Latest Posts

Vision 21

A Company Registered under Section 42 of Companies Ordinance 1984. Corporate Universal Identification No. 0073421

Vision 21 is Pakistan based non-profit, non- partisan Socio-Political organisation. We work through research and advocacy. Our Focus is on Poverty and Misery Alleviation, Rights Awareness, Human Dignity, Women empowerment and Justice as a right and obligation.

We act and work side by side with the deprived and have-nots.

We invite you to join us in this mission. We welcome your help. We welcome your comments and suggestions. If you are interested in writing on Awaam, please contact us at: awaam@thevision21.org

Awaam      by   Vision21

↑ Grab this Headline Animator

Increasing Divorce Rates In Pakistan Is An Issue That Needs To Be Addressed

Posted on

Increasing Divorce Rates In Pakistan Is An Issue, Should Be Addressed - Parhlo.com

Pakistan is a country where marriage is considered sacred, due to the religion of choice, which is Islam. Islam teaches Muslims to not opt the way of divorce and work to rebuild the relation between husband and wife. However, the increasing rate of divorces in Pakistan is an alarming issue.

According to a research done in one of the districts of Pakistan, the rate of divorce was higher than the number of love marriages. Many hold the opinion that the rate of divorce is higher in love marriages due to the excelling expectations, while on the other hand, people think that the chances of divorce are higher in arranged marriages.

Let us shed some light on the most prominent reasons that lead to divorce in Pakistan and their consequences

DOMESTIC ABUSE AND PATRIARCHY

One of the leading reasons for the increasing figures of divorce in Pakistan is the longstanding domestic abuse. In a patriarchal society, such as in Pakistan, the men dominate the women  in more than one manner. Women are believed to be mannequins that must bare and adhere to what ever is thrown their way by their counterparts. This leads to domestic abuse, in the form of verbal, physical and mental torture. Thus, forcing the woman to seek separation or divorce from her husband.

FINANCIAL CONDITIONS

Increasing Divorce Rates In Pakistan Is An Issue, Should Be Addressed - Parhlo.com

Financial conditions and economic irregularity also plays a promiscuous part in divorce. In Pakistan, mostly, the man is the only breadwinner of the family. This case mixed with at least 5-6 children burdens the economic system of the family and also decreases the wants and the wishes of the wife and children. If the girl/woman is not used to such a downgrade, she seeks divorce and walks out. On the other hand, if the woman starts working, this leads us to the next category of reason.

TRUST DEFICIT AND INFIDELITY

One of the gravest most reasons for divorce in Pakistan, mostly in the middle-class, where both men and women (husbands and wives) are working, is the absence of trust. Long hours in the office or outside the house lead to a marginal trust deficit and this takes shape of infidelity (proven or not). It is said that trust is the base of a relationship and without trust, no relationship can prosper. Same is the case when the relationship is marriage. Also, some couples opt for istekhara that does not always work out well for them.

FORCED MARRIAGES (ARRANGED MARRIAGE)

Increasing Divorce Rates In Pakistan Is An Issue, Should Be Addressed - Parhlo.com

The biggest drawback of arranged marriage is divorce. A sub-category of arranged marriage is often a forced marriage, where the girl or the boy did not want to get married to the particular person but were forced-in by the family. Such forced marriages do not last long, usually. Either the boy or the girl has their heart elsewhere and this overshadows everything else and affects the marriage in a very negative sense, resulting in separation or divorce. However, some might argue that love-marriages produce more divorces than arranged ones.

INTERFERENCE OF FAMILY AND FRIENDS

If a couple is facing troubled waves in their marriage, friends and family almost think of it as their duty to step in, which is always a good thing. However, extra interference and involvement instead of doing good, further harms the cause. This includes harsh words, taunts, and motives fed to the weakened tie between the couple – resulting in divorce.

CONSEQUENCES AND PREVENTION

It is for all to know that divorce is not part of a game, or cannot be considered or tied to only the couple. Divorce is not just the end of a relationship, but also the end of a family. As for the consequences, more than the husband and the wife, it is the children that suffer the most. They either get to stay with their father or their mother, it cannot be both ways, and so to know, a child does need both. With time, the man and the woman, both realize their mistake and till then, it’s too late. Then comes different methods of fixing the broken/ended marriage, which too, are not that attractive.

However, with will and sensibility, a faux-pas such as divorce can be stopped. The first and foremost element is talking the issue out. Talk as much as you can and share your feelings – communication is key (listening as well). If the problem pertains, try giving each other chances and situations to come out of the tough scenario. Do not let families get so involved that they become the decision makers in your PERSONAL matter and force you into the divorce emotionally. Remember, divorce should be given with a sound mind instead of a quick-forced-ill-tempered three-word release clause.

Couples with constant problems should also opt for counseling and couples’ therapy to seek a solution to their failing marriage, instead of seeking an end. Here’s to hoping that the bonds of marriages in Pakistan remain strong.

مکہّ میں ابوسفیان بہت بے چین تھا

 

” آج کچھ ھونے والا ھے ” ( وہ بڑبڑایا ) اسکی نظر آسمان کی طرف باربار اٹھ رھی تھی ۔

اسکی بیوی ” ھندہ ” جس نے حضرت امیر حمزہ کا کلیجہ چبایا تھا اسکی پریشانی دیکھ کر اسکے پاس آگئ تھی

” کیا بات ھے ؟ کیوں پریشان ھو ؟ ”

” ھُوں ؟ ” ابوُ سُفیان چونکا ۔ کُچھ نہیں ۔۔ ” طبیعت گھبرا رھی ھے میں ذرا گھوُم کر آتا ھوُں ” وہ یہ کہہ کر گھر کے بیرونی دروازے سے باھر نکل گیا

مکہّ کی گلیوں میں سے گھومتے گھومتے وہ اسکی حد تک پہنچ گیا تھا
اچانک اسکی نظر شہر سے باھر ایک وسیع میدان پر پڑی ،
ھزاروں مشعلیں روشن تھیں ، لوگوں کی چہل پہل انکی روشنی میں نظر آرھی تھی
اور بھنبھناھٹ کی آواز تھی جیسے سینکڑوں لوگ دھیمی آواز میں کچھ پڑھ رھے ھوں
اسکا دل دھک سے رہ گیا تھا ۔۔۔
اس نے فیصلہ کیا کہ وہ قریب جاکر دیکھے گا کہ یہ کون لوگ ھیں
اتنا تو وہ سمجھ ھی چکا تھا کہ مکہّ کے لوگ تو غافلوں کی نیند سو رھے ھیں اور یہ لشکر یقیناً مکہّ پر چڑھائ کیلیئے ھی آیا ھے
وہ جاننا چاھتا تھا کہ یہ کون ھیں ؟
وہ آھستہ آھستہ اوٹ لیتا اس لشکر کے کافی قریب پہنچ چکا تھا
کچھ لوگوں کو اس نے پہچان لیا تھا
یہ اسکے اپنے ھی لوگ تھے جو مسلمان ھوچکے تھے اور مدینہ ھجرت کرچکے تھے
اس کا دل ڈوب رھا تھا ، وہ سمجھ گیا تھا کہ یہ لشکر مسلمانوں کا ھے
اور یقیناً ” مُحمّد ﷺ اپنے جانثاروں کیساتھ مکہّ آپہنچے تھے ”
وہ چھپ کر حالات کا جائزہ لے ھی رھا تھا کہ عقب سے کسی نے اسکی گردن پر تلوار رکھ دی
اسکا اوپر کا سانس اوپر اور نیچے کا نیچے رہ گیا تھا
لشکر کے پہرے داروں نے اسے پکڑ لیا تھا
اور اب اسے ” بارگاہ محمّد ﷺ میں لیجا رھے تھے ”
اسکا ایک ایک قدم کئ کئ من کا ھوچکا تھا
ھر قدم پر اسے اپنے کرتوت یاد آرھے تھے
جنگ بدّر ، احد ، خندق ، خیبر سب اسکی آنکھوں کے سامنے ناچ رھی تھیں
اسے یاد آرھا تھا کہ اس کیسے سرداران مکہّ کو اکٹھا کیا تھا ” محمّد کو قتل کرنے کیلیئے ”
کیسے نجاشی کے دربار میں جاکر تقریر کی تھی کہ ۔۔۔۔
” یہ مسلمان ھمارے غلام اور باغی ھیں انکو ھمیں واپس دو ”
کیسے اسکی بیوی ھندہ نے امیر حمزہ کو اپنے غلام حبشی کے ذریعے شہید کروا کر انکا سینہؑ چاک کرکے انکا کلیجہ نکال کر چبایا اور ناک اور کان کاٹ کر گلے میں ھار بنا کر ڈالے تھے
اور اب اسے اسی محمّد ﷺ کے سامنے پیش کیا جارھا تھا
اسے یقین تھا کہ ۔۔۔
اسکی روایات کے مطابق اُس جیسے ” دھشت گرد ” کو فوراً تہہ تیغ کردیا جاۓ گا ۔
اُدھر ۔۔۔۔
” بارگاہ رحمت للعالمین ﷺ میں اصحاب رض جمع تھے اور صبح کے اقدامات کے بارے میں مشاورت چل رھی تھی کہ کسی نے آکر ابوسفیان کی گرفتاری کی خبر دے دی
” اللہ اکبر ” خیمہؑ میں نعرہ تکبیر بلند ھوا
ابوسفیان کی گرفتاری ایک بہت بڑی خبر اور کامیابی تھی
خیمہؑ میں موجود عمر ابن الخطاب اٹھ کر کھڑے ھوۓ اور تلوار کو میان سے نکال کر انتہائ جوش کے عالم میں بولے ۔۔
” اس بدبخت کو قتل کردینا چاھیئے شروع سے سارے فساد کی جڑ یہی رھا ھے ”
چہرہ مبارک رحمت للعالمین ﷺ پر تبسّم نمودار ھوا
اور انکی دلوں میں اترتی ھوئ آواز گونجی
” بیٹھ جاؤ عمر ۔۔ اسے آنے دو ”
عمر ابن خطاب آنکھوں میں غیض لیئے حکم رسول ﷺ کی اطاعت میں بیٹھ تو گۓ لیکن ان کے چہرے کی سرخی بتا رھی تھی کہ انکا بس چلتا تو ابوسفیان کے ٹکڑے کرڈالتے
اتنے میں پہرے داروں نے بارگاہ رسالت ﷺ میں حاضر ھونے کی اجازت چاھی

اجازت ملنے پر ابوسفیان کو رحمت للعالمین کے سامنے اس حال میں پیش کیا گیا کہ اسکے ھاتھ اسی کے عمامے سے اسکی پشت پر بندھے ھوۓ تھے
چہرے کی رنگت پیلی پڑ چکی تھی
اور اسکی آنکھوں میں موت کے ساۓ لہرا رھے تھے

لب ھاۓ رسالت مآب ﷺ وا ھوۓ ۔۔۔
اور اصحاب رض نے ایک عجیب جملہؑ سنا

” اسکے ھاتھ کھول دو اور اسکو پانی پلاؤ ، بیٹھ جاؤ ابوسفیان ۔۔ !! ”
ابوسفیان ھارے ھوۓ جواری کی طرح گرنے کے انداز میں خیمہؑ کے فرش پر بچھے قالین پر بیٹھ گیا ۔
پانی پی کر اسکو کچھ حوصلہ ھوا تو نظر اٹھا کر خیمہؑ میں موجود لوگوں کی طرف دیکھا

عمر ابن خطاب کی آنکھیں غصّہ سے سرخ تھیں
ابوبکر ابن قحافہ کی آنکھوں میں اسکے لیئے افسوس کا تاثر تھا
عثمان بن عفان کے چہرے پر عزیزداری کی ھمدردی اور افسوس کا ملا جلا تاثر تھا
علیؑ ابن ابوطالبؑ کا چہرہ سپاٹ تھا
اسی طرح باقی تمام اصحاب کے چہروں کو دیکھتا دیکھتا آخر اسکی نظر محمّد ﷺ کے چہرہ مبارک پر آکر ٹھر گئ
جہاں جلالت و رحمت کے خوبصورت امتزاج کیساتھ کائنات کی خوبصورت ترین مسکراھٹ تھی
” کہو ابوسفیان ؟ کیسے آنا ھوا ؟؟ ”
ابوسفیان کے گلے میں جیسے آواز ھی نہیں رھی تھی
بہت ھمّت کرکے بولا ۔۔ ” مم ۔۔ میں اسلام قبول کرنا چاھتا ھوں ؟؟ ”
عمر ابن خطاب ایک بار پھر اٹھ کھڑے ھوۓ
” یارسول اللہ ﷺ یہ شخص مکّاری کررھا ھے ، جان بچانے کیلیئے اسلام قبول کرنا چاھتا ھے ، مجھے اجازت دیجیئے ، میں آج اس دشمن ازلی کا خاتمہؑ کر ھی دوں ” انکے مونہہ سے کف جاری تھا ۔۔۔
” بیٹھ جاؤ عمر ۔۔۔ ” رسالت مآب ﷺ نے نرمی سے پھر فرمایا
” بولو ابوسفیان ۔۔ کیا تم واقعی اسلام قبول کرنا چاھتے ھو ؟ ”
” جج ۔۔ جی یا رسول اللہ ﷺ ۔۔ میں اسلام قبول کرنا چاھتا ھوں میں سمجھ گیا ھوں کہ آپؐ اور آپکا دین بھی سچّا ھے اور آپ کا خدا بھی سچّا ھے ، اسکا وعدہ پورا ھوا ۔ میں جان گیا ھوں کہ صبح مکہّ کو فتح ھونے سے کوئ نہیں بچا سکے گا ”
چہرہؑ رسالت مآب ﷺ پر مسکراھٹ پھیلی ۔۔
” ٹھیک ھے ابوسفیان ۔۔
تو میں تمہیں اسلام کی دعوت دیتا ھوں اور تمہاری درخواست قبول کرتا ھوں جاؤ تم آزاد ھو ، صبح ھم مکہّ میں داخل ھونگے انشاء اللہ
میں تمہارے گھر کو جہاں آج تک اسلام اور ھمارے خلاف سازشیں ھوتی رھیں ، جاۓ امن قرار دیتا ھوں ، جو تمہارے گھر میں پناہ لےلے گا وہ محفوظ ھے ، ”
۔
ابوسفیان کی آنکھیں حیرت سے پھٹتی جا رھی تھیں
۔
” اور مکہّ والوں سے کہنا ۔۔ جو بیت اللہ میں داخل ھوگیا اسکو امان ھے ، جو اپنی کسی عبادت گاہ میں چلا گیا ، اسکو امان ھے ، یہاں تک کہ جو اپنے گھروں میں بیٹھ رھا اسکو امان ھے ،

جاؤ ابوسفیان ۔۔۔ جاؤ اور جاکر صبح ھماری آمد کا انتظار کرو
اور کہنا مکہّ والوں سے کہ ھماری کوئ تلوار میان سے باھر نہیں ھوگی ، ھمارا کوئ تیر ترکش سے باھر نہیں ھوگا
ھمارا کوئ نیزہ کسی کی طرف سیدھا نہیں ھوگا جب تک کہ کوئ ھمارے ساتھ لڑنا نہ چاھے ”
۔
ابوسفیان نے حیرت سے محمّد ﷺ کی طرف دیکھا اور کانپتے ھوۓ ھونٹوں سے بولنا شروع کیا ۔۔
” اشھد ان لاالہٰ الا اللہ و اشھد ان محمّد عبدہُ و رسولہُ ”
۔
سب سے پہلے عمر ابن خطاب آگے بڑھے ۔۔ اور ابوسفیان کو گلے سے لگایا
” مرحبا اے ابوسفیان ، اب سے تم ھمارے دینی بھائ ھوگۓ ، تمہاری جان ، مال ھمارے اوپر ویسے ھی حرام ھوگیا جیسا کہ ھر مسلمان کا دوسرے پر حرام ھے ، تم کو مبارک ھو کہ تمہاری پچھلی ساری خطائیں معاف کردی گئیں اور اللہ تبارک و تعالیٰ تمہارے پچھلے گناہ معاف فرماۓ ”
ابوسفیان حیرت سے خطاب کے بیٹے کو دیکھ رھا تھا
یہ وھی تھا کہ چند لمحے پہلے جسکی آنکھوں میں اس کیلیئے شدید نفرت اور غصّہ تھا اور جو اسکی جان لینا چاھتا تھا
اب وھی اسکو گلے سے لگا کر بھائ بول رھا تھا ؟
یہ کیسا دین ھے ؟
یہ کیسے لوگ ھیں ؟
سب سے گلے مل کر اور رسول اللہ ﷺ کے ھاتھوں پر بوسہ دے کر ابوسفیان خیمہؑ سے باھر نکل گیا

” وہ دھشت گرد ابوسفیان کہ جس کے شر سے مسلمان آج تک تنگ تھے انہی کے درمیان سے سلامتی سے گزرتا ھوا جارھا تھا ، جہاں سے گزرتا ، اس اسلامی لشکر کا ھر فرد ، ھر جنگجو ، ھر سپاھی جو تھوڑی دیر پہلے اسکی جان کے دشمن تھے اب آگے بڑھ بڑھ کر اس سے مصافحہ کررھے تھے ، اسے مبارکباد دے رھے تھے ، خوش آمدید کہہ رھے تھے ۔۔ ”
اگلے دن ۔۔۔
مکہّ شہر کی حد پر جو لوگ کھڑے تھے ان میں سب سے نمایاں ابوسفیان تھا
مسلمانوں کا لشکر مکہّ میں داخل ھوچکا تھا

کسی ایک تلوار ، کسی ایک نیزے کی انی ، کسی ایک تیر کی نوک پر خون کا ایک قطرہ بھی نہیں تھا

لشکر اسلام کو ھدایات مل چکی تھیں
کسی کے گھر میں داخل مت ھونا
کسی کی عبادت گاہ کو نقصان مت پہنچانا
کسی کا پیچھا مت کرنا
عورتوں اور بچوں پر ھاتھ نہ اٹھانا
کسی کا مال نہ لوٹنا
بلال حبشئ آگے آگے اعلان کرتا جارھا تھا
” مکہّ والو ۔۔۔ رسول خدا ﷺ کی طرف سے ۔۔۔
آج تم سب کیلیئے عام معافی کا اعلان ھے ۔۔
کسی سے اسکے سابقہ اعمال کی بازپرس نہیں کی جاۓ گی ،
جو اسلام قبول کرنا چاھے وہ کرسکتا ھے
جو نہ کرنا چاھے وہ اپنے سابقہ دین پر رہ سکتا ھے
سب کو انکے مذھب کے مطابق عبادت کی کھلی اجازت ھوگی
صرف مسجد الحرام اور اسکی حدود کے اندر بت پرستی کی اجازت نہیں ھوگی
کسی کا ذریعہ معاش چھینا نہیں جاۓ گا
کسی کو اسکی ارضی و جائیداد سے محروم نہیں کیا جاۓ گا
غیر مسلموں کے جان و مال کی حفاظت مسلمان کریں گے

اے مکہّ کے لوگو ۔۔۔۔ !! ”
۔
ھندہ اپنے گھر کے دروازے پر کھڑی لشکر اسلام کو گزرتے دیکھ رھی تھی
اسکا دل گواھی نہیں دے رھا تھا کہ ” حضرت حمزہ ” کا قتل اسکو معاف کردیا جاۓ گا
لیکن ابوسفیان نے تو رات یہی کہا تھا کہ ۔۔۔

” اسلام قبول کرلو ۔۔ سب غلطیاں معاف ھوجائیں گی ”
مکہّ فتح ھوچکا تھا
بنا ظلم و تشدد ، بنا خون بہاۓ ، بنا تیر و تلوار چلاۓ ،

لو گ جوق در جوق اس آفاقی مذھب کو اختیار کرنے اور اللہ کی توحید اور رسول اللہ ﷺ کی رسالت کا اقرار کرنے مسجد حرام کے صحن میں جمع ھورھے تھے

اور تب ھی مکہّ والوں نے دیکھا ۔۔۔
” اس ھجوم میں ھندہ بھی شامل تھی ”
۔
یہ ھوا کرتا تھا اسلام ۔۔ یہ تھی اسکی تعلیمات ۔۔ یہ سکھایا تھا میرے رسول ﷺصلی اللہ علیہ و آلہ وسلم نے…

توہین ِ رسالت

​مسجد کے سپیکر پر مولوی صاحب نے اعلان فرمایا کہ ،

’’فلاں نے توہین ِ رسالت کر دی ہے ۔ اسے جہنم واصل کرنے کے لیے پہنچو‘‘

یہ سنتے ہی دودھ میں پانی ملاتا ہوا بھولا گجر ، مرچوں میں پسی ہوئی اینٹیں ملاتا ہوا علم دین پنساری ، صاحب تک رشوت پہنچانے کے لیے رقم لیتا ہوا کسٹم کا بابو چپراسی ،  ساری رات پورنو فلمیں دیکھ کر ابھی ابھی سونے والا نوجوان سویٹی پرنس عامر ، موٹر سائیکل سوار سے رشوت لیتا ہوا کانسٹیبل محمد نواز ، ساری رات دھندہ کرکے ابھی ابھی سونے والا ہیرا منڈی کا دلال ساقا کنجر ، بطور مٹن گدھے کا گوشت بیچتا ہوا ماجھا قصائی ، میٹر میں کم بجلی کی کھپت دکھانے کے لیے نذرانے وصول کرتا ہوا میٹر ریڈر غلام رسول ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ سب فورا اپنے کام  چھوڑ چھاڑ کر اپنے ہاتھوں میں ڈنڈے ، پتھر ، اینٹیں اور منہ میں گالیاں لیے مولوی کی پکار پر لبیک کہتے ہوئے دوڑے تاکہ گستاخ کو جہنم واصل کرکے اپنے لیے جنت کمائیں ، سبحان اللہ

۔ ۔ ۔ ۔ ۔ شیرین مراد

تمباکو نوشی

 

تحریر:ساحرہ ظفر

پاکستان میں ہر روز 1200 بچے پہلی دفعہ سگریٹ نوشی کا آغاز کر رہے ہیں،ملک بھر میں 13 سے 15 سال عمر کے 10.7 فیصد بچے تمباکو نوشی کر رہے ہیں۔ ۔پاکستان سمیت ایشیا میں کروڑوں گھر  تمباکو نوشی اور منشیات سے متاثر ہو رہے ہیں۔ماہرین کے مطابق تمباکو نوشی کا زہر ہر دس سیکنڈ بعد دنیا میں ایک انسان کی جان لے جاتا ہے ۔معالمی ادارہ صحت کے مطابق دنیا بھر میں 30 لاکھ افراد تمباکو نوشی کے لت میں مبتلاء ہوکر جان سے چلے جاتے ہیں۔

پاکستان جو غربت کی چکی میں پسا ہوا ملک ہے  اس  میں سگریٹ نوشی کا استعمال مسلسل بڑھ رہا ہے۔ طبی ماہرین کے مطابق 18 فیصد پاکستانی تمباکو نوشی کا شکار ہیں ۔ گزشتہ سال کے مقابلے میں دو فیصد تمباکو نوشی کے استعمال کرنے والوں کی تعداد میں اضافہ ہوا۔ ماہر امراض سینہ ڈاکٹر ندیم رضوی کہتے ہیں کہ دائمی کھانسی، دمہ، ہارٹ اٹیک اور پھپیپھڑو ں کا کینسر یہ بیماریاں تمباکو نوشی کرنے والوں میں عام ہیں۔

ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کے زیر اہتمام گلوبل یوتھ تمباکو کے 2013ءمیں پاکستان کے مختلف اسکولوں میں پڑھنے والے 13 سے 15 سال کی عمر کے 8 ہزار بچوں پر کیے گئےسروے کی رپورٹ کے مطابق 36 لڑکیاں اور 192 لڑکے سروے کے وقت سگریٹ نوشی کر رہے تھے جبکہ 164 لڑکیوں اور 368 لڑکوں نے بتایا کہ وہ تمباکو نوشی کرتے ہیں سگریٹ پینے والے 40 فیصد بچوں نے بتایا کہ انھوں نے دس سال سے کم عمر میں سگریٹ نوشی کا آغاز کر دیا تھا۔

عالمی ادارہ صحت کے مطابق دنیا بھر میں دس سے چوبیس سال کی عمر کے تقریباً ایک ارب اسی کروڑ افراد تمباکو نوشی کرتے ہیں پاکستان میں ہر سال ایک لاکھ جب کہ دنیا بھر میں 50لاکھ سے زائد افراد سگریٹ نوشی کی وجہ سے ہلاک ہو جاتے ہیں

عالمی ادارۂ صحت کے تحت دنیا بھر میں تمباکو نوشی کی روک تھام کے لیے اقدامات اور اس کے خلاف قوانین وضع کرنے پر زور دیا جارہا ہے۔ پاکستان میں بھی تمباکو نوشی سے نمٹنے کے لیے کوششیں کی جارہی ہیں۔ لیکن اس سلسلے میں قوانین پر سنجیدگی سے عمل درآمد کی ضرورت ہے۔ نوجوان تمباکو کے استعمال کے مختلف طریقے اپنا رہے ہیں۔ ان میں نکوٹین والے ای سگریٹ، مختلف ذائقوں والے سگار اور شیشہ بھی شامل ہے۔ اگر سگریٹ نوش کی بات کی جائے تو یہ فقط اپنی زندگی کے لیے خطرہ نہیں بنتا بلکہ اس کی وجہ سے دوسروں کی صحّت کو بھی نقصان پہنچتا ہے۔

فضا میں موجود تمباکو کے دھویں میں کینسر کا سبب بننے والے 60 کیمیائی اجزا موجود ہوتے ہیں، جو سگریٹ نہ پینے والے کی صحّت کو اتنا ہی نقصان پہنچاتے ہیں جتنا سگریٹ نوش کو پہنچتا ہے۔ تمباکو کے دھوئیں میں موجود مضرِ صحت مادے ذہن اور خون کو متأثر کرتے ہیں۔ ایک حالیہ ریسرچ میں بتایا گیا ہے کہ تمباکو نوشی سے صرف پھیپھڑوں کے کینسر کا خطرہ ہی نہیں ہوتا بلکہ اندھا پن، ذیابیطس، جگر اور بڑی آنت کے کینسر اور دیگر پیچیدگیاں بھی لاحق ہو سکتی ہیں۔ اس کے علاوہ خواتین میں سگریٹ نوشی کے اثرات حمل کے دوران طبی پیچیدگیوں، جوڑوں کے درد اور جسم کے دفاعی نظام کی کم زوری کی صورت میں ظاہر ہوسکتے ہیں۔

تمباکو نوشی کے بڑھتے ہوئے رجحان میں سب سے زیادہ  تعداد نابالغ  بچوں   کی ہے جو  دیکھا دیکھی اس طرف بڑھ رہے ہیں  فلموں گانوں  سے متاثر ہو کر  تمباکو نوشی کی  میں مبتلا ہو رہے ہیں ۔اس میں خاص طور پر والدین اساتذہ اور ذمہ دار لوگوں کو سخت نظر رکھنے کی ضرورت ہے۔

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

 

ایک باپ کا دکھ

رؤف کلاسرا

لکھنے بیٹھا تو کئی موضوع ذہن میں تھے۔ ابھی بیٹھا سوچ ہی رہا تھا کہ کس پر لکھا جائے کہ لاہور سے ایک صحافی آفتاب خٹک کا ٹیکسٹ میسج ملا ہے جس کے بعد ایک عجیب سی اداسی نے گرفت میں لے لیا۔کچھ نہیں لکھا جارہا ۔ انہوں نے لکھا، میرا بیٹا جس کے جگر کی تبدیلی کے لیے آپ کو کچھ دن پہلے میسج کیا تھا کہ ایک بھائی کی طرح کسی سے بات کر کے مدد کریں، وہ آج فوت ہوگیا ہے۔بیٹے حسنین کے لیے

Read More