹرے میں بجھا دیا اورسلام لیتے ہوئے کھڑا ہو گیا۔ وہ مسکرا دیے اور اپنے نحیف بدن کو لاٹھی کے زور پر چلاتے ہوئے میرے قریب آگئے۔ میں نے احتراماً پاس پڑی صوفے کی گدی ایک طرف کر دی۔ وہ میرے سر پر پیار بھرا ہاتھ پھیرتے ہوئے بیٹھ گئے۔

میں اپنے دوست سے ملنے اُس کے گھر آیا ہوا تھا‘ دوست مجھے ڈرائنگ روم میں بٹھا کر بیٹے کو سکول سے لینے گیا تھا ۔میں عموماً کسی کے گھر سگریٹ پینے سے گریز کرتا ہوں لیکن میرا دوست بھی چونکہ سموکر ہے اس لیے میں نے بھی اطمینان سے سگریٹ سلگا لیا تھا۔ میرے دوست کے والد صاحب بھی سگریٹ نوشی فرماتے ہیں ‘ ان کی عمر 70 سال ہے ‘ایک بڑے سرکاری ادارے کے سربراہ رہے ہیں اور اب ریٹائرمنٹ کی زندگی گزار رہے ہیں۔جب وہ آن جاب تھے تو اصولوں پر کبھی سمجھوتہ نہیں کرتے تھے‘ سائلین کی ایک بڑی تعداد روز ان کے دفتر کے باہر جمع ہوتی تھی لیکن یہ کسی سے فری نہیں ہوتے تھے۔اللہ کا دیا سب کچھ تھا‘سرکاری گھر تھا‘ سرکاری گاڑی تھی اور چار ملازمین بھی ملے ہوئے تھے۔ یہ اپنی نوکری کے دور میں نہایت اصول پرست اور وقت کے پابند انسان تھے۔دفتر جانے سے لے کر رات کو سونے تک اِن کے اوقات مقرر تھے‘ چونکہ حد درجہ سنجیدہ انسان تھے اس لیے کبھی دنیاوی مشغلوں میں نہیں پڑے‘ نہ خود کسی کے دوست بنے ‘ نہ کسی کو بننے دیا۔ اپنی اولاد کی تربیت بھی انہوں نے نہایت نپے تلے انداز میں کی۔اعلیٰ سے اعلیٰ تعلیم دلائی‘ ایٹی کیٹس سکھائے اورکامیابی کی راہوں پر گامزن کیا۔ ان کے دو بیٹے اور ایک بیٹی ہے‘ سب سے بڑا ڈاکٹر ہے‘ اُس سے چھوٹا جو میرا دوست ہے وہ انجینئر ہے ‘بیٹی سب سے چھوٹی ہے‘ شادی شدہ ہے اور ایک ملٹی نیشنل کمپنی میں زونل مینجر ہے۔اولادکی پرورش کے دوران اِنہوں نے خیال رکھا کہ اِن کی اولاد غیر نصابی کاموں پر اپنا وقت ضائع نہ کرے ‘ انہوں نے تینوں بچوں کے کمرے چھ سال کی عمر سے ہی الگ کر دیے تھے‘ خود چونکہ انتہائی پروقار اور رعب دار شخصیت کے مالک تھے اس لیے اپنے اور بچوں کے درمیان بھی فاصلے کے قائل تھے۔انہوں نے اپنے بچوں کو بچپن میں کوئی پریوں والی کہانی نہیں سنائی‘کبھی اُنہیں ٹیڑھا میڑھا منہ بنا کر نہیں ہنسایا‘ سیر و تفریح کے لیے بھی لے کر جاتے تھے تو پوری کوشش کرتے تھے کہ بچے بلاوجہ انجوائے نہ کرنے پائیں۔اِنہیں زیادہ ہنسنے ہنسانے والے اور باتونی قسم کے لوگوں سے سخت نفرت تھی۔گھر میں کوئی عزیز رشتہ داربھی آجاتا توگھنٹوں اس کے سامنے خاموش بیٹھے رہتے‘بالآخر وہ خود ہی گھبرا کر اجازت طلب کر لیتا۔

اِن کے گھر میں کھانے پینے تک ایک خاص رکھ رکھاؤ تھا‘ چھری کانٹے کے بغیر کھانے والے کو سخت ناپسند کرتے تھے‘ اونچی آواز میں ٹی وی لگانا منع تھا‘ یہ انہی کا کمال ہے کہ انہوں نے بچوں کو کبھی سکول سے چھٹی نہیں کرنے دی‘ کئی دفعہ تو بچے بخار کی حالت میں بھی سکول گئے۔اپنی طبیعت کے جلال اور مردم بیزاری کے باعث اِن کے ہمسائے بھی اِن سے ملنے سے کتراتے تھے۔

چھ سال قبل یہ ریٹائر ہوچکے ہیں۔بیوی اللہ کو پیاری ہوگئی ہے‘تینوں بچوں کی شادیاں ہوچکی ہیں اور اب وہ خود بال بچوں والے ہیں۔ ریٹائرمنٹ کے بعد اب یہ ہر عزیز رشتے دار کے گھر آنے جانے لگے ہیں‘ لیکن اب یہ جہاں بھی جاتے ہیں اِن کے احترام میں مکمل خاموشی اختیار کی جاتی ہے۔یہ اپنے بیٹوں سے باتیں کرنے کے لیے ترستے ہیں لیکن بیٹوں کے سامنے اِن کی ساری زندگی ہے لہذا وہ اب بھی یہی سمجھتے ہیں کہ ابو بلاوجہ کی ڈسٹربنس پسند نہیں کرتے۔حالانکہ ابو ڈسٹربنس کے لیے ترس گئے ہیں‘ اب اِن کا دل چاہتا ہے کہ کوئی اِن کے پاس بیٹھ کر کچھ بھی بولتا رہے لیکن اِن سے محوِ گفتگو ضرور ہو‘ رشتے داروں کو فون کرکرکے بلاتے ہیں لیکن کوئی بھی اِن کے قریب پھٹکنے کو تیار نہیں۔جن بچوں کو انہوں نے’’باوقار زندگی‘‘ گزارنے کی تربیت دی تھی وہ اب بھی ان کی عزت کرتے ہیں‘ ہفتے میں دو دفعہ اپنے بچوں کو دادا سے ملانے ان کے کمرے میں لاتے ہیں‘ دادا کے لیے وٹامنز سے بھرپور پھل لے کر آتے ہیں‘دادا کی دیکھ بھال کے لیے ہمہ وقت ایک نرس رکھی ہوئی ہے ‘لیکن یہ سب کام گھمبیر خاموشی کے ساتھ ہوتے ہیں‘اس سے زیادہ وہ کچھ نہیں کرسکتے‘ انہیں یہی کچھ سکھایا گیا ہے۔

انہوں نے اپنی سگریٹ کی ڈبی نکالی‘ ایک سگریٹ نکال کر سلگایا اور میری طرف دیکھ کر مسکرائے’’تم بھی پیو ناں‘‘۔میں نے شرمندگی سے نفی میں سرہلادیا۔ وہ ہنس پڑے’’یار پی لو۔۔۔ذرا کمپنی ہی رہے گی‘‘۔ میں نے جھجکتے ہوئے اپنا سگریٹ سلگالیا۔وہ کچھ دیر کش لگاتے رہے‘ پھر آہستہ سے بولے’’کوئی لطیفہ سناؤ‘‘۔ میں بوکھلا گیا’’انکل ۔۔۔وہ اصل میں۔۔۔مجھے تو‘‘۔۔۔انہوں نے پیار سے میرے کان کھینچے۔۔۔’’زیادہ بننے کی ضرورت نہیں‘ ایک عرصے سے تمہیں جانتا ہوں اور تمہاری تحریریں بھی پڑھتا رہتا ہوں‘ سناؤ ناں کوئی شرارتی سا لطیفہ‘‘۔ میں ہونقوں کی طرح ان کا منہ دیکھ رہا تھا‘ ان کا یہ روپ میرے لیے بالکل نیا تھا۔میری جھجک دیکھ کر انہوں نے ایک گہری سانس لی اور بولے’’کچھ تو بولو یار۔۔۔مجھے پتا ہے تم رائٹرز کو کوئی اچھا لطیفہ یاد نہیں رہتا‘ کوئی بات نہیں‘ کوئی گندا لطیفہ ہی سنا دو‘‘۔میرے ماتھے پر پسینہ آگیا’’انکل ایسی بات نہیں‘ میں تو۔۔۔‘‘انہوں نے ایک قہقہہ لگایا اور کھانستے ہوئے بولے’’چلو پھر میں سناتا ہوں۔۔۔ایک دفعہ کا ذکر ہے ایک اُستاد نے شاگرد سے پوچھاکہ بیٹا توانائی کسے کہتے ہیں؟ تو پتا ہے اُس نے کیا جواب دیا؟‘‘۔میں نے اِس لٹے پٹے لطیفے کو ہزار دفعہ سننے کے باوجود جلدی سے کہا’’نہیں‘‘۔۔۔وہ چہکے’’شاگرد کہنے لگا کہ جس توے پر نائی بیٹھا ہواُسے توانائی کہتے ہیں‘‘۔ یہ کہتے ہی وہ بچوں کی طرح کھلکھلا کر ہنس پڑے‘ میں نے بھی ہنسنا شروع کر دیا۔صاف ظاہر ہورہا تھا کہ ان کی تنہائی ٹکریں مار مار کر باہر نکلنے کے راستے تلاش کر رہی ہے‘ آج شاید اُنہیں ایک چھوٹا سا راستہ مل گیا تھا۔

وہ مسلسل ہنسے چلے جارہے تھے‘ میں نے بھی اپنی ہنسی نہیں روکی اور ان کا ساتھ دیتا رہا۔اچانک دروازہ کھلا اور میرا دوست اندر داخل ہوا اور اندر کا منظر دیکھتے ہی اس کی آنکھیں پھیل گئیں‘ میں اور اُس کے والد صاحب ہاتھوں میں سگریٹ دبائے قہقہے لگا رہے تھے۔اُس نے شاید زندگی میں پہلی بار اپنے باپ کو ہنستے دیکھا تھا اس لیے مبہوت کھڑا تھا۔ کچھ دیر اس کی یہی کیفیت رہی‘ پھر اُس نے گھور کر میری طرف دیکھا اورسگریٹ بجھانے کا اشارہ کیا۔میں نے جلدی سے سگریٹ ایش ٹرے میں مسل دیا۔ اُس کے والد صاحب نے چونک کراپنے بیٹے کی طرف دیکھا جس کے چہرے پر مکمل سنجیدگی چھائی ہوئی تھی۔مجھے لگا جیسے وہ بیٹے سے بھیک مانگ رہے ہیں کہ مجھے مت اٹھانا۔ لیکن جواب کچھ اور ہی آیا‘ بیٹے نے گھمبیر آواز میں کہا’’ابو۔۔۔پلیز ! ڈاکٹر نے آپ کو سگریٹ پینے سے منع کیا ہے‘ آئیے میں آپ کو کمرے تک چھوڑ آؤں آپ ریسٹ کریں‘‘۔ باپ نے رحم طلب نظروں سے میری طرف دیکھا‘ میں کچھ کہنا چاہتا تھا لیکن الفاظ میرے حلق میں اٹک کر رہ گئے۔ میرے دوست نے اپنے باپ کو نہایت احترام سے اٹھایااور پورے ایٹی کیٹس کے ساتھ باہر لے گیا۔۔۔!
(تحریر گل نوخیز اختر )

خیرات

حضرت علی ہجویریؓ کا دربار لگا تھا‘ آپ درمیان میں تشریف فرما تھے اور مریدین آپ کے گرد حلقہ بنا کر بیٹھے تھے‘ ایک مرید نے ادب کے ساتھ عرض کیا ’’حضور اللہ تعالیٰ کی بارگاہ میں افضل ترین عبادت کیا ہے‘‘ حضرت داتا صاحب مسکرائے اور دیر تک اس شخص کی طرف دیکھتے رہے اور مسکراتے رہے۔
ہمارے نبیﷺ علم کی ترویج‘ علم کے پھیلاؤ کے اس طریقے کے موجد ہیں‘ ہمارے رسولﷺ روزانہ مسجد نبوی میں تشریف رکھتے تھے‘ صحابہؓ آتے تھے اور آپ ﷺکے گرد پروانوں کی طرح بیٹھ جاتے تھے‘ وہ سوال پوچھتے جاتے تھے اور اللہ کے رسول ﷺجواب دیتے جاتے تھے اور یوں علم ٹرانسفر ہوتا جاتا تھا‘ علم کی ترویج کا یہ سلسلہ رسول اللہ ﷺ کے وصال کے بعد بھی جاری رہا‘ خلفاء راشدین بھی روزانہ مسجد نبوی تشریف لے جاتے تھے‘ وہ بھی سنت کے مطابق وہاں بیٹھ جاتے تھے۔
لوگ آتے تھے‘ سوال کرتے تھے اور فہم و فراست کے وہ عظیم مینار بھی ان سوالوں کے جواب دیتے تھے‘ یہ روایت حضرت امام حسینؓ کی شہادت کے بعد مدینہ منورہ سے نکلی اور پورے عالم اسلام میں پھیل گئی‘ صحابہ اکرامؓ‘ آئمہ اکرام اور مشائخ حضرات دمشق‘ بصرہ‘ کوفہ‘ قاہرہ اور فلسطین کی بڑی مساجد میں بیٹھ جاتے تھے‘ یہ صبح اور رات دو وقت اپنے حجروں‘ اپنی درگاہوں کے دروازے عام لوگوں کے لیے کھول دیتے تھے‘ علم کے پیاسے دور دور سے آتے تھے‘ سوال کرتے تھے اور اپنی پیاس بجھا کر واپس چلے جاتے تھے‘ وقت تبدیل ہوتا رہا‘ ادوار بدلتے رہے لیکن علم کے پھیلاؤ کا یہ سلسلہ جاری رہا یہاں تک کہ اولیاء کرام کا زمانہ آ گیا۔
صوفیاء کرام نے علم کی اس روایت کی مشعل تھام لی جس کے بعد سمرقند‘ بخارا‘ خیوا‘ فرغانہ‘ قونیہ‘ اصفہان‘ ہرات‘ استنبول‘ بغداد‘ قاہرہ‘ قرطبہ‘ اوچ شریف‘ اجمیر شریف اور دہلی دینی اور دنیاوی علوم کے مراکز بن گئے‘ لوگ سیکڑوں میل کا سفر طے کر کے آتے‘ اپنی پسند کے صوفی کی درگاہ پر بیٹھتے اور جب تک تھک نہ جاتے علم حاصل کرتے رہتے‘ انھیں ان درگاہوں پر رہنے کی جگہ بھی ملتی‘ کھانا بھی ملتا اور علم کے بحر بیکراں سے لطف اندوز ہونے کا موقع بھی ملتا تھا۔ یہاں تک کہ علم پھیلانے کا یہ سلسلہ باقاعدہ ادارہ بن گیا‘ فاطمی بادشاہ المعزالدین اللہ کے حکم پر 970ء میں قاہرہ میں اسلامی دنیا کی پہلی یونیورسٹی جامعہ الازہر کی بنیاد رکھ دی گئی۔
یہ یونیورسٹی علم کی اس ترویج کا پہلا وارث تھی‘ اسلامی دنیا کے تمام بڑے مدبر‘ محقق اور عالم جامعہ الازہر سے منسلک ہو گئے‘ یہ لوگ دن بھر طالب علموں کو پڑھاتے تھے‘ طالب علم عصر کے بعد ہاسٹلوں میں چلے جاتے تھے‘ اساتذہ گھریلو ذمے داریاں پوری کرنے کے لیے چند گھنٹے گھر جاتے تھے اور عشاء کی نماز کے بعد دوبارہ جامعہ آ جاتے تھے‘ یہ اپنی اپنی کلاس میں بیٹھ جاتے تھے اور پھر یونیورسٹی کے دروازے عام لوگوں کے لیے کھول دیے جاتے تھے۔
قاہرہ کے عام لوگ‘ راج مزدور‘ دکاندار‘ غلام‘ کنیزیں اور مسافر آتے تھے‘ تاریخ کے عظیم اساتذہ کی کلاسوں میں بیٹھتے تھے‘ سوال کرتے تھے‘ جواب لیتے تھے اور اپنے باطن کو علم کے ٹھنڈے پانیوں سے سیراب کر کے واپس چلے تھے‘ جامعہ الازہر کی یہ عظیم روایت آج تک قائم ہے‘ مجھے 2012ء میں قاہرہ جانے کا اتفاق ہوا‘ میں نے عشاء کی نماز مسجد حسینیہ میں ادا کی اور میں نماز کے بعد جامعہ الازہر کے اولڈ کیمپس میں داخل ہو گیا‘ اساتذہ کے حجرے آباد تھے‘ پروفیسر حضرات قالینوں پر بیٹھے تھے اور ان کے گرد قاہرہ شہر کے عام لوگوں‘ گھریلو خواتین اور بچوں کا مجمع لگا تھا۔
لوگ سوال کر رہے تھے اور پروفیسر ان کے جواب دے رہے تھے‘ میں بھی چپ چاپ ایک حجرے میں بیٹھ گیا‘ مجھے عربی نہیں آتی تھی لیکن میں نے لوگوں کے اشاروں اور پروفیسروں کی باڈی لینگویج سے اندازہ لگا لیا یہ سیاسیات کی کلاس ہے اور لوگ حسنی مبارک کا مستقبل جاننے کی کوشش کر رہے ہیں‘ التحریر اسکوائر کا دھرنا ختم ہو چکا تھا‘ حسنی مبارک اقتدار سے فارغ ہو چکے تھے‘ وہ اس وقت جیل میں پڑے تھے لیکن وہ عوام کے سوالوں میں ابھی تک آزاد تھے‘ میں دیر تک وہاں بیٹھا رہا‘ میری طرف کسی نے کوئی توجہ نہ دی‘ یہ جامعہ الازہر کی ہزار سالہ روایت ہے‘ لوگ کسی اجنبی کی طرف توجہ نہیں دیتے‘ وہ صرف پروفیسر کی طرف دیکھتے ہیں اور پروفیسر صرف سوال پر توجہ دیتا ہے۔
یہ روایت صرف جامعہ الازہر تک محدود نہیں تھی بلکہ یہ روایت خوارزم شاہ کے دور میں خیوا‘ سلجوقیوں کے دور میں قونیہ‘ امیر تیمور کے دور میں سمر قند‘ بخارہ اور شہر سبز اور مغلوں کے دور میں ہندوستان میں بھی موجود تھی‘ امام بخاری ہوں یا پھر امام غزالی وہ بھی شام کے وقت عوامی ہو جاتے تھے اور عام راہ چلتے غلام اور کنیزیں ان کا راستہ روک کر کھڑی ہو جاتی تھیں‘ ہندوستان میں اولیاء کرام یہ روایت نبھاتے رہے‘ حضرت شیخ سلیم چشتی ہوں‘ خواجہ معین الدین چشتی ہوں‘ قطب الدین بختیار کاکی ہوں یا پھر حضرت خواجہ نظام الدین اولیاء ہوں یہ تمام اولیاء کرام یونیورسٹیوں کی حیثیت رکھتے تھے‘ یہ دن کو اپنے شاگردوں کی پیاس بجھاتے تھے اور شام کے وقت خود کو جنرل پبلک کے لیے وقف کر دیتے تھے۔
میں نے آج کے دور میں یہ روایت نیویارک کی کولمبیا یونیورسٹی میں دیکھی‘ یہ یہودیوں کی یونیورسٹی کہلاتی ہے لیکن اس کے دروازے دنیا بھر کے پیاسوں کے لیے کھلے رہتے ہیں‘ آپ کوئی بھی ہیں‘ آپ کسی بھی ملک‘ نسل اور رنگ سے تعلق رکھتے ہیں آپ کولمبیا یونیورسٹی کے گیٹ سے داخل ہوں اور کسی بھی کلاس میں بیٹھ جائیں‘ آپ سے کوئی شخص نہیں پوچھے گا‘ آپ یونیورسٹی میں مہینوں پڑھتے رہیں‘ آپ سال دو سال کلاسز اٹینڈ کرتے رہیں انتظامیہ آپ سے سوال کرے گی اور نہ ہی ساتھی طالب علم آپ سے پوچھیں گے ’’جناب آپ کون ہیں اور آپ روزانہ کیوں آ جاتے ہیں‘‘۔
بس آپ کے لیے چند چیزوں کا خیال رکھنا ضروری ہے مثلاً آپ امتحان نہیں دے سکیں گے‘ آپ کو ڈگری نہیں ملے گی اور آپ استاد اور طالب علموں کو ڈسٹرب نہیں کریں گے وغیرہ وغیرہ۔ آپ اگر فارغ ہیں‘ آپ اگر امریکا جا سکتے ہیں اور آپ اگر ایک آدھ ماہ کے اخراجات برداشت کر سکتے ہیں تو میرا مشورہ ہے آپ نیویارک جائیں‘ کولمبیا یونیورسٹی کے قریب کرائے پر فلیٹ لیں‘ دنیا کے بہترین اساتذہ اور نوبل انعام یافتہ اسکالرز کی کلاسز میں بیٹھ جائیں‘ آپ ان سے جدید ترین علم سیکھیں اور آپ عالم فاضل ہو جائیں‘ کولمبیا کا جے اسکول (جرنلزم ڈیپارٹمنٹ) اور اسکول آف پبلک آفیئرز پوری دنیا میں مشہور ہیں‘ آپ ان دونوں ڈیپارٹمنٹ سے بہت کچھ سیکھ سکتے ہیں۔
اسکول آف پبلک افیئرز دنیا بھر کے دانشوروں‘ صدور‘ وزراء اعظم اور وزراء کو دعوت خطاب دیتا رہتا ہے‘ دنیا کے مختلف ملک اسکول میں نمائش بھی لگاتے رہتے ہیں‘ آپ وہاں کے مہمانوں اور نمائشوں سے بھی لطف اندوز ہو سکتے ہیں‘ یونیورسٹی دنیا بھر کے ایکسپرٹس کو بھی بھرتی کرتی رہتی ہے‘ یہ لوگ پروفیسر آف پریکٹس کہلاتے ہیں‘ یہ پی ایچ ڈی نہیں ہوتے‘ یہ اپنے اپنے شعبوں کے ایکسپرٹ ہوتے ہیں اور یونیورسٹی ان کا پروفائل دیکھ کر انھیں پروفیسر بھرتی کر لیتی ہے‘ یہ طالب علموں کو وہ سب کچھ سکھاتے ہیں جو انھیں روایتی استاد نہیں سکھا سکتے مثلاً مجھے کولمبیا یونیورسٹی میں تبت کا ایک ترکھان پروفیسر ملا۔
وہ شخص پچاس سال اخروٹ کی لکڑی کا فرنیچر بناتا رہا‘ یونیورسٹی نے اس کی مہارت اور تجربے کی بنیاد پر اسے پروفیسر منتخب کر لیا‘ وہ ان دنوں تعمیرات کے شعبے کے طالب علموں کو اخروٹ کی لکڑی میں کندہ کاری کا طریقہ سکھارہا تھا۔کولمبیا یونیورسٹی کی یہ دونوں روایات قابل تقلید ہیں‘ ہمیں بھی اپنی یونیورسٹیوں‘ میڈیکل کالجز اور انجینئرنگ ڈیپارٹمنٹ عام لوگوں کے لیے کھول دینے چاہئیں‘ یہ علم کے سمندر ہیں‘ یہ ہر شخص کے لیے عام ہونے چاہئیں‘ لوگ آئیں اور پروفیسروں کی کلاسیں اٹینڈ کریں۔
ہمیں یونیورسٹیوں میں بھی مختلف شعبوں کے ماہرین کو پروفیسر آف پریکٹس کی حیثیت سے بھرتی کر لینا چاہیے‘ یہ لوگ طالب علموں کو وہ پریکٹیکل علم سکھائیں گے جو کتابوں کے ذریعے ممکن نہیں‘ میں موضوع کی طرف واپس آتا ہوں۔ حضرات داتا گنج بخش? بھی شام کے وقت عام مریدوں کے لیے درس و تدریس کا اہتمام کرتے تھے‘ لوگ آتے تھے‘ سوال کرتے تھے اور علم کی پیاس بجھاتے تھے‘ آپ ایک روز مریدوں کے درمیان بیٹھے تھے‘ لاہور کا ایک مرید آیا اور آپ سے پوچھا ’’حضور اللہ تعالیٰ کی بارگاہ میں افضل ترین عبادت کیا ہے‘‘ حضرت داتا صاحب نے مسکرا کر دیکھا اور فرمایا ’’خیرات‘‘۔
اس شخص نے دوبارہ عرض کیا ’’اور افضل ترین خیرات کیا ہے؟‘‘ آپ دیر تک سر دھنتے رہے اور پھر فرمایا ’’معاف کر دینا‘‘ آپ چند لمحے رک کر دوبارہ گویا ہوئے ’’دل سے معاف کر دینا دنیا کی سب سے بڑی خیرات ہے اور اللہ تعالیٰ کو یہ خیرات سب سے زیادہ پسند ہے‘ آپ دوسروں کو معاف کرتے چلے جاؤ‘ اللہ آپ کے درجے بلند کرتا چلا جائے گا‘‘۔
حضرت داتا گنج بخش نے درست فرمایا تھا‘ تصوف کی یونیورسٹی میں صوفی کب صوفی بنتا ہے؟ یہ اس وقت صوفی بنتا ہے جب اس کا دل نفرت‘ غصے اور انتقام کے زہر سے پاک ہو جاتا ہے‘ جب یہ معافی کے ڈٹرجنٹ سے اپنے دل کی ساری کدورتیں دھو لیتا ہے‘ اہل تصوف کے بارے میں کہتے ہیں‘ قاتل کو صوفی کا خون تک معاف ہوتا ہے اور یہ معافی کی وہ خیرات ہے جو صوفیاء اکرام دے دے کر بلند سے بلند ہوتے چلے جاتے ہیں‘ ان کے درجے بڑھتے چلے جاتے ہیں‘ میرا بابا کہتا تھا‘ تم معاف کرنا سیکھ لو‘ تمہیں کسی استاد کی ضرورت نہیں رہے گی‘ سارے حجاب اورسارے نقاب اتر جائیں گے۔ میرا بابا اور حضرت داتا گنج بخش? دونوں درست فرماتے تھے۔

لڑکی ہی کیوں

تحریر:ساحرہ ظفر

اُف 10 منٹ ہو گئے ہیں آج تو چا چا کسی صورت میں بھی میرا انتظار نہیں کریں گے  میں  جلدی جلدی   کالج کی تیاری کرنے کی کوشش کرنے لگی    تاکہ کالج وقت پر پہنچ سکوں سوچا آج مامی زیتون کی گلی سے نکل جاؤں گی جب تک رفیق چاچا  سٹاپ تک آتے میں گاڑی تک پہنچ جاؤں گی کیونکہ گلی  سے سٹاپ تک کا راستہ کم تھا جب کہ  ہائی وے روڈ  کافی دور پڑتی تھی اکژ جب بھی مجھے اُٹھنے میں دیر ہوتی  تو میں جلدی جلدی میں  سڑک

تک پہنچنے کے لیے  سب سے  کم وقت لینے  والا راستہ گلی سے ہو کر ہی گزر کر جاتی۔

میں نے جلدی جلدی منہ  ہاتھ دھویا اور یونیفارم پہنا

اماں بار بار  ایک ہی بات دُہرائے جا رہی تھی صبح جلدی اُٹھتی ہوں اس لیے کہ میرے بچے ناشتہ کر کے جائیں لیکن  بچے ہیں ان کو پرواہ ہی نہیں سب سے بڑی کا یہ حال ہے کوئی دن ایسا نہیں جب اسے کالج جانے میں دیر نہ ہوئی ہو اماں تو بس ایسے بو لی جا رہی تھی جیسے فون بند ہونے کی صورت یا سنگنل نہ ہونے کی صورت میں  خاتون بولنا شروع کر دیتی ہے کہ ہم معذرت خواہ ہیں کہ اس وقت مطلوبہ نمبر سے جواب موصول نہیں ہو رہا ہے۔اماں بھی بس ذرا سا کسی کا  وقت کا سنگنل آگے پیچھے دیکھتی تو   یا   کوئی گھر کا نیٹ ورک ٹھیک کام نہ کر رہا ہوتا تو بغیر بٹن دبائے اپنی ریکارڈنگ آن کر دیتی  اور جب تک ہم سکول کالج روانہ نہیں ہوتے تب تک چلتی رہتی

خیر اماں اللہ حافظ  آگے بہت دیر ہو گئی ہے

ارے۔۔۔۔۔۔

کہاں چل دی میں تمھیں خود چھوڑنے جاؤں گی اکیلی لڑکی اللہ اللہ گلی تم نے دیکھی ہے نا  اور جانتی ہو نا زیتون کی اپنی گلی ہونے کے باوجود اُس کی بیٹی کی ذلت کی کہانیاں  پورا محلہ صبح شام بیان کر رہا ہو تا ہے  تم تو جانتی ہو تمھارے خاندان میں تقریبا ہر  تیسری لڑکی کو رسوائی کی وجہ سے گھر بٹھا دیا ہے ۔

اماں  2 منٹ میں تقریبا 16 لڑکیوں کے نام لے چکی تھی  میں  بغیر غصہ کیے ایک لمحے کے لیے رُکی اور  دماغ پرچڑھتے خون کو مشکل سے کنٹرول کیے ہوئے اماں سے پوچھا آپ نے 2 منٹ کے اندر اتنی لڑکیوں کے نام گنوا دیے یعنی سترواں میرا نام شامل کر لیں

لیکن آپ نے یہ نہیں بتایا جن کی ذلت ہو گئی یا اگر آپ کے مطابق اکیلے جانے سے میری بھی ہوگی تو کس کی وجہ سے ہو گی کیا لڑکیاں دیوار کے ساتھ گلی کے ساتھ یا پھر اپنے آپ کے ساتھ خراب ہو جاتی ہیں ۔

اماں ایک دم غصے سے بولی یعنی اب تم مجھے سمجھاؤ گی مجھ سے سوال کرو گی میری بات کو رد کرو گی

ماں جی میں ایسا ویسا کچھ نہیں کہہ  رہی ہوں صرف اپنی یادہانی کے لیے پوچھ رہی ہوں امی  آئیں بائیں شائیں کرنے کے بعد بولی  ظاہر ہے لڑکے کے ساتھ ہی

جی ماں جی بالکل لڑکے  ماں جی آپ ان سترہ لڑکیوں کی بجائے اُن سترہ لڑکوں کا  بھی نام لے سکتی تھی جنہوں نے ان لڑکیوں کو رُسوا کیا ہے معاشرے میں بدنام کیا ہے لیکن نہیں آپ نے معاشرے کی روایت کو آگے بڑھاتے ہوئے ہمیشہ سے  یہی کہا کہ فلاں لڑکی کی طرح یہ وہ۔

کالج جانے کی بجائے میں  نے چھٹی کرنا ہی بہتر سمجھا اور  بے جان جسم کے ساتھ آج اپنے آپ کو بہت ہی اکیلا اور غلیظ سمجھ رہی تھی  اس میں میری اماں کی نہیں بلکہ معاشرے کو ایک ہی جملہ رٹا دیا ہے کہ لڑکیاں بہت خراب ہیں لیکن کس کے ساتھ  اور کس لیے اس بات کا جواب جاننے اور ہونے کے باوجود نہیں دیا جاتا کیونکہ سوسائٹی کے مطابق لڑکے  کو کوئی فرق نہیں پڑتا کیونکہ بدنامی ہمیشہ لڑکی کی ہی ہوتی ہے ۔

اگر ہر ماں اپنے بیٹے کو گھر سے نکلنے سے پہلے  ایک لڑکی کی طرح  کا رویہ اختیار کرے تو یقین مانے پچاس فیصد رسوائی کا نام ہی مٹ جائے۔

 

زندگی تمہاری محتاج نہیں

آج وہ اپنی تمام مصروفیات کو پس پشت ڈال کر درویش کے پاس پہنچا تھا….. جب اس کی باری آئی تو اس نے دونوں ہاتھوں سے مصافحہ کیا بلاتمہید درویش سے دعا کرنے کو کہا …… درویش نے نوجوان کے کاندھے پر ہاتھ رکھا اور بڑے جذب سے دُعا دی:
“اللہ تجھے آسانیاں بانٹنےکی توفیق عطا فرمائے”
دعا لینے والے نے حیرت سے کہا:
“حضرت! الحمد للہ ہم مال پاک کرنے کے لیے ھر سال وقت پر زکاۃ نکالتے ہیں، بلاؤں کو ٹالنے کے لیے حسبِ ضرورت صدقہ بھی دیتے ہیں…. اس کے علاوہ ملازمین کی ضرورتوں کا بھی خیال رکھتے ہیں، ہمارے کام والی کا ایک بچہ ہے، جس کی تعلیم کا خرچہ ہم نے اٹھا رکھا ہے، الله کی توفیق سے ہم تو کافی آسانیاں بانٹ چکے ہیں …..

درویش تھوڑا سا مسکرایا اور بڑے دھیمے اور میٹھے لہجے میں بولا:
“میرے بچے! سانس، پیسے، کھانا … یہ سب تو رزق کی مختلف قسمیں ہیں، اور یاد رکھو “رَازِق اور الرَّزَّاق” صرف اور صرف الله تعالٰی کی ذات ہے…. تم یا کوئی اور انسان یا کوئی اور مخلوق نہیں ….. تم جو کر رہے ہو، اگر یہ سب کرنا چھوڑ بھی دو تو الله تعالٰی کی ذات یہ سب فقط ایک ساعت میں سب کو عطا کر سکتی ہے ، اگر تم یہ کر رہے ہو تو اپنے اشرف المخلوقات ہونے کی ذمہ داری ادا کر رہے ہو.”

درویش نے نرمی سے اس کا ہاتھ اپنے دونوں ہاتھ میں لیا اور پھر بولا:
“میرے بچے! آؤ میں تمہیں سمجھاؤں کہ آسانیاں بانٹنا
کسے کہتے ہیں…..

*- کبھی کسی اداس اور مایوس انسان کے کندھے پے ہاتھ رکھ کر، پیشانی پر کوئی شکن لائے بغیر ایک گھنٹا اس کی لمبی اور بے مقصد بات سننا….. آسانی ہے!

*- اپنی ضمانت پر کسی بیوہ کی جوان بیٹی کے رشتے کے لیے سنجیدگی سے تگ ودو کرنا …. آسانی ہے!

*- صبح دفتر جاتے ہوئے اپنے بچوں کے ساتھ محلے کے کسی یتیم بچے کی اسکول لے جانے کی ذمہ داری لینا…. یہ آسانی ہے!

*- اگر تم کسی گھر کے داماد یا بہنوئی ہو تو خود کو سسرال میں خاص اور افضل نہ سمجھنا… یہ بھی آسانی ہے!

*- غصے میں بپھرے کسی آدمی کی کڑوی کسیلی اور غلط بات کو نرمی سے برداشت کرنا …. یہ بھی آسانی ہے!

*- چاۓ کے کھوکھے والے کو اوئے کہہ کر بُلانے کی بجائے بھائی یا بیٹا کہہ کر بُلانا….. بھی آسانی ہے!

*- گلی محلے میں ٹھیلے والے سے بحث مباحثے سے بچ کر خریداری کرنا….. یہ آسانی ہے!

*- تمہارا اپنے دفتر، مارکیٹ یا فیکٹری کے چوکیدار اور چھوٹے ملازمین کو سلام میں پہل کرنا، دوستوں کی طرح گرم جوشی سے ملنا، کچھ دیر رک کر ان سے ان کے بچوں کا حال پوچھنا….. یہ بھی آسانی ہے!

*- ہسپتال میں اپنے مریض کے برابر والے بستر کے انجان مریض کے پاس بیٹھ کر اس کا حال پوچھنا اور اسے تسّلی دینا ….. یہ بھی آسانی ہے!

*- ٹریفک اشارے پر تمہاری گاڑی کے آگے کھڑے شخص کو ہارن نہ دینا جس کی موٹر سائیکل بند ہو گئی ہو …… سمجھو تو یہ بھی آسانی ہے!”

درویش نے حیرت میں ڈوبے نوجوان کو شفقت سے سر پر ھاتھ پھیرا اور سلسلہ کلام جارے رکھتے ہوئے دوبارہ متوجہ کرتے ہوئے کہا:

“بیٹا جی! تم آسانی پھیلانے کا کام گھر سے کیوں نہیں شروع کرتے؟

*- آج واپس جا کر باھر دروازے کی گھنٹی صرف ایک مرتبہ دے کر دروازہ کُھلنے تک انتظار کرنا ،

*- آج سے باپ کی ڈانٹ ایسے سننا جیسے موبائل پر گانے سنتے ہو ،

*- آج سے ماں کے پہلی آواز پر جہاں کہیں ہو فوراً ان کے پہنچ جایا کرنا…. اب انھیں تمہیں دوسری آواز دینے کی نوبت نہ آئے ،

*- بہن کی ضرورت اس کے تقاضا اور شکایت سے پہلے پوری کریا کرو ،

*- آیندہ سے بیوی کی غلطی پر سب کے سامنے اس کو ڈانٹ ڈپٹ مت کرنا ،

*- سالن اچھا نہ لگے تو دسترخوان پر حرف شکایت بلند نہ کرنا ،

*- کبھی کپڑے ٹھیک استری نہ ہوں تو خود استری درست کرلینا ،

میرے بیٹے! ایک بات یاد رکھنا زندگی تمہاری محتاج نہیں ، تم زندگی کے محتاج ہو ، منزل کی فکر چھوڑو، اپنا اور دوسروں کا راستہ آسان بناؤ ، ان شاء الله تعالٰی منزل خود ہی مل جائے گی ….!!!!

آئیں! صدقِ دِل سے دُعا کریں کہ الله تعالٰی ہم سب کو آسانیاں بانٹنے کی توفیق عطا فرمائے، آمین ثم آمین یا رب العالمین.
:::::: نامعلوم مصنف کے لئیے، الله تعالىٰ سے بہت ساری دعائیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ !

حضرت جگر مرادآبادی

حضرت جگر مرادآبادی مستی کے عالم میں کئی کئی مہینوں گھر سے باہر رہتے تھے۔ ایک دن جو بے قراری بڑھی تو اُن کے قدم ایک طوائف کے گھر پہنچ گئے۔

اُس کا نام روشن فاطمہ تھا۔ حسین، شوخ، چنچل، کمسن۔

“حضور کی تعریف؟ ” اُس نے پوچھا۔

جگر آنکھیں جُکھائے اُس کے سامنے کھڑ ے تھے۔ شاید نگاہ بھر کے اُسے دیکھا تک نہیں تھا۔ جواب میں دو شعر پڑھ دیے۔

سراپا آرزو ہوں، درد ہوں، داغِ تمنا ہوں
مجھے دنیا سے کیا مطلب کہ میں آپ اپنی دنیا ہوں

کبھی کیفِ مجسم ہوں، کبھی شوقِ سراپا ہوں
خدا جانے کس کا درد ہوں، کس کی تمنا ہوں

“سبحان اللہ ” طوائف کے منہ سے بے اختیار نکلا۔
بے چارے عاشق معلوم ہوتے ہیں۔
جگر نے پھر ایک شعر پڑھ دیا.

۔ُمجھی میں عشق کا عالم، مجھی میں عشق کی دنیا
نثار اپنے پہ ہو جاؤں اگر سو بار پیدا ہوں“

حضور اس غریب خانے کو کیسے رونق بخشی؟

”کچھ ہمیں جانتے ہیں لطف تر ے کوچے کاورنہ
پھرنے کو تو مخلوقِ خدا پھرتی ہے

اس شعر کا سُننا تھا کہ روشن فاطمہ پھڑک گئی، طوائف تھی، چہرہ شناس تھی، سُخن فہم تھی۔ بار بار اس شعر کو پڑھتی تھی اور داد دیتی تھی۔
“میں اب تک کیوں آپ سے محروم رہی؟ کیا آپ اس شہر کے نہیں ہیں؟ ہیں تو یہاں کب سے ہیں؟ اور اب تک یہاں کیوں نہیں آئے؟ ”

جگر یہ کہتے ہوئے اُس کے سامنے بیٹھ گئے۔

نہ پوچھ دہر میں کب سے میں اس طرح خانہ خراب ہوں
جو نہ مٹ سکا وہ طلسم ہوں، جو نہ اُٹھ سکا وہ حجاب ہوں”

دیکھئے میں پاگل ہوجاؤں گی۔ اللہ کے واسطے آپ اپنا نام تو بتائیے آپ ہیں کون ؟

”دیکھا تھا کل جگر کو سرِ راہِ میکدہ
اس درجہ پی گیا تھا کہ نشے میں چُور تھا

وہ پھر بھی نہیں سمجھی۔ شاید اُس نے جگر کا نام سُنا ہی نہیں تھا یا پھر وہ یہ سمجھی کہ وہ یہاں کہاں آئیں گے، کوئی اورجگر ہوگا۔اسی وقت ایک مہمان اور آ گیا۔ یہ جگر کا واقف کارتھا۔ دن کا وقت تھا اس لیے محفل گرم نہیں ہوئی تھی۔
” جگر صاحب مجھے کسی نے بتایا کہ آپ یہاں آئے ہیں۔”

پھر وہ شخص روشن فاطمہ سے مخاطب ہوا۔
” آپ واقف ہیں ان سے؟ مشہور شاعر جگر مرادابادی ہیں۔”
“آؤ بھئی چلیں میں نے بہت زحمت دے لی انہیں” جگر نے کہا۔
“ایسے تو نہیں جانے دوں گی۔” روشن فاطمہ نے جگر کا ہاتھ تھام لیا۔ ” یہ طوائف کا کوٹھا ہے یہاں وہ آتا ہے جس کی جیب میں مال ہوتا ہے۔”
جگر نے شیروانی کی جیب میں ہاتھ ڈالا اور جتنے نوٹ ہاتھ میں آئے اُس کے سامنے رکھ دیے۔
” نہیں حضور قیمت تو گاہک کی حیثیت دیکھ کر طے ہوتی ہے۔ ایسے نوٹ تو مجھے کوئی بھی جاہل سیٹھ د ے سکتا ہے۔ آپ تو مجھےغزل سُنائیں۔”
” شعر سمجھتی ہو؟ ”
“حضور پہلے سمجھتی ہوں پھر گاتی ہوں۔ ”
ابھی روشن کا جملہ ختم نہیں ہوا تھا کہ جگر کی پُرسوز آواز نے دن کو قیامت کا دن بنا دیا۔

کیا چیز تھی، کیا چیز تھی ظالم کی نظر بھی
اف کر کے وہیں بیٹھ گیا درد جگر بھی

کیا دیکھیں گے ہم جلوہ محبوب کہ ہم سے
دیکھی نہ گئی دیکھنے والے کی نظر بھی

واعظ نہ ڈرا مجھ کو قیامت کی سحر سے
دیکھی ہے ان آنکھوں نے قیامت کی سحر بھی

اس دل کے تصدق جو محبت سے بھرا ہو
اس درد کے صدقے جو ادھر بھی ہو ادھر بھی

ہے فیصلۂ عشق جو منظور تو اٹھیئے
اغیار بھی موجود ہیں حاضر ہے جگر بھی.

کیا آپ بھی شعر سناتے تھے جگر

مردم شماری

تحریر:ساحرہ ظفر

کسی بھی گھر کو چلانے کے لیے اُس کا بجٹ بنایا جاتا ہے اور بنانے سے پہلے گھر کا سربراہ یا بڑا  پہلے گھر کے افراد کو گنتا ہے تاکہ تمام افراد کو اُس کے پورے حقوق مل سکیں ساتھ ساتھ   لیڈر یہ فیصلہ کر سکے  کہ کس طرح اپنے ماتحت افراد کو بہتر سے بہتر سہولیات اور دیگر   ضروریات زندگی میسر کر سکے اس سارے حالات کو  مدنظر رکھتے ہوئے  ایک بہترین کنبہ اور معاشرہ تشکیل پاتا ہے  اور یہی معاشرہ کسی ملک یا قوم کی نمائندگی کرتا ہے۔

اس گننے کے عمل کو یعنی  کل آبادی کتنی ہے اس کو مردم شماری کا نام دیا جاتا ہے۔

کسی بھی ملک کی سمت کا درست تعین کرنے کے لیے سب سے پہلے اس بات کا  پتا ہونا  ضروری ہے کہ  اُس ملک میں بسنے والے باشندوں کی تعداد کیا ہے   پاکستان میں 15 مارچ سے مردم شماری کا آغاز ایک خوشا ئیند  اور اچھا اقدام ہےگو کہ  بہت ہی دیر یعنی 19 سال بعد   مردم شماری کا عمل شروع ہوا ہے ۔

مردم شماری کا عمل دو مراحل سے گزر کر پورا ہو گا جس میں  سب سے پہلے

مرحلے میں پنجاب کے 16 سندھ کے 8، خیبر پختونخوا کے7 اضلاع، فاٹا کی سات ایجنسیاں، بلوچستان کے 15، پاکستان کے زیر انتظام کشمیر اور گلگت بلستان کے پانچ پانچ اضلاع شامل ہیں۔

جبکہ دس دن کے وقفے کے بعد 25 اپریل سے  شروع ہونے والے دوسرے مرحلے میں پنجاب اور سندھ کے 21 21 اضلاع، خیبرپختونخوا کے 18، بلوچستان کے 17 اضلاع، وفاقی دارلحکومت اسلام آباد، پاکستان کے زیر انتظام کشمیر اور گلگت بلتستان کے پانچ پانچ اضلاع شامل ہیں۔

مردم شماری میں 118826 افراد پر مشتمل عملہ اور دو لاکھ فوجی اہلکار شامل ہیں۔

لیکن اس کے باوجو میری نظر میں اس کے چند  چیزیں  بہت اچھی ہیں اور کچھ چیزوں کو مزید بہتر کیا جا سکتا تھا مثال کے طور پر

مردم شماری کا عمل مزید بہتر اور وسیع بنانے کیے لیے گورنمنٹ کو 6 ماہ پہلے کام کرنا شروع کر دینا چاہیں تھا  مثلا  میڈیا میں ایک اشتہار 24 گھنٹے چلتا جس میں مردم شماری کے فوائد بتائے جاتے تاکہ گھر میں بیٹھے اُن لوگوں کی بہتر  رہنمائی ہو جاتی خاص طور پر وہ  لوگ جو پڑھے لکھے نہیں ہیں یا اُن کو فوائد نقصانات کا نہیں پتا وہ عملے کے گھر گھر جانے پر  زیادہ بہتر اور احسن طریقے سے گائیڈ کرتے بجائے اس کے وہ سیکورٹی کے ڈر سے دروازہ ہی نہ کھولیں۔

اس کے علاوہ تمام انسٹیوٹ میں بچوں کو  مردم شماری کے بارے میں بتایا جاتا تاکہ بچے گھر میں اپنے والدین کو اچھے طریقے سے سمجھا سکتے۔

حکومت پاکستان کو اپنے نصاب میں   مردم شماری کو شامل کرنے کی اشد ضرورت ہے  کہ  کیوں ضروری ہے اور نہ کی جائے تو کیا ہو گا۔

اس سارے عمل میں   حکومت پاکستان کے  9 سال کے التوا کے بعد ایک دفعہ پھر بھر پو ر طریقے سے مردم شماری اور خانہ شماری کا آغاز کر دیا ہے  جو ریاست کے لیے ایک اچھا اور بہتری کی طرف جانے کا احسن قدم ہے میں اور آپ ہم سب مل کر پورا تعاون کریں گے  مردم شماری کے عملے کو بہتر رہنمائی کے ساتھ ساتھ درست معلومات دیں تاکہ ملک  و قوم کو  ہم   درست  سمت کی طرف منحصر کر سکیں۔