Latest Posts

Vision 21

A Company Registered under Section 42 of Companies Ordinance 1984. Corporate Universal Identification No. 0073421

Vision 21 is Pakistan based non-profit, non- partisan Socio-Political organisation. We work through research and advocacy. Our Focus is on Poverty and Misery Alleviation, Rights Awareness, Human Dignity, Women empowerment and Justice as a right and obligation.

We act and work side by side with the deprived and have-nots.

We invite you to join us in this mission. We welcome your help. We welcome your comments and suggestions. If you are interested in writing on Awaam, please contact us at: awaam@thevision21.org

Awaam      by   Vision21

↑ Grab this Headline Animator

آزادی کی قیمت

ﺑﺮﺍﺱ ﮐﮯ ﺗﯿﻦ ﮐﻨﻮﺋﯿﮟ
————————————————————
——————————
ﯾﮧ ۱۹۷۷ﺀ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﮨﮯ۔ ﺳﺮﮨﻨﺪ ﺷﺮﯾﻒ ﻣﯿﮟ ﺣﻀﺮﺕ
ﻣﺠﺪﺩ ﺍﻟﻒ ﺛﺎﻧﯽ ﮐﮯ ﻋﺮﺱ ﮐﯽ ﺗﻘﺮﯾﺒﺎﺕ ﺍﺧﺘﺘﺎﻡ ﭘﺬﯾﺮ
ﮨﻮﺋﯿﮟ ﺗﻮ ﺍﮔﻠﮯ ﺭﻭﺯ ﻗﺮﯾﺒﺎ ﺍﯾﮏ ﺳﻮ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻧﯽ ﺯﺍﺋﺮﯾﻦ
ﭘﺮ ﻣﺸﺘﻤﻞ ﻭﻓﺪ ﺳﺮﮨﻨﺪ ﺳﮯ ﻗﺮﯾﺒﺎ ۲۰ﮐﻠﻮﻣﯿﭩﺮ ﺩﻭﺭ
ﻭﺍﻗﻊ ﺍﯾﮏ ﻗﺼﺒﮧ ﺑﺮﺍﺱ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺭﻭﺍﻧﮧ ﮨﻮﺍ ﺟﮩﺎﮞ
ﺍﯾﮏ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ ﺑﻌﺾ ﺍﻧﺒﯿﺎﺋﮯ ﮐﺮﺍﻡ ﻣﺪﻓﻮﻥ
ﮨﯿﮟ۔
ﺯﺍﺋﺮﯾﻦ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺩﻭ ﺑﺴﯿﮟ ﻣﺨﺼﻮﺹ ﺗﮭﯿﮟ۔ ﻣﯿﺮﯼ
ﻧﺸﺴﺖ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻧﯽ ﻭﻓﺪ ﮐﮯ ﻗﺎﺋﺪ ﻣﺴﭩﺮ ﺟﺴﭩﺲ)ﺭ(
ﺻﺪﯾﻖ ﭼﻮﺩﮬﺮﯼ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺗﮭﯽ۔ ﮐﮭﺮﺩﺭﯼ ﻟﮑﮍﯼ ﺳﮯ
ﺗﯿﺎﺭ ﺷﺪﮦ ﻋﺼﺎ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﺑﮭﯽ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺗﮭﺎ، ﺍﭘﻨﯽ
ﻣﻨﺰﻝ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺭﻭﺍﻧﮧ ﮨﻮﺋﯽ ﺗﻮ ﺟﺴﭩﺲ ﺻﺎﺣﺐ
ﻣﺮﺣﻮﻡ ﻧﮯ ﺧﺎﻟﺺ ﺩﯾﮩﺎﺗﯽ ﻟﮩﺠﮯ ﻣﯿﮟ ﮔﻔﺘﮕﻮ ﮐﺎ ﺍﻏﺎﺯ
ﮐﯿﺎ۔
ﻣﯿﺮﮮ ﻟﯿﮯ ﺍﻥ ﮐﯽ ﯾﮧ ﮔﻔﺘﮕﻮ ﺣﻘﯿﻘﺘﻮﮞ ﮐﺎ ﻋﺮﻓﺎﻥ ﺗﮭﯽ۔
ﺟﺴﭩﺲ ﺻﺎﺣﺐ ﻗﯿﺎﻡ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻣﻐﻮﯾﮧ ﺧﻮﺍﺗﯿﻦ
ﺗﻼﺵ ﮐﺮﺍﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﻣﺪﺩ ﺩﯾﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﮐﻤﯿﺸﻦ ﮐﮯ ﺭﮐﻦ ﺗﮭﮯ۔
ﺍﻧﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﺟﺎﻥ ﮨﺘﮭﯿﻠﯽ ﭘﺮ ﺭﮐﮫ ﮐﺮ ﺍﭘﻨﮯ ﻓﺮﺍﺋﺾ ﺍﻧﺠﺎﻡ
ﺩﯾﮯ۔ ﺍﻧﮭﻮ ﮞ ﻧﮯ ﺑﺘﺎﯾﺎ، ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﺗﻢ ﺳﮍﮎ ﮐﮯ ﺩﻭﻧﻮﮞ
ﺟﺎﻧﺐ ﺟﻮ ﮨﺮﮮ ﺑﮭﺮﮮ ﮐﮭﯿﺖ ﺩﯾﮑﮫ ﺭﮨﮯ ﮨﻮ، ۱۹۴۷ﺀ ﻣﯿﮟ
ﯾﮩﺎﮞ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﻣﺮﺩﻭﮞ، ﻋﻮﺭﺗﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﺑﭽﻮﮞ ﮐﮯ
ﺳﺮﻭﮞ ﮐﯽ ﺳﺮﺥ ﻓﺼﻠﯿﮟ ﮐﺎﭨﯽ ﮔﺌﯽ ﺗﮭﯿﮟ۔ ﺗﻢ ﻧﮯ
ﻋﻮﺭﺕ ﮐﮯ ﮐﺌﯽ ﺭﻭﭖ ﺩﯾﮑﮭﮯ ﮨﻮﮞ ﮔﮯ۔
ﻣﮕﺮ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺑﮯ ﭼﺎﺭﮔﯽ ﺍﻭﺭ ﻣﻈﻠﻮﻣﯿﺖ ﮐﺎ ﺭﺥ ﺷﺎﯾﺪ
ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﻧﮧ ﮨﻮ ﺟﯿﺴﺎ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ ۔ﺟﺐ
ﻣﺠﮭﮯ ﭘﺘﺎ ﭼﻠﺘﺎ ﮐﮧ ﮐﺴﯽ ﮔﺎﺋﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ
ﻋﻮﺭﺗﯿﮟ ﺩﺭﻧﺪﻭﮞ ﮐﮯ ﻗﺒﻀﮯ ﻣﯿﮟ ﮨﯿﮟ ﺗﻮ ﭼﻨﺪ ﺳﭙﺎﮨﯿﻮﮞ
ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺧﻮﻥ ﮐﮯ ﭘﯿﺎﺳﮯ ﺍﻓﺮﺍﺩ ﮐﮯ ﺩﺭﻣﯿﺎﻥ ﺳﮯ ﮔﺰﺭ
ﮐﺮ ﺍﻥ ﺗﮏ ﭘﮩﻨﭽﺘﺎ۔ ﻣﮕﺮ ﮐﺌﯽ ﺑﺎﺭ ﯾﻮﮞ ﮨﻮﺍ ﮐﮧ ﻣﻐﻮﯾﮧ
ﮨﻤﯿﮟ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﺳﺎﺗﮫ ﭼﻠﻨﮯ ﮐﯽ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﺍﺱ ﻭﺣﺸﯽ ﮐﮯ
ﭘﮩﻠﻮ ﻣﯿﮟ ﺟﺎ ﮐﮭﮍﯼ ﮨﻮﺗﯽ ﺟﺲ ﻧﮯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﮐﻮ
ﻗﺘﻞ ﮐﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮯ ﺍﭨﮭﺎ ﮐﺮ ﺍﭘﻨﮯ ﮔﮭﺮ ﮈﺍﻝ ﻟﯿﺎ ﺗﮭﺎ۔
ﺟﺐ ﮨﻢ ﺍﺳﮯ ﯾﻘﯿﻦ ﺩﻻﺗﮯ ﮐﮧ ﺍﺏ ﻭﮦ ﻣﮑﻤﻞ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ
ﻣﺤﻔﻮﻅ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﮯ ﻏﻨﮉﮮ ﺳﮯ ﮈﺭﻧﮯ ﮐﯽ ﻗﻄﻌﺎ ﮐﻮﺋﯽ
ﺿﺮﻭﺭﺕ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﻮ ﻭﮦ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺳﺎﺗﮫ ﭼﻠﻨﮯ ﭘﺮ ﺭﺿﺎ ﻣﻨﺪ
ﮨﻮﺗﯽ۔ ﭘﮭﺮ ﻣﻐﻮﯾﮧ ﻋﻮﺭﺗﻮﮞ ﮐﮯ ﮐﯿﻤﭗ ﻣﯿﮟ ﭘﮩﻨﭻ ﮐﺮ
ﻭﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﭽﮯ ﮐﮭﭽﮯ ﮐﺴﯽ ﻋﺰﯾﺰ ﮐﮯ ﮔﻠﮯ ﻟﮓ ﮐﺮ
ﮨﭽﮑﯿﺎﮞ ﻟﮯ ﻟﮯ ﮐﺮ ﺭﻭﺗﯽ۔ ﺟﺴﭩﺲ ﺻﺎﺣﺐ ﻧﮯ ﺑﺘﺎﯾﺎ:
’’ﻣﯿﺮﯼ ﺍﻧﮑﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﻭﮦ ﺧﻮﮞ ﺍﺷﺎﻡ ﻣﻨﺎﻇﺮ ﺩﯾﮑﮭﮯ ﮨﯿﮟ
ﮐﮧ ﺍﯾﮏ ﻭﻗﺖ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﺴﺎﻧﯿﺖ ﺳﮯ ﻣﯿﺮﺍ ﺍﻋﺘﻤﺎﺩ ﺍﭨﮫ ﮔﯿﺎ۔
ﺍﭘﻨﮯ ﻓﺮﺍﺋﺾ ﮐﯽ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﺩﮨﯽ ﮐﮯ ﺩﻭﺭﺍﻥ ﻣﯿﺮﯼ ﻣﻼﻗﺎﺕ
ﺍﻥ ﺑﭽﯿﻮﮞ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﮨﻮﺋﯽ ﺟﻮ ﭘﻮﺭﮮ ﮔﺎﺋﻮﮞ ﮐﯽ
ﻣﻠﮑﯿﺖ ﺗﮭﯿﮟ۔ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﮨﻢ ﺟﺲ ﻋﻼﻗﮯ ﺳﮯ ﮔﺰﺭ ﺭﮨﮯ
ﮨﯿﮟ ﯾﮩﺎﮞ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﻋﻮﺭﺗﻮﮞ ﮐﮯ ﺑﺮﮨﻨﮧ ﺟﻠﻮﺱ ﻧﮑﻠﮯ
ﺗﮭﮯ۔
’’ﻣﮕﺮ ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮭﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﻭﺍﻗﻌﮧ ﺿﺮﻭﺭ ﺳﻨﺎﺋﻮﮞ ﮔﺎ۔
‘‘ ﺟﺴﭩﺲ ﺻﺎﺣﺐ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ’’ﺍﯾﮏ ﺑﺎﺭ ﻣﺠﮭﮯ ﺍﻃﻼﻉ ﻣﻠﯽ
ﮐﮧ ﮐﺴﯽ ﺳﯿﺪ ﺯﺍﺩﯼ ﮐﻮ ﺍﯾﮏ ﺑﮭﻨﮕﯽ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﮔﮭﺮ ﮈﺍﻻ
ﮨﻮﺍ ﮨﮯ۔ ﻣﯿﮟ ﺳﭙﺎﮨﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺍﺱ ﮔﺎﺋﻮﮞ ﭘﮩﻨﭽﺎ ﺍﻭﺭ
ﺩﺭﻭﺍﺯﮦ ﺗﻮﮌ ﮐﺮ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ﮨﻮﺍ۔ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺻﺤﻦ
ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺑﭽﯽ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﮐﮭﺎ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﮏ ﻃﺮﻑ
ﺟﺎﺋﮯ ﻧﻤﺎﺯ ﺑﭽﮭﯽ ﺗﮭﯽ! ﺍﺗﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮐﻤﺮﮮ ﺳﮯ
ﺍﺩﮬﯿﮍ ﻋﻤﺮ ﮐﺎ ﮐﺎﻻ ﺑﮭﺠﻨﮓ ﺷﺨﺺ ﻧﮑﻼ ﺍﻭﺭ ﮨﻤﺎﺭﮮ
ﺳﺎﻣﻨﮯ ﮐﮭﮍﺍ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ۔ ﯾﮧ ﻭﮨﯽ ﺑﮭﻨﮕﯽ ﺗﮭﺎ۔
ﺍﺳﮯ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﻣﯿﺮﯼ ﺍﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺧﻮﻥ ﺍﺗﺮ ﺍﯾﺎ۔ ﻣﯿﮟ
ﻧﮯ ﺍﮔﮯ ﺑﮍﮪ ﮐﺮ ﺍﯾﮏ ﺯﻭﺭ ﺩﺍﺭ ﻣﮑﺎ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻣﻨﮧ ﭘﺮ
ﺭﺳﯿﺪ ﮐﯿﺎ۔ ﻭﮦ ﻟﮍﮐﮭﮍﺍ ﮐﺮ ﮔﺮ ﭘﮍﺍ۔ ﻣﻨﮧ ﺳﮯ ﺧﻮﻥ
ﺟﺎﺭﯼ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ۔ ﺗﮭﻮﮌﯼ ﺩﯾﺮ ﺑﻌﺪ ﺍﭨﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﻗﻤﯿﺺ ﮐﮯ
ﺩﺍﻣﻦ ﺳﮯ ﻣﻨﮧ ﭘﻮﻧﭽﮭﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﭘﮑﺎﺗﯽ ﻟﮍﮐﯽ ﮐﯽ
ﻃﺮﻑ ﺍﺷﺎﺭﮦ ﮐﺮ ﮐﮯ ﻧﺤﯿﻒ ﺍﻭﺍﺯ ﻣﯿﮟ ﭘﻮﭼﮭﺎ’’ :ﺗﻢ ﺍﺳﮯ
ﻟﯿﻨﮯ ﺍﺋﮯ ﮨﻮ؟‘‘
ﭘﮭﺮ ﺟﻮﺍﺏ ﮐﺎ ﺍﻧﺘﻈﺎﺭ ﮐﯿﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﺍﭘﻨﮯ ﮐﻤﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﭼﻼ
ﮔﯿﺎ ۔ﺗﮭﻮﮌﯼ ﺩﯾﺮ ﺑﻌﺪ ﻭﺍﭘﺲ ﺍﯾﺎ ﺗﻮ ﮨﺎﺗﮫ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ
ﭘﻮﭨﻠﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﻭﮦ ﺳﯿﺪﮬﺎ ﻟﮍﮐﯽ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﮐﮩﺎ:
’’ﺑﯿﭩﯽ! ﻣﯿﺮﮮ ﭘﺎﺱ ﺗﻤﮭﯿﮟ ﺍﻟﻮﺩﺍﻉ ﮐﮩﻨﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮐﭽﮫ
ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ۔ ﺍﺱ ﭘﻮﭨﻠﯽ ﻣﯿﮟ ﺑﺲ ﺍﯾﮏ ﮈﻭﭘﭩﮧ ﮨﮯ۔‘‘ ﭘﮭﺮ
ﮈﻭﭘﭩﮧ ﻟﮍﮐﯽ ﮐﮯ ﺳﺮ ﭘﺮ ﺍﻭﮌﮬﺎﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺍﻧﮑﮭﯿﮟ
ﭼﮭﻠﮏ ﭘﮍﯾﮟ۔ ﻭﮦ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﮨﺎﺗﮭﻮﮞ ﺳﮯ ﭼﮩﺮﮦ ﮈﮬﺎﻧﭗ ﮐﺮ
ﭘﮭﻮﭦ ﭘﮭﻮﭦ ﮐﺮ ﺭﻭﻧﮯ ﻟﮕﺎ۔
ﺑﺲ ﺗﯿﺰﯼ ﺳﮯ ﻣﻨﺰﻝ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺑﮍﮪ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ۔
ﺑﺮﺍﺱ ﻗﺼﺒﮧ ﺍﯾﮏ ﭨﯿﻠﮯ ﭘﺮ ﻭﺍﻗﻊ ﮨﮯ۔ ﺟﺐ ﮨﻢ ﻭﮨﺎﮞ
ﭘﮩﻨﭽﮯ ﺗﻮ ﻣﭩﯽ ﮐﮯ ﺑﻨﮯ ﮔﮭﺮﻭﮞ ﺳﮯ ﺍﭼﺎﻧﮏ ﺑﮯ ﺷﻤﺎﺭ
ﺑﭽﮯ ﻧﮑﻠﮯ ﺍﻭﺭ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺑﺲ ﮐﮯ ﮔﺮﺩ ﺟﻤﻊ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ۔ ﺍﺱ
ﮔﺎﺋﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺗﻌﺪﺍﺩ ﺳﮑﮭﻮﮞ ﮐﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﭼﻨﺎﮞﭽﮧ
ﻧﻨﮭﮯ ﻧﻨﮭﮯ ﺑﭽﻮﮞ ﻧﮯ ﺳﺮﻭﮞ ﭘﺮ ﭼﻮﻧﮉﮮ ﮐﯿﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺗﮭﮯ۔
ﺯﺍﺋﺮﯾﻦ ﺑﺴﻮﮞ ﺳﮯ ﺍﺗﺮﮮ ﺍﻭﺭﻗﺪﺭﮮ ﺑﻠﻨﺪﯼ ﭘﺮ ﻭﺍﻗﻊ ﺍﺱ
ﭼﺎﺭﺩﯾﻮﺍﺭﯼ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ ﺟﮩﺎﮞ ﺍﯾﮏ ﺭﻭﺍﯾﺖ ﮐﮯ
ﻣﻄﺎﺑﻖ ﺑﻌﺾ ﺍﻧﺒﯿﺎﺋﮯ ﮐﺮﺍﻡ ﻣﺪﻓﻮﻥ ﺗﮭﮯ۔ ﻭﮨﺎﮞ ﮐﺌﯽ
ﮐﺌﯽ ﮔﺰ ﻟﻤﺒﯽ ﺩﻭ ﺗﯿﻦ ﻗﺒﺮﯾﮟ ﻣﺒﯿﻨﮧ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺍﻥ ﺍﻧﺒﯿﺎ
ﮐﯽ ﺗﮭﯿﮟ۔ ﺯﺍﺋﺮﯾﻦ ﻧﮯ ﻗﺮﺍﻥ ﻣﺠﯿﺪ ﮐﯽ ﺗﻼﻭﺕ ﮐﯽ ﺍﻭﺭ
ﺩﻋﺎ ﻣﺎﻧﮕﯽ۔
ﺩﻋﺎ ﺳﮯ ﻓﺮﺍﻏﺖ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺑﺴﻮﮞ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﻭﺍﭘﺲ ﺟﺎﻧﮯ
ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮈﮬﻼﻥ ﺳﮯ ﺍﺗﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺍﭼﺎﻧﮏ ﺍﯾﮏ ﺩﺑﻼ ﭘﺘﻼ ﮨﻨﺪﻭ
ﻗﺎﺋﺪ ﺟﺴﭩﺲ ﺻﺪﯾﻖ ﭼﻮﺩﮬﺮﯼ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺍﯾﺎ، ﺍﻥ ﮐﮯ ﮐﺎﻥ
ﻣﯿﮟ ﺳﺮﮔﻮﺷﯿﺎﮞ ﮐﯿﮟ ﺍﻭﺭﭘﮭﺮ ﺯﺍﺋﺮﯾﻦ ﮐﮯ ﺍﮔﮯ ﺍﮔﮯ
ﭼﻠﻨﮯ ﻟﮕﺎ۔ ﺟﺴﭩﺲ ﺻﺎﺣﺐ ﻧﮯ ﮨﻤﯿﮟ ﺑﺘﺎﯾﺎ، ﯾﮧ ﮨﻨﺪﻭ
ﺍﻧﮭﯿﮟ ﺑﺘﺎ ﮐﺮ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺳﮑﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﺱ ﮔﺎﺋﻮﮞ ﻣﯿﮟ
ﻭﺳﯿﻊ ﭘﯿﻤﺎﻧﮯ ﭘﺮ ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﮐﺎ ﺧﻮﻥ ﺑﮩﺎﯾﺎ ﺗﮭﺎ۔
ﺳﯿﮑﮍﻭﮞ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﻋﻮﺭﺗﻮﮞ ﮐﯽ ﻋﺼﻤﺖ ﺩﺭﯼ ﮐﯽ
ﺗﮭﯽ، ﺑﮯ ﺷﻤﺎﺭ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﻋﻮﺭﺗﻮﮞ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﮔﮭﺮ ﻗﯿﺪ
ﮐﺮ ﻟﯿﺎ ﺗﮭﺎ۔
ﻭﮦ ﺍﺝ ﺑﮭﯽ ﺍﻧﮩﯽ ﮔﮭﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﻨﺪ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺑﭽﻮﮞ ﮐﯽ
ﻣﺎﺋﯿﮟ ﮨﯿﮟ۔ ﻧﯿﺰ ﯾﮧ ﮐﮧ ﺳﯿﮑﮍﻭﮞ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﻟﮍﮐﯿﻮﮞ ﻧﮯ
ﺍﭘﻨﯽ ﻋﺰﺕ ﺑﭽﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮐﻨﻮﺋﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﭼﮭﻼﻧﮕﯿﮟ ﻟﮕﺎ
ﺩﯼ ﺗﮭﯿﮟ۔ ﯾﮧ ﮐﻨﻮﺋﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻻﺷﻮﮞ ﺳﮯ ﭘﭧ ﮔﺌﮯ ﺗﮭﮯ۔
ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺳﮯ ﺗﯿﻦ ﮐﻨﻮﺋﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻋﻠﻢ ﻣﯿﮟ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ
ﻭﮦ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻧﺸﺎﻧﺪﮨﯽ ﮐﺮﻧﺎ ﭼﺎﮨﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﯾﮧ ﺧﺒﺮ ﺍﮒ ﮐﯽ
ﻃﺮﺡ ﺯﺍﺋﺮﯾﻦ ﻣﯿﮟ ﭘﮭﯿﻞ ﮔﺌﯽ۔ ﻭﮦ ﺗﯿﺰ ﺗﯿﺰ ﻗﺪﻡ ﺍﭨﮭﺎﺗﮯ
ﮨﻮﺋﮯ ﺍﺱ ﺷﺨﺺ ﮐﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﭼﻠﻨﮯ ﻟﮕﮯ۔
ﺗﮭﻮﮌﯼ ﺩﯾﺮ ﺑﻌﺪ ﻭﮦ ﺍﯾﮏ ﮨﻤﻮﺍﺭ ﺟﮕﮧ ﺭﮎ ﮔﯿﺎ ﺟﮩﺎﮞ
ﺧﻮﺩ ﺭﻭ ﭘﮭﻮﻝ ﻟﮩﻠﮩﺎ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﺍﻧﮩﯽ ﭘﮭﻮﻟﻮﮞ ﮐﮯ ﻧﯿﭽﮯ
ﻭﮦ ﺩﻭ ﮐﻨﻮﺋﯿﮟ ﺗﮭﮯ ﺟﻮ ﻣﺴﻠﻤﺎﻥ ﻟﮍﮐﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﻻﺷﻮﮞ
ﺳﮯ ﺑﮭﺮﮔﺌﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﺍﺏ ﺍﻧﮭﯿﮟ ﺑﻨﺪ ﮐﯿﺎ ﺟﺎ ﭼﮑﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﻭﮨﺎﮞ
ﺑﮭﯽ ﻓﺎﺗﺤﮧ ﺧﻮﺍﻧﯽ ﮐﯽ ﮔﺌﯽ۔ ﺗﯿﺴﺮﺍ ﮐﻨﻮﺍﮞ ﺑﮩﺖ
ﺳﺎﺭﮮ ﮔﮭﺮﻭﮞ ﮐﮯ ﺩﺭﻣﯿﺎﻥ ﻭﺍﻗﻊ ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﯽ ﺣﻘﯿﻘﯽ
ﺷﮑﻞ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺗﮭﺎ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﻻﺷﻮﮞ ﮐﮯ ﭘﭧ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﯽ
ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺍﺱ ﮐﺎ ﭘﺎﻧﯽ ﭘﯿﻨﮯ ﮐﮯ ﻗﺎﺑﻞ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ، ﻟﮩﺬﺍ
ﺍﺏ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﮌﺍ ﮐﺮﮐﭧ ﭘﮭﯿﻨﮑﺎ ﺟﺎﺗﺎﺗﮭﺎ ۔
ﻭﮨﺎﮞ ﺗﮏ ﭘﮩﻨﭽﺘﮯ ﭘﮩﻨﭽﺘﮯ ﺿﺒﻂ ﮐﮯ ﺳﺒﮭﯽ ﺑﻨﺪﮬﻦ ﭨﻮﭦ
ﮔﺌﮯ۔ ﻏﻢ ﮐﯽ ﺷﺪﺕ ﺳﮯ ﺯﺍﺋﺮﯾﻦ ﮐﮯ ﮐﻠﯿﺠﮯ ﺷﻖ ﺗﮭﮯ
ﺍﻭﺭ ﺍﻧﮑﮭﯿﮟ ﺳﺎﻭﻥ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺑﺮﺱ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯿﮟ۔ ﺧﻮﺩ
ﻣﺠﮭﮯ ﯾﻮﮞ ﻟﮕﺎ، ﻣﯿﮟ ۱۹۷۷ﺀ ﮐﯽ ﺑﺠﺎﺋﮯ ۱۹۴۷ﺀ ﻣﯿﮟ
ﺳﺎﻧﺲ ﻟﮯ ﺭﮨﺎ ﮨﻮﮞ۔ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﭼﺸﻢ ﺗﺼﻮﺭ ﻣﯿﮟ ﺩﯾﮑﮭﺎ
ﮐﮧ ﺟﻮﺍﻥ ﻣﺮﺩﻭﮞ ﺍﻭﺭ ﺑﻮﮌﮬﯽ ﻋﻮﺭﺗﻮﮞ ﮐﯽ ﻻﺷﻮﮞ
ﺳﮯ ﯾﮧ ﻣﯿﺪﺍﻥ ﺍﭨﺎ ﭘﮍﺍ ﮨﮯ۔ ﻭﺣﺸﯽ ﺩﺭﻧﺪﮮ ﺷﺮﺍﺏ ﮐﮯ
ﻧﺸﮯ ﻣﯿﮟ ﺩﮬﺖ ﺑﮭﯿﺎﻧﮏ ﻗﮩﻘﮩﮯ ﻟﮕﺎﺗﮯ ﺑﭽﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ
ﺑﮭﺎﮒ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﺍﻭﺭ ﻋﺰﯾﺰ ﻭ ﺍﻗﺮﺑﺎ ﮐﯽ
ﻻﺷﯿﮟ ﭘﮭﻼﻧﮕﺘﯽ ﮐﻨﻮﯾﮟ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺍﺗﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﮏ ﺍﯾﮏ ﮐﺮ
ﮐﮯ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﭼﮭﻼﻧﮓ ﻟﮕﺎ ﺩﯾﺘﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﮐﻨﻮﺍﮞ ﻻﺷﻮﮞ ﺳﮯ
ﺑﮭﺮ ﮔﯿﺎ ﺍﺱ ﮐﺎ ﭘﺎﻧﯽ ﮐﻨﺎﺭﻭﮞ ﺳﮯ ﺑﮩﻨﮯ ﻟﮕﺎ۔ ﭘﮭﺮ ﯾﮧ ﺑﮩﺘﺎ
ﭘﺎﻧﯽ ﻓﺮﯾﺎﺩ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﺱ ﭼﺎﺭ ﺩﯾﻮﺍﺭﯼ ﮐﮯ ﻧﯿﭽﮯ ﺟﻤﻊ ﮨﻮ
ﮔﯿﺎ ﺟﮩﺎﮞ ﺍﻧﺒﯿﺎ ﮐﮯ ﻣﺰﺍﺭ ﮨﯿﮟ۔
ﻭﻓﺪ ﻣﯿﮟ ﺷﺎﻣﻞ ﺍﯾﮏ ﺩﺭﻭﯾﺶ ﺑﺰﺭﮒ ﻧﮯ ﺩﻋﺎ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ
ﮨﺎﺗﮫ ﺍﭨﮭﺎﺋﮯ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﺟﻮﮞ ﺟﻮﮞ ﺍﻥ ﮐﯽ ﮨﭽﮑﯿﻮﮞ ﺑﮭﺮﯼ
ﺍﻭﺍﺯ ﺑﻠﻨﺪ ﮨﻮﺋﯽ ﺯﺍﺋﺮﯾﻦ ﮐﯽ ﺍﮦ ﺑﮑﺎ ﻣﯿﮞﺸﺪﺕ ﺍﺗﯽ
ﮔﺌﯽ۔ ﺭﻭﺗﮯ ﺭﻭﺗﮯ ﮔﻠﮯ ﺭﻧﺪﮪ ﮔﺌﮯ۔ ﺑﮭﺎﺋﯽ ﺗﯿﺲ ﺑﺮﺱ ﺑﻌﺪ
ﺍﭘﻨﯽ ﺑﮩﻨﻮﮞ ﮐﯽ ﺧﺒﺮ ﻟﯿﻨﮯ ﺍﺋﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﭘﻞ ﺑﮭﺮ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ
ﺍﻧﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﭘﮭﺮ ﺟﺪﺍ ﮨﻮ ﺟﺎﻧﺎ ﺗﮭﺎ۔ﮐﺌﯽ ﮨﻨﺪﻭ ﺍﻭﺭ ﺳﮑﮫ
ﻋﻮﺭﺗﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺫﺭﺍ ﻓﺎﺻﻠﮯ ﭘﺮ ﮐﮭﮍﮮ ﮨﻮ ﮐﺮ ﺩﻟﺨﺮﺍﺵ
ﻣﻨﻈﺮ ﺩﯾﮑﮫ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯿﮟ۔ ﺍﻧﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﺑﮩﺘﮯ ﺍﻧﺴﻮ ﺧﺸﮏ
ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﭘﻠﻮ ﺍﻧﮑﮭﻮﮞ ﭘﺮ ﺭﮐﮫ ﻟﯿﮯ۔ ﺍﯾﮏ ﻋﻮﺭﺕ
ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮐﮧ ﺍﺱ ﮐﮯ ﭼﮩﺮﮮ ﭘﺮ ﺷﺪﯾﺪ ﮐﺮﺏ ﺗﮭﺎ۔ ﻭﮦ
ﺍﯾﮏ ﺍﯾﮏ ﺯﺍﺋﺮ ﮐﻮ ﺍﻧﮑﮭﯿﮟ ﭘﮭﺎﮌ ﭘﮭﺎﮌ ﮐﺮ ﺩﯾﮑﮫ ﺭﮨﯽ
ﺗﮭﯽ۔ ﺗﮭﻮﮌﯼ ﺩﯾﺮ ﺑﻌﺪ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺑﮯ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﭼﯿﺦ ﻣﺎﺭﯼ ﺍﻭﺭ
ﭘﮭﺮ ﺑﮭﺎﮒ ﮐﺮ ﻧﻈﺮﻭﮞ ﺳﮯ ﺍﻭﺟﮭﻞ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ۔ ﻣﺠﮭﮯ ﻟﮕﺎ
،ﯾﮧ ﻋﻮﺭﺕ ﺍﻥ ﻋﻮﺭﺗﻮﮞﻤﯿﮟ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﮨﮯ ﺟﻦ ﮐﮯ ﭘﯿﭧ
ﭘﮭﻮﻟﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﮑﮭﯿﮟ ﺗﺎﺭﮮ ﻟﮕﯽ ﮨﯿﮟ۔
ﺩﻋﺎ ﺳﮯ ﻓﺮﺍﻏﺖ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺳﻨﺪﮪ ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ
ﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﻧﮯ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﮐﮩﺎ’’ :ﯾﮩﺎﮞ ﺍﻧﮯ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﻣﯿﮟ
ﺍﮐﮭﻨﮉ ﺑﮭﺎﺭﺕ ﮐﺎ ﻗﺎﺋﻞ ﺗﮭﺎ۔ ﻣﯿﺮﯼ ﮔﺰﺍﺭﺵ ﮨﮯ، ﺍﭖ
ﻭﺍﭘﺲ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﺗﻮ ﯾﮧ ﺗﺠﻮﯾﺰ ﭘﯿﺶ ﮐﺮﯾﮟ ﮐﮧ ﺟﻮ
ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻧﯽ ﺍﭘﻨﮯ ﺩﻟﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﮯ ﺣﻮﺍﻟﮯ ﺳﮯ
ﺷﮑﻮﮎ ﻭ ﺷﺒﮩﺎﺕ ﺭﮐﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ، ﺍﻧﮭﯿﮟ ﯾﮩﺎﮞ ﻻ ﮐﺮ ﯾﮧ
ﮐﻨﻮﺋﯿﮟ ﺩﮐﮭﺎﺋﮯ ﺟﺎﺋﯿﮟ۔ ﯾﮧ ﺧﻮﻧﭽﮑﺎﮞ ﻣﻨﻈﺮ ﻧﺌﯽ ﻧﺴﻞ
ﮐﮯ ﺍﻥ ﺍﻓﺮﺍﺩ ﮐﻮ ﺧﺼﻮﺻﺎ ﺩﮐﮭﺎﯾﺎ ﺟﺎﺋﮯ ﺟﻮ ﯾﮧ ﺳﻤﺠﮭﺘﮯ
ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﺗﺎﺭﯾﺨﯽ ﻋﻮﺍﻣﻞ ﮐﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﻗﺎﺋﻢ ﮨﻮﺍ۔
۱۹۴۷ﺀ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺟﻨﻢ ﻟﯿﻨﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﻧﺴﻞ ﮐﮯ ﺍﻓﺮﺍﺩ ﯾﮧ
ﮐﻨﻮﺋﯿﮞﺪﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﺟﺎﻥ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ ﮐﮧ ﺑﺮﺻﻐﯿﺮ ﮐﮯ
ﻣﺴﻠﻤﺎﻧﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺩﺍﺭﺍﻻﻣﺎﻥ، ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﯽ ﺧﺎﻃﺮ
ﮐﺘﻨﯽ ﻗﺮﺑﺎﻧﯿﺎﮞ ﺩﯼ ﺗﮭﯿﮟ۔ ﻭﮦ ﯾﮧ ﺑﮭﯽ ﺟﺎﻥ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ
ﮐﮧ ﺍﮔﺮ ﺍﺱ ﻣﻠﮏ ﭘﺮ ﺍﻧﭻ ﺍﺋﯽ ﺗﻮ ﺗﻠﻮﺍﺭﯾﮟ ﺍﯾﮏ ﺑﺎﺭ ﭘﮭﺮ
ﮨﻮﺍ ﻣﯿﮟ ﻟﮩﺮﺍﺋﯿﮟ ﮔﯽ ﺍﻭﺭ ﺑﮩﻨﻮﮞ ﮐﯽ ﭼﯿﺦ ﭘﮑﺎﺭ ﺍﻧﺪﮬﮯ
ﮐﻨﻮﺋﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺩﻡ ﺗﻮﮌ ﺩﮮ ﮔﯽ۔‘‘
ﺍﺱ ﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﻧﮯ ﻣﺰﯾﺪ ﮐﮩﺎ’’ :ﯾﮧ ﮐﻨﻮﺋﯿﮟ ﺍﻥ ﺑﺪﻧﯿﺖ
ﺩﺍﻧﺸﻮﺭﻭﮞ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﺩﮐﮭﺎﺋﯿﮟ ﺟﻮ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻧﯽ ﻗﻮﻡ ﮐﮯ
ﻟﯿﮯ ﺍﻧﮭﯿﮟ ﺩﻭﺑﺎﺭﮦ ﮐﮭﻮﺩﻧﺎ ﭼﺎﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔‘‘
ﻭﺍﭘﺴﯽ ﭘﺮ ﮨﻨﺪﻭ ﺍﻭﺭ ﺳﮑﮫ ﺑﭽﮯ ﺍﯾﮏ ﺑﺎﺭ ﭘﮭﺮ ﮨﻤﺎﺭﯼ
ﺑﺴﻮﮞ ﮐﮯ ﮔﺮﺩ ﺟﻤﻊ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ۔ ﻭﮦ ﻣﻌﺼﻮﻡ ﻧﮕﺎﮨﻮﮞ ﺳﮯ
ﮨﻤﺎﺭﮮ ﻣﻐﻤﻮﻡ ﭼﮩﺮﮮ ﺩﯾﮑﮫ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﭘﯿﺎﺭﮮ
ﺳﮯ ﺑﭽﮯ ﮐﻮ ﮔﻮﺩ ﻣﯿﮟ ﺍﭨﮭﺎﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﮯ ﮔﺎﻟﻮﮞ ﭘﺮ
ﺑﻮﺳﮧ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺑﺰﺑﺎﻥ ﺣﺎﻝ ﮐﮩﺎ:
’’ﺑﯿﭩﮯ! ﺗﻢ ﺗﻮ ﻣﻌﺼﻮﻡ ﮨﻮ، ﯾﮧ ﮐﻨﻮﺋﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﻣﻌﺼﻮﻣﻮﮞ
ﮐﯽ ﻻﺷﻮﮞ ﺳﮯ ﭘﭩﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﮔﺮ ﺗﺎﺭﯾﮏ ﻃﻮﻓﺎﻧﯽ
ﺭﺍﺗﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺗﻢ ﺍﻥ ﮐﻨﻮﺋﻮﮞ ﺳﮯ ﭼﯿﺨﯿﮟ ﺳﻨﻮ ﺗﻮ ﺍﻥ ﭘﺮ
ﮐﺎﻥ ﺿﺮﻭﺭ ﺩﮬﺮﻧﺎ۔ ﮨﻢ ﯾﮧ ﺍﻣﺎﻧﺘﯿﮟ ﺗﻤﮭﺎﺭﮮ ﺑﮍﻭﮞ ﮐﮯ
ﺑﺠﺎﺋﮯ ﺗﻤﮭﯿﮟ ﺳﭙﺮﺩ ﮐﺮ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺑﭽﮯ ﺍﺱ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ
ﺧﺪﺍ ﮐﮯ ﺳﻔﯿﺮ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔‘‘
ﻣﻨﻘﻮﻝ
ﺳﻼﻡ ﮨﻮ ﺁﭖ ﭘﮧ ﺍﮮ ﺷﮩﯿﺪﺍﻥ ﻭﻃﻦ

فرحان جمال

Agenda for tax reforms – II

 

HUZAIMA BUKHARI AND DR IKRAMUL HAQ AUG 12TH, 2017

Though many authors, including ourselves, have presented suggestions for reforming the existing tax system and raising taxes to the level of Rs 8 trillion at federal level and Rs 4 trillion at the provincial level – New tax model – Business Recorder August 28, 2015, our more-loyal-than-the-king stalwarts sitting in Ministry of Finance and FBR want “advice” and “assistance” from the IMF and the World Bank that miserably failed in the past. Their predicament can well be explained in the following couplet of great Urdu poet Mir Taqi Mir:

Mir kya sada hein beemar howe jis key sabab

usi attar key londey sey dawa letey hein

(What a simple soul is Mir; he seeks medication from the healer’s boy who is the cause of his ailment).

The present tax system and policies are detrimental for economy, social justice, business and industry. Those who possess more economic power (income and wealth) should contribute more to the public exchequer and vice versa. The ability-to-pay principle is regarded as the most equitable and just method of taxation and emphasized upon primarily for its redistributive role. In Pakistan, our rulers have completely deviated from this principle, which is in fact, a constitutional obligation of the government. Political economy of tax reforms must be studied from this fundamental perspective, if some meaningful change in nation’s life is desired.

Tax reforms with borrowed funds: The World Bank extended to Pakistan a $125.9 million grant, including IDA credit of $102.9 million, and a UK DFID grant of $23 million, for the tax administration reform project (TARP, many sarcastically called it TRAP). The objective of the project, according to official quarters, was to improve the integrity and fairness of tax administration by improving organizational efficiency and effectiveness of the revenue administration. TARP was aimed at promoting compliance through strengthened audit and enforcement capacity and transparent as well as high quality tax services. The project was also to focus on improving trade facilitation through modern and internationally acceptable customs procedure’, says an official handout.

It was a national shame that for improving the integrity and fairness of tax administration we needed such a heavy borrowing from the World Bank and other donors. Although a part of revenue collection by the FBR could have been earmarked on annual basis for this purpose, but the government was bent upon borrowing funds. It is obvious that the actual aim behind this project was to make us subservient to the agenda of foreign donors. In the name of tax reforms project, certain forces wanted to have control over our revenues and tax machinery readily obliged them just for few tours and chances to meet the old colonial masters. This was like the re-emergence of East India Company’s operations during the British raj in the subcontinent. On the one hand, our imported Prime Minister [who also retained the portfolio of Ministry of Finance] was claiming to free this nation from the clutches of IMF, and on the other was negotiating fresh loans/grants even for projects like tax reforms.

The World Bank successfully convinced the government of Pakistan that it needed substantial loan for its tax reform agenda. This reform agenda was prepared by the IMF and World Bank, and they wanted to give money to their “experts” (sic) by lending us money. The main chunk of loan went to their handpicked consultants! This modus operandi was not new; all the subjugated nations underwent this kind of exploitation at the hands of international donors. Responsibility for this kind of maltreatment and exploitation of a nation lies with its inept, incompetent and anti-people leadership that succumb before donors.

Our history of economic subjugation commenced in the 1960s when our rulers set themselves on large intakes of foreign loans. With every loan comes a host of conditions. These conditions ostensibly aim at reforms, in fact meant to subjugate a nation in complete terms, i.e., economically, politically and mentally. In recent years, our economic managers have started claiming that they are severing all ties with the IMF and other foreign donors, whereas the reality is that new loans for reforming (sic) tax, banking and justice systems-just to mention a few-are still being negotiated with unprecedented vigour to please the foreign masters.

The process of so-called tax reforms was initiated in 2000. Way back in 2001 promising “a big change of culture” in the FBR in the next 12 months, the then prime minister as a finance minister, toeing the IMF conditionalities, announced that massive tax reforms were on the cards.

He specified the following outline for intended tax reform agenda: 

— Heavy investment in Information Technology (IT) to facilitate collectors.

— Massive surgery in tax system through human resource development and use of computers, which would increase efficiency and image of the department.

— Good officers would get compensation on the achievements of targets.

In 2000, while commenting on the tax reform drive (sic) launched by the Finance Minister, we made the following remarks, which are relevant even today: The tall claims made by the government about six months back that by 1st January 2001, it would introduce major tax reforms and even a new Income Tax law proved to be yet another promise not kept. The deadline has now been extended to the budget time when the Finance Ordinance will be announced. This was not something that came as a surprise to many, including myself, as most of the claims by our government are wo wada hi kya jo wafa ho gaya (promises are made not to be fulfilled). We would have been much happier if the hasty attempts to further destroy the existing enactments and tax structures were abandoned, but it seems that some vested interests are bent upon to do so in the hope that they will get enormous money (for this poor nation it will be a loan of $100m) from the World Bank for this vandalism. This is the most painful part of the whole exercise.

Since 2001, in the name of simplification of tax laws, the FBR is imposing more and more obligations on the citizens of Pakistan without corresponding tax rights in tax codes. The nation has been burdened with a number of more cumbersome tax terms and new enhanced obligations of withholding taxes without any compensation. This is the sordid story of tax reform in Pakistan so far. With every new round of reform comes foreign loan. More money to handpicked consultants, who hardly know anything about a pragmatic tax policy and its administration. More workshops to mercilessly squander public money. At the end of every reform programme, the nation faced more well-equipped tax dacoits who play havoc with its peace and tranquility.

The great failure of all reforms programmes is now well-documented in The Role of Taxation in Pakistan’s Revival, edited by Jorge Martinez-Vazquez and Musharraf Rasool Cyan, and published by Oxford University Press.

Real dilemma of tax system The real dilemma of our tax system is that it is not equitable. The burden of taxes is less on the rich and more on the poor. In the face of this stark reality, the government since 1991 has been resorting to regressive taxation like presumptive taxes in income tax and turnover taxes in the shape of multi-point sales tax. Over the period of time our tax system has become rotten, oppressive, unjust and target-oriented. There is a dire need to discuss philosophical framework, principles of equity and justice that should be the main concern of our tax policy; not mere achieving of targets set out by the foreign donors. Our worthy tax managers are more concerned with meeting budget targets through presumptive tax regime which is a distortion under the direct tax legislation shifting tax incidence on consumers rather than the actual income earners.

The gulf between the poor and the rich will further widen if the present tax policies continue. We may manage to collect higher taxes but it will not serve the real purpose of redistribution of wealth which is at the core of any direct tax philosophy. On the one hand, we are not collecting taxes according to capacity to pay, and on the other, annual targets are fixed to further squeeze the already dried tax base. During the colonial era when salt tax was imposed, the visionary leaders of that time staged a revolt against such high-handedness. But now in the so-called post-independence age the IMF/World Bank imposed rulers are playing havoc with the life of the common man by levying exorbitant tax on salt and many other every-day items. It is tragic that neither the politicians nor any public-spirited NGO have agitated against this injustice.

We can collect much higher taxes if the present tax laws are rationalised and incompetent, inefficient and corrupt tax machinery is overhauled. We should liberate ourselves from the reform game of the World Bank and other foreign donors. The tax policies implemented by us on the dictates of foreign donors have lead to abject poverty for vast majority of people. These policies are not making us self-reliant but on the contrary are destroying our industry and business. If we manage to formulate a rational tax policy through public debate and parliamentary process and implement it through consensus and not coercive measures, there is every possibility to get rid of World Bank and IMF in a short span of time. However, if we continue following their prescription, we will neither realise real tax potential, nor achieve the cherished goal of self-reliance through rapid industrial growth.

Our tax revenue potential is not less than Rs 8 trillion provided that the existing tax base is made wider and equitable, tax machinery is completely overhauled and exemptions and concessions available to the privileged sections of society are withdrawn. To achieve these goals we do not need any loan from anyone. If we take money from World Bank or any other lender them then we are bound to follow their conditions because beggars cannot be choosers. Many local experts can do the reform work either voluntarily or at much less cost than what may be wasted on foreign consultants at the commands of World Bank and others.

Fiscal decentralisation and municipal self-rule Taxation should essentially be linked with a social policy based on the principle of universal entitlements for all residents in terms of access to social benefits and social services. Taxation without representation also means denial of spending for the essential entitlements guaranteed in the Constitution. The principle of universal entitlements seeks to prevent the formation of inequalities and the foundation of the poor as a separate social group, whereas residualism/marginalism takes the form assisting the poor and the needy, and thus implicitly defining them as certain types of social groups.

The provincial parliaments in Pakistan should enact laws for establishment of local governments as ordained under Article 140A of the Constitution on the basis of social policy-they have so far just copied the previous outdated ones with patchwork here and there. The bureaucrats do not want to empower people through self-governance. They want to enjoy total control over resources. The local governments will not be meaningful unless entitled, within national economic policy, to have adequate financial resources of their own, of which they may dispose freely within the framework of their powers and for public welfare.

Taxes and self-reliance For achieving the goal of fiscal decentralisation, local governments’ financial resources must commensurate with the responsibilities provided for by the constitution and the law to ensure welfare of the people and ensure sustainable growth at grass root level. Part of the financial resources of local authorities should derive from local taxes and spent for providing universal entitlements and development. Pakistan must follow the model of welfare states where resources available to local governments are based on a sufficiently diversified and buoyant nature to enable them to keep pace with the real evolution of the cost of carrying out their tasks.

There is no political will to implementing any rational fiscal reform agenda, though general consensus on it exists in society. Addiction to borrowed money and lust for wasteful spending are the main stumbling blocks for achieving the cherished goal of self-reliance that can pave way for rapid growth, employment generation and substantial spending for social sectors.

The ever-widening fiscal deficit amongst many other reasons has its roots in wasteful funding of a monstrous government machinery, especially corruption-ridden-inefficient public sector enterprises (PSEs), and extending of tax-free perks and perquisites to elites. These profusely bleed the already scarce resources-both tax and non-tax.

The story of persistent failure of implementing a prudent fiscal policy in Pakistan and poor management of economic affairs is thus, not unknown or untold-it is even candidly admitted in all official documents, released from time to time, relating to taxation, public expenditures and public borrowing.

Expropriatory taxation The yearning for “more and more taxes” by successive governments-civilian and military alike-has become a source of irritation for the citizens. They argue as why to pay taxes when in return they do not even get basic amenities of life. In a true social democracy people pay taxes as their collective responsibility while the state looks after their needs. Pakistanis are subjected to exorbitant taxes as the country is caught in debt enslavement. The major reason for tax defiant behaviour is lack of trust in the government-abuse of taxpayers’ money for personal comforts and luxuries by the rulers. The State has failed to protect the life and property of the people, what to talk of providing them basic needs eg health, education and civic amenities. The populist argument against paying taxes is ‘why we should pay when the government cannot even ensure safety of our lives.’ This scenario and narrative is paving the way for radicalisation of society. Our so-called experts have never thought of analysing this as a significant internal security threat.

Over-taxation to the extent of expropriation is Pakistan’s real dilemma. Collection of unjust taxes is no answer to resolving existing maladies. Rather they add to them. Rise in internal and external debts is a security threat as economic destabilisation can lead to dismemberment of the State-as was proved in the case of erstwhile USSR. We cannot overcome challenges on political fronts, including the menaces of terrorism and militancy, unless we restructure our economy for social democracy. For this we need an all-out reforms in all institutions.

All of us should focus our attention to jobs and growth if we are to have any peace here. Yet our policymakers are tailing donors into thinking that all economics revolves around increasing tax/GDP. As if tax alone will solve all our problems.”

Level of taxation in a country is traditionally judged in terms of the ratio, which taxes bear to some measure of national income. The study of tax-GDP ratio is considered important because trends in taxation in a country or group of countries are analysed mainly in terms of this ratio, and the composition of tax revenues. Are inter country comparisons of taxation levels meaningful? Some fiscal experts have sharply criticized these attempts. According to critics, the economic, political, and institutional characteristics of individual countries are so different that neither theoretical nor empirical studies provide useful information of policy relevance. Tax-GDP ratios do not consider the fact that some countries are more favourably placed to levy and collect taxes than others. For example, Lotz and Morssan analysed a sample of 72 developed and developing countries to examine the relationship between tax ratio variations and differences in per capita income and degree of openness. The sample included a wide spectrum of dissimilar economies ranging from Nepal to Singapore. It is prima facie erroneous to compare Nepal’s high rural and agricultural economy with a high commercial and industrial city-state of Singapore. Generally the tax revenue to GDP ratio in developed counties has been high and in the less develops countries low.

The root cause of our economic woes is the outlandish living style of the elites off taxpayers’ money. Look at the residences of judges, generals and high-ranking civil officials with an army of servants and fleets of cars. Wasteful spending on elites and disinclination to tax the rich is playing havoc with the economy. Behind the present chaotic socio-economic and political situation in Pakistan, amongst other factors, is fiscal indiscipline.

A democratic tax system is one under which tax payments are based on the amount of benefits received from government services-the Scandinavian social democracy model is a good example to quote. In social democracies, the cost of government services are apportioned amongst individuals according to the relative benefits they enjoy. In economic terms, this is called “benefit principle” that presupposes determination of the incidence of public expenditure before deciding distribution of tax burden.

The existing tax system is a worst expression of manipulation and exploitation. A highly unjust and distorted tax base benefits the rich and mighty (exploitative elements having monopoly over economic resources) and fleeces the economically-deprived classes. There is no political will to tax the privileged classes in Pakistan. The common man is subjected to exorbitant sales tax (though standard rate is 17% but actual incidence is over 40% in many cases after applicable customs duty, regulatory duty, mandatory value addition and advance income tax). In return, a common citizen even does not get what is guaranteed by Constitution eg free education and health cover-what to speak of affordable shelter and transport. On the other hand, the mighty sections of society-monopolistic industrialists, absentee landowners, generals, judges and bureaucrats-get exemptions and concessions. The cost of tax free perks and perquisites to members of militro-judicial-civil and political elite alone is in billions-it is borne by taxpayers!

Determination of a tax base capable of measuring an individual’s ability-to-pay is a major problem of our tax system. In all democracies, this rule is followed by adopting progressive rate schedule for personal income tax and property tax. In Pakistan, we have moved from this policy to unequal sacrificial rule where the mighty militro-judicial-civil complex (now an integral part of our landed aristocracy by earning State lands as awards and rewards) and political elite are paying meagre taxes and actual incidence is shifted to the less-privileged. The businessmen are offered presumptive tax regime, even under income tax law, to pass on burden on the customers. The masses are overburdened with oppressive indirect taxes, ever rising costs of public utilities and petroleum products.

It was Louis XIV’s finance minister, Jean-Baptiste Colbert, who claimed that the art of taxation was “to pluck the maximum amount of feathers from the goose with the least amount of hissing”. Colbert’s view was close to the truth, even in today’s world, but taxation in his day was not used as an instrument to achieve a broad range of economic and social objectives. Rather, it was a tangle of practices and customs designed to finance wars, private and public works, as well as the pet schemes of the royal family-and their aristocratic hangers-on. In fact, until the 20th century, the notion of a progressive tax on income did not strike them as being virtuous. Our rulers are, however, still living in that state of mind.

In the second half of the 20th century, a number of governments in the West realised that taxation was indeed a multifaceted instrument which, if used sensibly, could help each society attain its economic and social goals. This required a delicate balance between rewarding entrepreneurship, innovation and risk-taking on the one hand, and the need to finance important public expenditures on the other, including education and social programmes, as well as the traditional public works which attracted Colbert. Not easy to do, and few countries, if any, can be fully satisfied with the balances they have struck. Pakistan, of course, is not among such countries.

There are only three main sources of tax revenue upon which government treasuries depend: income, capital and consumption. Too heavy a tax burden on any one of those will cause it to become unreliable as a source of revenue, as well as generating distortions and inequities. In some cases, it might spur tax evasion or drive part of the economy underground or in age of globalization flight of capital to tax havens. Any well-intentioned politician sees no limits to levels of taxation and redistribution. If an elected politician has the courage to tax and spend in a transparent way on his or her perceived worthy social objectives, then it must happen in the democratic way. The politician must be sanctioned or approved by the electorate to go for great revolution.

However, a government can be tempted to exercise a philosophy of social responsibility by penalising the productive sectors instead of introducing reforms which require greater political courage. Yet, in doing so, it runs the risk of undermining the economy’s growth potential. Many do not believe that tax systems should be over-burdened with the social convictions of politicians. Have individuals and corporations pay their fair share of taxes, yes! Have social charges disrupt the good functioning of economies, no! Excessive and unbalanced taxation can prevent many individuals and businesses from taking full advantage of the opportunities of the new knowledge-based economies.

Taxpayers (including businesses) should share the burden of protecting those who are vulnerable as a result of change, either through well-designed social protection measures or retraining, not through excessively rigid job protection measures and inflexible labour regimes that penalise productivity. That is why a fair and transparent tax system is so essential for maximising economic growth. In this regards, a detailed study [Towards Flat, Low-rate, Broad and Predictable Taxes, Islamabad: PRIME Institute, April 2016] is available that can be debated publically to find a workable tax model for Pakistan. Politicians must have the courage to achieve a sensible balance between income, capital and consumption taxes. And they must also have the courage to spend, not on ill-designed social programmes introduced more to collect votes than social returns, but on important investments in creating human capital, eg, education, training and health, and necessary public infrastructure to increase the productivity of the economy.

It is by no means an easy task in Pakistan. But one expects the public is increasingly suspicious of political motivations and better informed about the impacts of undisciplined public finance. At least, one hopes so! We must all do better. Independent observers should monitor tax data and survey the costs and benefits of various approaches to taxation that have been adopted, changed, abandoned and reinvented over many years; experts should give frank advice on reform and best practice, and help the government reach consensus on tax matters. Politicians listen to them. They should explore new challenges, such as the taxation of e-commerce, the problems of harmful tax competition and transfer pricing within large corporations. Simply put, the government must unshackle the constituent elements of economic growth by letting market forces play their respective roles. And governments must transfer the benefits of economic growth to enhance social well-being and cohesion through transparent and well-designed taxation. If the paradigm could be made to work, then Colbert’s geese would barely hiss at all!!

Tax policy should be aimed at achieving the cherished goal of distributive justice. The government should launch programmes, financed mainly through taxes, to solve the twin problems of unemployment and poverty. These welfare-oriented schemes may also include subsidised/free medical and educational facilities, low-cost housing, and drinking water facilities in rural areas, land improvement schemes, and employment guarantee programmes. Once people see the tangible benefits of the taxes paid, there will be better response to tax compliance. Taxes cannot be collected through harsh measures and irrational policies. The government must demonstrate by its action to the taxpayers that money collected from them is being spent for collective welfare.

Taxes for growth and prosperity One of the main tools of tax policy is to increase the level of savings and capital formation in the private sector partly for borrowing by the government and partly for enhancing investment resources within the private sector for economic development. On the contrary, Pakistani economic managers have not only failed to achieve this goal, they are ruthlessly taxing capital gains arising out of immovable property and shares to destroy creation of capital and incentives for investment that can boost growth. Tax is a byproduct of growth. With more growth we would have more taxes. The prevalent anti-growth taxes are the real cause of retarded economic growth, burgeoning fiscal deficit and insurmountable debt burden.

Recent years have experienced closure of large industries and stagnation in growth. Besides inefficiency, corruption and incompetence of Federal Board of Revenue (FBR), inconsistent, illogical, burdensome, complicated and expropriatory tax policies have forced the business community to search for safer havens abroad, depriving the country of invaluable capital. Similarly, foreign investors are reluctant to avail the tremendous Pakistani talent that goes to waste for lack of proper funding.

Economic challenges faced by Pakistan are multiple and grim-we are trapped in a deadly debt trap, but there is no will on the part of the rulers to come out of it. They are least pushed to accelerate growth, induce investment, stop wastage of resources and tap the real tax potential. Continuous surge in wasteful and unproductive expenses is no cause for concern. Rather, the entire emphasis on daily basis is on “more” (sic) taxes. Our total debt at present is about 68% of GDP which is increasing due to sheer callousness of our rulers. The last government during its tenure added Rs 6.3 trillion to our debt burden-an increase of 103% while the record of the present government is equally appalling. It has been borrowing heavily to pay earlier debts and bridging the fiscal gap-pushing debt servicing alone to Rs 1.5 trillion in 2015-16-nearly 68% of total revenue collection. The reckless borrowing to bridge burgeoning fiscal deficit is estimated to cross Rs 2 trillion this year. The position of balance of payment is also worsening. Current account deficit widened by 91% in the first five months (Jul-Nov) of 2016-17, increasing to $2.6 billion from $1.36 billion in the same period last year, according to data released by the State Bank of Pakistan (SBP). Inward remittances and Foreign Direct Investment are also showing negative trends.

(To be continued tomorrow)

(The writers, lawyers and partners in Huzaima, Ikram & Ijaz, are Adjunct Faculty at Lahore University of Management Sciences)

 

Top of Form

Bottom of Form

 

نوازشریف اپنی برطرفی کے بعد قوم کو شاہد خاقان عباسی کی شکل میں جو اگلا وزیراعظم دے کر جارہا ہے، زرا اس کے بارے میں آپ کو آگاہی دیتا چلوں:

میں نوازحکومت بننے کے کچھ عرصے بعد حکومت نے ایل این جی امپورٹ کا پراجیکٹ لانچ کیا جس میں تکنیکی اعتبار سے سوئی سدرن، سوئی ناردن، پی ایس او اور انٹرسٹیٹ گیس سسٹمز نامی کمپنیوں کی شرکت ضروری تھی۔

ایل این جی امپورٹ کرنے سے پہلے فیصلہ کیا گیا کہ کراچی پورٹ پر ایل این جی سٹور کرنے کا ٹرمنل کرائے پر لیا جائے اور اس کیلئے نوازشریف کے ذاتی دوست سیٹھ داؤد کی کمپنی اینگرو کے ساتھ معاہدہ کر لیا گیا جس کے مطابق اسے ہر روز 2 لاکھ 72 ہزار ڈالرز (تقریباً 3 کروڑ روپے روزانہ) کرائے کی مد میں ادا ہونے تھے، چاھے اس کا ٹرمنل استعمال ہو یا نہ ہو۔

یہ معاہدہ کرنے کیلئے سوئی سدرن کو پریشرائز کیا گیا جس کے ایم ڈی نے پہلے تو انکار کیا پھر وزیر پٹرولیم شاہد خاقان عباسی نے اسے تسلی دی کہ وہ معاہدہ سائن کرلے، کرائے کی ادائیگی پی ایس او کردیا کرے گا۔ معاہدہ سائن ہوگیا اور اسی دن سے سیٹھ داؤد کو 3 کروڑ روپے روزانہ کے حساب سے ملنا شروع ہوگئے۔

پھر اس کے بعد پی ایس او کی مینجمنٹ سے کہا گیا کہ وہ ملک میں بڑھتی ہوئی گیس کی قلت کے پیش نظر قطر سے ہنگامی بنیادوں پر ایل این جی امپورٹ کرے۔ پی ایس او چونکہ پبلک لمٹڈ کمپنی ہے اس لئے قواعد کی رو سے اس کے ایم ڈی نے اپنے بورڈ کی رضامندی کے بغیر ایسا کوئی کام کرنے سے انکار کردیا۔

جب پی ایس او نے انکار کیاتو وزارت پٹرولیم نے اسے ریگولر پے منٹس کی ادائیگی بند کردی۔ جونہی حکومت کی طرف سے پے منٹ ملنا بند ہوئی، پی ایس او نے ملک میں پٹرول کی سپلائی معطل کردی۔ یہ وہی وقت تھا جب نوازحکومت کی تیسری ٹرم کے کچھ عرصہ بعد پٹرول کا خوفناک بحران کھڑا ہوگیا تھا اور چند دن کیلئے پورے ملک میں پٹرول ملنا بند ہوگیا تھا۔

یہ بحران حکومت کا اپنا پیدا کردہ تھا۔ جب میڈیا اور عوام کا پریشر پڑا تو وزارت پٹرولیم نے اس بحران کا ذمے دار پی ایس او کو گردانتے ہوئے ایک ایگزیکٹو آرڈر جاری کرکے اس کا ایم ڈی اور بورڈ آف ڈائریکٹرز کو برخاست کردیا۔

پھر وزیرپٹرولیم نے شاہد اسلام نامی شخص کو پی ایس او کا ایم ڈی لگا دیا اور اسے بورڈ کی اتھارٹی بھی تفویض کردی جو کارپوریٹ سیکٹر کی تاریخ کا ایک انوکھا واقعہ تھا۔ شاہد اسلام نے چارج سنبھالتے ہی قطر کی ایک پرائیویٹ کمپنی ” کیو تھری ” سے ہوشربا ریٹس پر مہنگی ایل این جی خریدنے کا معاہدہ کیا اور اربوں روپے کی مالیت کی ایل این جی آرڈر کردی۔ چونکہ یہ خریداری قوانین کے برخلاف تھی اور پروکیورمنٹ کے رولز پر پورا نہیں اترتی تھی، اس لئے اوگرا کا ایکشن لیا جانا یقینی تھا۔

وزیرپٹرولیم شاہد خاقان عباسی کے پاس اس کا بھی حل موجود تھا۔ اس نے فوری طور پر اوگرا کے چئیرمین کو جبری رخصت پر بھیج دیا اور اوگرا کے بورڈ ممبران کی تقرری التوا میں ڈال دی جس سے اوگرا کے بورڈ کا کورم پورا نہ ہوسکا اور وہ پی ایس او کی جانب سے غیرقانونی مہنگے داموں ایل این جی کی فروخت پر اپنا اجلاس بلا کر کاروائی نہ کرسکی۔

یہ سب کچھ دیکھتے ہوئے سوئی ناردرن کے ایم ڈی نے ایل این جی ٹرمنل کانٹریکٹ پر دستخط کرنے سے انکار کردیا جس کی پاداش میں شاہد خاقان عباسی نے اسے بھی نوکری سے نکال کر نئے ایم ڈی کو اپوائنٹ کروا دیا۔

اوگرا نے پی ایس او کو ایک لیٹر جاری کردیا جس میں اسے ایل این جی کی غیرقانونی خرید اور اس کی قیمت کا سرٹیفیکیٹ پیش کرنے کو کہا۔ معاملہ خراب ہوتے دیکھ کر پی ایس او پر شئیرہولڈرز کا دباؤ پڑا تو اس نے جواب میں کہہ دیا کہ ایل این جی کی خریداری وزارت پٹرولیم کے کہنے پر کی۔ معاملہ میڈیا میں آیا اور وہاں سے ہوتا ہوا نیب تک پہنچ گیا۔ جب وزارت سے رابطہ کیا گیا تو اس نے نیب کے ڈر سے اس کی تصدیق کرنے سے انکار کردیا۔ اس کے نتیجے میں اربوں روپے کی ایل این جی کی پی منٹس پھنس کر رہ گئیں اور کوئی فریق بھی ذمے داری اٹھانے کو تیار نہ ہوا۔ مجموعی طور پر 200 ارب روپے کی ایل این جی کا آرڈر قطر گیا جس کی ادائیگی اب ٹیکس دہدنگان کی جیب سے، یعنی قومی خزانے سے ہوئی۔

اس کے ساتھ ساتھ نوازشریف کے دوست سیٹھ داؤد کو بھی ہر روز کے حساب سے 3 کروڑ روپیہ بغیر کسی ناغے کے ادا ہونا شروع ہوگیا، باوجود اس کے کہ اس کا ٹرمنل حکومت نے شاید ایک سال میں 10 فیصد بھی استعمال نہ کیا ہو۔

آپ یہ جان کر حیران ہوں گے کہ شاہد خاقان عباسی نے جس شاہد اسلام کو پی ایس او کا ایم ڈی لگایا تھا، یہ وہی شاہد اسلام تھا جو 1997 میں پی آئی اے کا چیف فنانشل آفیسر ہوا کرتا تھا اور خاقان عباسی اس وقت خود پی آئی اے کا چئیرمین ہوتا تھا۔ دونوں نے مل کر پی آئی اے کو اربوں کا نقصان پہنچایا جس کی وجہ سے مشرف نے ان دونوں کو جیل میں ڈال دیا تھا۔

2003 میں جب شاہد خاقان عباسی نے ائیربلیو نامی ائیرلائن شروع کی تو اس کا پارٹنر بھی شاہد اسلام ہی تھا، یعنی یہ دونوں ‘ پارٹنر اِن کرائم ‘ تھے اور ہیں۔

حضور، یہ ہیں وہ زرائع جن کی مدد سے ایک طرف قومی خزانے کو 200 ارب روپے کا چونا لگایا گیا اور دوسری طرف سیٹھ داؤد کو روزانہ کی بنیاد پر 3 کروڑ روپے ٹرمنل کے کرائے کے دے کر ان میں سے آدھی سے زیادہ رقم اپنا کمیشن وصول کیا گیا۔

آخری بات بھی سن لیں۔ قطر کی جس کمپنی سے 200 ارب روپے کی ایل این جی مہنگے داموں خریدی گئی، اس کا شئیرہولڈر وہی قطری پرنس ہے جس کا خط لے کر نوازشریف نے بے شرمی کی داستان لکھی تھی۔

یہ ہے کردار اس ” صادق اور امین ” نوازشریف کا، اور یہ رہا کردار اس وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کا جو نوازشریف اپنے بعد اس قوم کے سر پر مسلط کرنے جارہا ہے۔

ڈائن بھی سات گھر چھوڑ دیتی ہے، یہ کنجر تو اپنی دھرتی کو ہی لوٹتے رہے ہیں!!!

جب قائد اعظم ؒ سے رسیدیں مانگی گئیں

آصف محمود
قائد اعظم ثانی سے رسیدیں مانگنے کا انجام تو آپ سب کے سامنے ہے ، اہلِ دربار کانپ کانپ دہائی دیتے ہیں کہ جمہوریت خطرے میں پڑ گئی ہے ، لیکن کیا آپ جانتے ہیں کہ بابائے قوم حضرت قائد اعظم سے بھی رسیدیں مانگی گئی تھیں اور کیا آپ کو علم ہے جب ایک طالب علم نے حضرت قائد اعظم سے رسیدیں مانگیں تو ان کا رد عمل کیا تھا؟

یہ 1942 کی بات ہے ۔ بابائے قوم کو پاکستان کی جدوجہد کے لیے فنڈز درکار تھے، بابائے قوم نے اپنی قوم سے اپیل کر دی اور قوم نے اپنے قائد کی کال پر دیدہ و دل فرشِ راہ کر دیے ۔بڑے بوڑھے اور جوان تو رہے ایک طرف ، بچے اور حتی کہ یتیم خانوں کے بچے بھی نقدِ جاں ہتھیلی پر رکھے میدان میں آ گئے۔

احمد نگر کے امریکن سیشن ہائی سکول کے طلباء نے بابائے قوم کی خدمت میں اکتالیس روپے روانہ کیے ۔انہیں منی آرڈر کی رسید تو مل گئی کہ فمحترمہ فاطمہ جناح نے قائد اعظم کی جگہ یہ منی آرڈر وصول کر لیا ہے لیکن انہیں مسلم لیگ کی طرف سے کوئی رسید نہ ملی۔ چند دن انتظار کے بعد اب دو بچے وحید علی اور حمید علی قائد اعظم کو ایک خط لکھتے ہیں۔ دل تھام لیجیے اوربچوں کی معصوم گلابی اردو میں لکھا یہ خط پڑھیے :

’’ مسلم لیگ زندہ باد ، قاعدے اعظم زندہ باد ، پاکستان زندہ باد
بخدمت شریف عالی جناب محمد علی جناح کو از طرف سید وحید علی کے آداب عرض
عرض گذارش یہ ہے کہ ہم مسلم طلبائے امریکن سیشن ہائی سکول کے لڑکوں نے آپ کی خدمت میں مسلم لیگ الیکشن فنڈ کی مدد کے لیے 41 روپے روانہ کیے تھے ۔اور جس میں ہم نے التماس کیے تھے کہ پیسے ملتے ہی ہمارے پتے پتہ پر دفتر مسلم لیگ کی رسید روانہ کیجیے۔لیکن ابھی تک دفتر مسلم لیگ سے ہمیں کوئی رسید نہیں ملی۔حالانکہ ہمیں منی آرڈر کا فارم واپس مل گیا ہے اور اس پر یہ دستخط ہے ۔For MA Jinnah اور اس کے نیچے F Jinnah ۔میں آپ سے درخواست کرتا ہوں کہ آپ کو یہ منی آرڈر ملی یا نہیں ۔کیونکہ ہم نے ایک خط ( روزنامہ) اقبال کے ایڈیٹر کو بھی لکھے تھے ۔کہ اس کو اخبار میں شائع کر دے ۔لیکن نہ وہ اب تک شائع ہوئے نہ مسلم لیگ کے دفتر سے رسید آئی۔تو یہ کیا بات ہے۔یہ ہمیں جلد از جلد معلوم کریں۔اور اگر آپ کو چندہ مل گیا ہو گا تو اس کی رسیدہمارے پتہ پر اور اقبال میں اس کا مضمون ضرور بضرور شائع کرنے کے لیے ایڈیٹر کو لکھے۔
راقم
سید وحید علی حمید علی‘‘

ذرا غور فرمائیے ، ایک بچہ جسے معلوم ہے کہ اس کا منی آرڈر محترمہ فاطمہ جناح کو مل چکا ہے ، وہ صرف ا س بات پر خفا ہے کہ مسلم لیگ دفتر نے اسے رسید کیوں نہیں بھیجی۔وہ کہتا ہے:’’ ہمیں رسید نہیں ملی، یہ کیا بات ہے، یہ ہمیں جلد از جلد معلوم کریں‘‘۔لیکن کوئی اس بچے سے یہ نہیں کہتا حد ادب ، تمہیں احساس ہے تم کس سے مخاطب ہو ۔کوئی اسے ڈانٹتا نہیں کہ بے شرم تم حضرت قائد اعظم سے اکتالیس روپے کی رسیدیں مانگ رہے ہو۔بلکہ بابائے قوم حکم دیتے ہیں کہ منی آرڈر کا ریکارڈ دیکھا جائے اور فی الفور رسید روانہ کی جائے۔قائد اعظم سے اکتالیس روپے کا حساب مانگا جاتا ہے ،اور مانگنے والے کو حساب دیا جاتا ہے۔ یہ پاکستان کے قیام کی جدوجہد کی کہانی ہے۔اور اب قائد اعظم کے پاکستان کا یاروں نے وہ حشر کر دیا ہے کہ اربوں کی کرپشن کے الزامات ہیں اور حساب مانگا جائے تو اہلِ دربارپر رقت طاری ہو جاتی ہے کہ دیکھو سوال نہ پوچھو، اس سے جمہوریت خطرے میں پڑ جاتی ہے۔

جس نسل نے قائد اعظم کے ساتھ مل کر پاکستان بنایا تھا ، اس نے قربانیوں کی تاریخ رقم کی تھی۔ان قربانیوں اور اس جذبے کی ایک جھلک بچوں کے ان خطوط میں ملتی ہے جو اس دور میں قائد اعظم کو لکھے گئے۔یہ خط بتاتے ہیں کہ ریاست پاکستان، جسے آج کک بیکس ، کرپشن ، منی لانڈرنگ اور آف شور کمپنیوں کے ذریعے نوچا اور لوٹا جا رہا ہے ،یونہی وجود میں نہیں آ گئی، کتنی ہی معصوم خواہشات اینٹ گارے کی صورت کام آئیں تب یہ ملک بنا۔

جماعت دوم کے طالب علم جاوید احمد خان نے 14 اپریل کو بابائے قوم کو خط لکھا ، دل تھام کے پڑھیے کہ ان دو سطروں میں مقدس جذبوں کے ساون چھپے ہیں:’’قاید و اعظم کی خدمت میں عرض ہے کہ میں نے اپنے جمع کئے ہوئے سب پیسے جو مجھے میرے ابی جی دیا کرتے ہیں ٓاپ کو بھیج دئے ہیں۔میں نے سنا ہے کہ آپ ہم کو آزادی لے کر دیں گے‘‘۔

بہالولنگر سے پانچویں جماعت کے طالب علم احمد یار خان نے 7اپریل کو لکھا :’’ بخدمت جناب محمد علی جناح ، زندہ باد قائد اعظم تا ابد زندہ باد، پانچ روپیہ جو مجھ کو میرے والدین نے امتحان میں کامیاب ہونے پر دیےِ خدمت اقدس میں پیش کر رہا ہوں‘‘۔

بانکی پور کے مسلم ایچ ای سکول کے جماعت نہم کے طالب علم نے لکھا:’’ محترم قائد، آپ کی تابعداری میرا فرض ہے۔میں نے فیصلہ کیا ہے کہ ہر مہینے سات دن تک بغیر ناشتے کے جایا کروں گا اور اس سے جو پیسے بچیں گے آپ کو بھیجوں گا‘‘۔

نئی دہلی سے چھ سالہ تسنیم اعجاز نے لکھا:’’ میرے پاس عیدی کے اور امتھان کے انعام میں جو ملا تھا سو 100روپیہ جمع تھے ان کو جناب کی خدمت میں پیش کر رہا ہوں،آپ اس کو مسلم لیگ کے چندے میں جمع فرما لیں‘‘۔

ریواڑی کے چوتھی جماعت کے فضل الرحمن نے پورا ایک ماہ اپنا جیب خرچ جمع کیا اور وہ صرف تین پیسے بن سکا۔ 16اگست کو غریب باپ کے اس معصوم بیٹے نے وہ تین پیسے قائد اعظم کی خدمت میں پیش کر دیے اور خط میں لکھ دیا کہ ہیں تو تین پیسے مگر پورے ایک مہینے کا جیب خرچ ہے۔

اور ذرا یہ خط پڑھیے جو صوبہ مدارس کے شہر کڑپہ کے ’ یتیم خانہ اسلامیہ ‘ کے طلباء کے قائد کو لکھا:
’’ ہمارے اچھے قائد اعظم!آپ نے ہندوستان کے مسلمانوں سے چندے کی درخواست کی ہے ، یہ ہم کو اخباروں کے ذریعے معلوم ہوا ۔ اور آپ کو یہ معلوم ہے کہ ہم یتیم ہیں، اور ہمارے کھانے پینے اور کپڑے وغیرہ کا انتظام یتیم خانے سے ہوتا ہے۔ہمارے ماں باپ نہیں ہیں جو ہم کو روز پیسے دیں۔پھر بھی ہم نے طے کر لیا کہ آپ کی خدمت میں ضرور کچھ بھیجیں گے۔اس لیے ہم نے ہم کو دھیلہ پیسہ جو کچھ بھی جہاں کہیں سے ملا اس کو جوڑنا شروع کردیا یہاں تک کہ تین روپیہ دو آنے کی رقم جمع ہوئی ۔اب اس کو آپ کی خدمت میں روانہ کر رہے ہیں۔آپ اس کو قبول کیجیے۔ ضرور قبول کیجیے۔ہم آپ سے اقرار کرتے ہیں کہ اللہ تعالی ہم کو زندہ رکھا اور ہم خوب پڑھ کر جوان ہوئے تو مسلم لیگ کی بڑے زور سے خدمت کریں گے۔اور جب ہم کمانے لگیں گے تو بہت سے روپئے چندے میں دیں گے،والسلام ، ہم ہیں آپ کے دعا گو، یتیم خانہ کڑپہ کے یتیم‘‘۔

تو صاحب یوں ارمانوں کا گلا گھونٹ کر ، قربانیاں دے کر یہ پاکستان بنا تھا ۔ افسوس آج اسے اہلِ ہوس نے اپنی چراگاہ بنا لیا۔سوچتا ہوں جو بچہ قائد اعظم سے اکتالیس روپوں کی رسید مانگ سکتا ہے ، کہیں جنت میں ہمارے بابا ئے قوم کے پاس جا کر پھر سراپا سوال نہ بن جائے کہ جناب پیارے قائد اعظم ، ہم نے تو یہ ملک بنانے کے لیے ناشتے چھوڑ دیے تھے اور ناشتے کے پیسے آپ کے قدموں میں رکھ دیے تھے، ہم تو کھلونوں سے نہ کھیل سکے اور کھلونوں کے پیسے بھی آپ کو دے دیے کہ آپ ہمارا پاکستان بنائیں گے ، ہم تو یتیم تھے مگرآپ کی پکار پر لبیک کہتے کھنچے چلے آئے تھے، آپ کو یاد ہو گا پیارے قائد اعظم صاحب! پورے یتیم خانے نے تین روپے دو آنے آپ کی خدمت میں پیش کر دیے تھے۔ اچھے قائد اعظم آپ کو یاد ہے میں نے آپ سے اکتالیس روپے کا حساب مانگا تھا اور آپ نے مجھے حساب دیا تھا۔،لیکن پیارے قائد، آپ نے اپنے بعد ملک کن لوگوں کو سونپ دیا۔یہ کیسی مسلم لیگ ہے اور کیسے حکمران ہیں ، کوئی ان سے رسید مانگے تو یہ آگے سے کہتے ہیں کہ ہمارے خلاف یہودی سازش ہو رہی ہے۔

اقامہ پانامہ سے زیادہ سنگین معاملہ ؟؟*

انتخاب *سید مدبر شاہ

ذرا سوچئے پاکستان کے یہ تاجر سیاست دان آخر جعلی تنخواہوں پر سعودی عرب اور یو اے ای کے اقامے کیوں رکھتے ہیں جبکہ پول کھل جانے پر قومی اسمبلی کی رکنیت تک معطل ہونے کا خطرہ ہے ؟؟؟

*دو وجوہات ہیں ۔*

پہلی ۔۔۔۔۔ سویٹزرلینڈ سمیت کئی ممالک کے فارن بینکس، اکاؤنٹ کھولنے پر آپ کی نیشنلٹی نہیں بلکہ ” رہائش ” رپورٹ کرتے ہیں یعنی وہ جگہ جہاں آپ رہتے ہیں اور ٹیکس ادا کر تے ہیں۔

ان اقاموں کی بدولت ہمارے کرپٹ سیاستدان ان بینکوں میں خود کو یو اے ای یا سعودی عرب کا ٹیکس دہندہ ظاہر کرتے ہیں۔ تنخواہ وہ بے شک جعلی لیں لیکن ٹیکس وہاں وہ اصلی ادا کرتے ہیں۔

اب ان ممالک میں یہ سہولت ہے کہ اقامے کے لیے وہاں آپ کو مستقل رہائش رکھنے کی ضرورت نہیں بلکہ چھ ماہ میں آپ کا ایک وزٹ کافی ہوتا ہے۔

مطلب سیاست کرو پاکستان میں رہائش ظاہر کرو وہاں کی۔

*اس کا فائدہ یہ ہوتا ہے*
کہ اگر کبھی حکومت پاکستان آفیشلی ان ممالک کے بینکوں سے رابطہ کر کے پاکستانیوں کا ریکارڈ طلب کرے تو ہمارے وہ کرپٹ سیاستدان صاف بچ جاتے ہیں جنہوں نے سعودی یا یو اے ای کے اقاموں پر اکاؤنٹس کھولے ہیں۔
*وہ فارن بینک ان کے نام پاکستان کو نہیں بتاتے۔*

اسی لیے سابقہ وزیراعظم میاں محمد نواز شریف نے بھی جعلی ملازمت پر یو اے ای کا اقامہ رکھا ہوا تھا تاکہ اگر کل اس کے حوالے سے معلومات طلب کی جائیں تو سوئس اور برٹش بینک اسکا ریکارڈ پاکستان سے شیر نہ کریں۔

آخر کیا وجہ تھی کہ جب جے آئی ٹی دبئی گئی تھی تو وزیراعظم پاکستان پاگلوں کی طرح دبئی حکومت سے رابطہ کرنے کی کوشش کر رہا تھا؟ اور محض “فون اٹھانے” کے لیے ان کو حکومت پاکستان کی طرف سے آفیشلی درخواست کی تھی ۔

اور غالبا اسی لیے ان کو اپنی پارٹی میں کوئی ایسا شخص نہیں مل رہا جس کے پاس اقامہ نہ ہو تاکہ اس کو وزیراعظم بنا سکیں۔

*اقامے کا دوسرا فائدہ یہ ہے کہ بروقت بھاگنے کا یہ سب سے تیز ترین ذریعہ ہے۔*

آئین پاکستان کے مطابق قومی اسمبلی کے اراکین دہری شہریت نہیں رکھ سکتے۔ اس لیے اگر انہیں اچانک پاکستان سے بھاگنے کی ضرورت پڑے تو انہیں دوسرے ممالک کے ویزے کے لیے اپلائی کرنا پڑتا ہے۔ جس سے پورا پاکستان باخبر ہوجاتا ہے۔ ان اقاموں کی بدولت یہ صرف جہاز میں بیٹھتے ہیں اور راتوں رات نکل جاتے ہیں۔

اقامہ پانامہ سے بڑا اور زیادہ سنگین ایشو ہے۔ پانامہ میں صرف چند لوگوں کا نام آیا ہے لیکن اقامہ میں 80 فیصد پارلیمنٹ پکڑی جائیگی اور اگر یو اے ای اور سعودی حکومت نے تعاؤن کیا تو ان کے بینکوں کے وہ وہ ریکارڈز سامنے آئنگے کہ لوگ پانامے کو بھول جائنگے۔

سپریم کورٹ نے نہایت دور اندیشی سے ان سارے معاملات کو سمجھتے ہوئے بلکل درست جگہ پر نشانہ لگایا ہے۔ 😉

احسن اقبال صاحب نے کتنی معصومیت سے فرمایا تھا کہ ” مدینہ کا اقامہ اور ملازمت ہر مسلمان کے لیے ایک سعادت ہے ” ۔۔۔ کیا واقعی ؟؟ *بدبخت لوگ اپنے خود غرضانہ مقاصد کے لیے اسلام کو بیچنے سے باز نہیں آتے۔* 😡

اسلام کو بیچنے سے یاد آیا کہ مولانا فضل الرحمن کو اقامے والے فیصلے پر سخت تحفظات ہیں

سپریم کورٹ کے فیصلے کا اردو ترجمہ)

سپریم کورٹ نے اپنے فیصلے میں تحریر کیا ہے کہ قومی احتساب بیورو (نیب) اس فیصلے کے 6 ہفتوں کے اندر مشترکہ تحقیقاتی ٹیم (جے-آئی-ٹی ) کی جانب سے اپنی رپورٹ میں اکٹھے کیے گئے اور ذکر کردہ مواد کی روشنی میں وفاقی تحقیقاتی ادارے (ایف-آئی-اے ) اور نیب کے پاس موجود مواد ( جس کا اِس سے تعلق بنتا ہو) کی بنیاد پر احتساب عدالت راولپنڈی کو درج ذیل ریفرنس بھیجے…!

(ا) میاں محمد نواز شریف (مدعا علیہ نمبر 1)، مریم نواز شریف (مریم صفدر) (مدعا علیہ نمبر 6)، حسین نواز شریف (مدعا علیہ نمبر 7)، حسن نواز شریف (مدعا علیہ نمبر 8) اور کیپٹن ریٹائرڈ محمد صفدر (مدعا علیہ نمبر 9) کے خلاف ایون فیلڈ کی جائیداد (فلیٹ نمبر 16، 16 اے، 17 اور 17 اے ایون فیلڈ ہاؤس، پارک لین، لندن، یو-کے) سے متعلق ریفرنس بھیجا جائے۔ اس ریفرنس کی تیاری اور اسے فائل کرنے کے عمل میں نیب، پانامہ کیس کے تفصیلی فیصلے میں بیان کی گئی تحقیقات میں حاصل ہونے والے مواد کو بھی دیکھے،

(ب) مدعا علیہ نمبر 1 (نوازشریف)، نمبر 7 (حسین نوازشریف) اور نمبر 8 (حسن نوازشریف) کے خلاف فیصلے میں ذکر کی گئی عزیزیہ اسٹیل مل اور ہل میٹل اسٹیبلشمنٹ سے متعلق ریفرنس بھیجا جائے،

(پ) مدعا علیہ نمبر 1 (نوازشریف)، نمبر 7 (حسین نوازشریف) اور نمبر 8 (حسن نوازشریف) کے خلاف بھی تفصیلی فیصلے میں جسٹس اعجاز افضل، جسٹس عظمت سعید اور جسٹس اعجاز الاحسن کے متفقہ طور پر لکھے گئے پیراگراف نمبر 9 میں بیان کی گئی کمپنیوں سے متعلق ریفرنس بھیجا جائے،

(ت) مدعا علیہ نمبر 10 (اسحاق ڈار) کے خلاف بھی اپنی آمدن سے زائد اثاثے اور فنڈز رکھنے پر ریفرنس بھیجا جائے۔ جس کا ذکر کیس کے تفصیلی فیصلے میں جسٹس اعجاز افضل، جسٹس عظمت سعید اور جسٹس اعجاز الاحسن کے متفقہ طور پر لکھے گئے پیراگراف نمبر 9 میں موجود ہے،

(ج) نیب اپنی کارروائی میں دیگر تمام افراد بشمول شیخ سعید، موسیٰ غنی، کاشف مسعود قاضی، جاوید کیانی اور سعید احمد، (جن کا بلواسطہ یا بلاواسطہ مدعا علیہ نمبر 8 (حسن نواز)، مدعا علیہ نمبر 7 (حسین نواز)، مدعا علیہ نمبر 6 (مریم نواز)، مدعا علیہ نمبر 1 (نوازشریف) اور مدعا علیہ نمبر 10 (اسحاق ڈار) کے اقدامات سے تعلق بنتا ہے جن کے ذریعے انہوں نے اپنی ظاہر شدہ آمدنی سے زائد کے اثاثے اور فنڈز حاصل کیے) کو بھی شامل کرے،

(چ) اگر کوئی نیا اثاثہ سامنے آتا ہے تو نیب سپلیمنٹری (ضمنی) ریفرنس بھی بھیج سکتا ہے،

(ح) احتساب عدالت ریفرنس فائل کیے جانے کی تاریخ کے بعد 6 ماہ کے اندر مذکورہ ریفرنس پر اپنی کارروائی مکمل کرے،

(خ) کیس کے دوران اگر احتساب عدالت کو مذکورہ مدعا علیہان یا کسی اور شخص سے کوئی ایسی ڈیڈ، دستاویز یا بیان حلفی ملتی ہے جو کہ جعلی، غلط، جھوٹی یا من گھڑت ہو تو اس شخص کے خلاف قانون کے تحت کارروائی کرے،

2۔ لہٰذا یہ بات واضح ہوتی ہے کہ 2013 کے عام انتخابات میں جمع کرائے گئے اپنے کاغذات نامزدگی میں 1976 کےعوامی نمائندگی ایکٹ (روپا) کے سیکشن 12 (2) (ایف ) کے تحت کیپیٹل-ایف-زیڈ-ای جبل علی (کمپنی)، متحدہ عرب امارات سے اپنے قابل وصول اثاثوں کو ظاہر کرنے میں ناکامی اور جھوٹا بیان فراہم کرنے پر مدعا علیہ نمبر 1 میاں محمد نواز شریف عوامی نمائندگی ایکٹ (روپا) کے سیکشن 9 (ایف) اور اسلامی جمہوریہ پاکستان کے 1973 کے آئین کے سیکشن 62 (1) (ایف ) کے تحت ایماندار نہیں رہے اس لیے وہ مجلس شوریٰ (پارلیمنٹ) کی رکنیت کیلئے نااہل ہیں۔

3۔ الیکشن کمیشن آف پاکستان فوری طور پر میاں محمد نواز شریف کو مجلس شوریٰ (پارلیمنٹ) کی رکنیت سے نااہل قرار دینے کا نوٹیفکیشن جاری کرے، جس کے بعد وہ پاکستان کے وزیراعظم نہیں رہیں گے۔

4۔ پاکستان کے صدر ملک کے آئین کے تحت ضروری اقدامات کرکے جمہوری نظام کو یقینی بنائیں۔

5۔ معزز چیف جسٹس آف پاکستان سے گزارش کی جاتی ہے کہ وہ اس فیصلے کے نفاذ، نیب اور احتساب عدالت کی کارروائیوں کی نگرانی کے لیے کسی معزز جج کو نامزد کریں۔

6۔ یہ عدالت مشترکہ تحقیقاتی ٹیم (جے-آئی-ٹی) کی سخت محنت، کوششوں، تعاون اور عدالتی احکامات کے عین مطابق مفصل اور جامع رپورٹ جمع کرانے کو سراہتی ہے۔ ان ممبران کو مکمل تحفظ فراہم کیا جائے گا اور ان کے خلاف کوئی بھی کارروائی بشمول تبادلے و تقرری سپریم کورٹ کے معزز چیف جسٹس کی جانب سے نامزد کیے گئے معزز نگران جج کو بتائے بغیر نہیں کی جا سکے گی…!

نااہل شریف

قارئین تصیح فرمالیں۔ گزشتہ کالم میں میں نے دو لفظ درست لکھے تھے لیکن غلطی سے غلط چھپ گئے۔ لفظ ’’فائنانس‘‘ ہے فنانس نہیں، اسی طرح ’’ہائوزنگ‘‘ ہے ’’ہائوسنگ‘‘ نہیں حالانکہ عموماً یونہی لکھے جاتے ہیں جو غلط ہے۔ گزشتہ کالم کا عنوان تھا ’’اس کا انجام دیکھنا ہے مجھے‘‘ تب تک ’’فیصلہ‘‘ کی تاریخ اور وقت کا کسی کو علم نہ تھا اور یہ مصرعہ میں نے اپنےاس شعر سے لیا؎
جس کا آغاز میں نے دیکھا تھا
اس کا انجام دیکھنا ہے مجھے
انجام سامنے ہے اور استاد محترم صوفی تبسم یاد آتے ہیں جو برسوں پہلے لکھ گئے۔
’’آغاز بھی رسوائی انجام بھی رسوائی‘‘
یہی زندگی ہے اور یہی اس کا سبق بھی اگر کوئی سیکھنا سمجھنا چاہے کہ کانٹے کاشت کر کے کوئی کنول نہیں کاٹ سکتا۔ تم بدی بیج کر نیکی کی فصل نہیں اٹھا سکتے۔ تم شرپھیلا کر خیر نہیں سمیٹ سکتے اورانگارے دہکا کر اوس کی آس؟
محاورہ ہے ’’تھوتھا چنا باجے گھنا‘‘ آپ کو وہ وزیر یاد ہوگا جو خود کو لوہے کا چنا بتایا کرتا۔ میں نے ’’میرے مطابق‘‘ میں جواباً کہا تھا کہ اگر سپریم کورٹ پر حملہ کا ایکشن ری پلے ہوا تو اس بار ان کے دانت اور مسوڑھے ہی نہیں جبڑے بھی توڑ دیئے جائیں گے سو اسلام آبادمیں بندوبست پورا تھا۔ ریڈ الرٹ، رینجرز اورایف سی تعینات تھے اور ریڈزون سیل، سخت سیکیورٹی، 3 ہزار اہلکار تیار تاکہ کوئی گلو بٹ ماضی کی تاریخ دہرانے کی حماقت کرے تو اسے عبرت کا نشان بنا دیا جائے۔
ضمیر مردہ نہ ہو، ذہن بنجر نہ ہو، روح میلی نہ ہو اور ملک سے تھوڑی سی بھی محبت ہو تو آدمی اس فیصلہ کو برکت کیلئے گھر میں آویزاں کرے کہ ان شاء اللہ ملک کی سمت تبدیل کرے گا بشرطیکہ فالو اپ سے محروم نہ رہے اور اس کی نسل بڑھتی چڑھتی اور پھولتی پھلتی رہے۔ سرغنے گئے تو ان کے پیچھے پیچھے ان کے پالتو بھی جائیں تاکہ دھرتی کا یہ حصہ افقی عمودی قسم کی کرپشن سے پاک ہو سکے کہ اس مافیا نے تو ہر قسم کی کرپشن کو کلچر، وے آف لائف اور سکہ رائج الوقت بنا دیا تھا لیکن وہاں دیر سےہے اندھیر نہیں۔ اس کی لاٹھی بے آواز ہوتی ہے، اور ات خدا دا ویر…..سودن چورکا ہو بھی تو قدرت ایک آدھ دن سادھ کیلئے وقف کردیتی ہے اور فیصلہ کا دن ایسا ہی ایک روشن دن تھا۔ میں روز اول سے کہہ رہا ہوں کہ یہ مافیا ملکی قانون نہیں قانون قدرت کی زد میں ہے جس کی ضرب شدید بڑے بڑے فرعونوں، نمرودوں، شدادوںکو پاش پاش کردیتی ہے، یہ تو کسی کھاتے میں ہی نہیں۔
عوام نے برف فروشوں کو بادشاہ بنا دیا۔
عوام نے دست کار، مزدوروں کو مہابلی بنا دیا۔
پاتال سے اٹھا کر اوج کمال تک پہنچا دیا۔
جواباً انہوں نے عوام کو کیا دیا؟
دھوکہ در دھوکہ …..فریب در فریب…..جھوٹ در جھوٹ۔
’’یہ لوگ جرم کرتے ہیں، ان کو خدا کے ہاں ذلت اور عذاب شدید ہوگا، اس لئے کہ مکاریاں کرتے ہیں‘‘
(سورۃ الانعام آیت 124)
’’گنہگار اپنے چہرے ہی سے پہچان لئے جائیں گے تو پیشانی کے بالوں اور پائوں سے پکڑ لئے جائیں گے‘‘۔
(سورۃ الرحمٰن آیت 41)
’’مومنو! جو پاکیزہ چیزیں خدا نے تمہارے لئے حلال کی ہیں، ان کو حرام نہ کرو اور حد سے نہ بڑھو کہ خدا حد سے بڑھنے والوں کو دوست نہیں رکھتا‘‘۔
(سورۃ المائدہ آیت 87)
’’اور اللہ جس کو چاہتا ہے سیدھا رستہ دکھاتا ہے‘‘۔
(سورۃ البقرہ آیت 213)
’’جو لوگ اپنے (ناپسند) کاموں سے خوش ہوتے ہیں اور جو کرتے نہیں ان کیلئے چاہتے ہیں کہ ان کی تعریف کی جائے، ان کی نسبت خیال نہ کرنا کہ وہ عذاب سے رستگارہو جائیں گے، انہیں درد دینے والا عذاب ہوگا‘‘۔
(سورۃ آل عمران آیت 188)
وقت بدل چکا۔
اب اپنی 60کروڑ روپے کی گھڑی سے کہو اسے تبدیل کرنے کی کوشش کر دیکھے کہ قیمتی ترین گھڑی بھی برا وقت تبدیل نہیں کرسکتی….. نواز فیملی سے بھی بڑا امتحان ان کے سیاسی اور فکری ’’ورکرز‘‘ کا ہے کہ وہ شخصیت پرست ہیں یا وطن پرست؟ ہڈیاں، چیچھڑے، مفادات، مراعات کافی ہوگئیں۔ ان کی تاریخ گواہ ہے کہ نہ یہ عوام کے دوست ہیں، نہ افواج سے ان کی بنتی ہے اور عدلیہ پر یلغار بھی ان کے چہرے پر چیچک کے داغوں کی طرح ہمیشہ ’’چمکتی‘‘ رہے گی۔ادارے انہوں نے روند کے رکھ دیئے۔
دیر آید درست آید۔
نواز شریف…..نااہل شریف۔
کاش نظام ایسا ہو کہ چور پکڑنے میں پینتیس سال نہ لگیں۔ کیسا خاندان تھا جو پاکستان کےتقریباً پینتیس سال کھا گیا۔
یہ انجام نہیں آغاز ہے۔
جس کا آغاز میں نے دیکھا تھا
اس کا انجام دیکھنا ہے مجھے
نہ صادق ہے نہ امین
جھوٹا ہے اور خائن بھی
گارڈ فادر گیا لیکن گینگ یعنی بچے بلونگڑے ابھی باقی ہیں اور صرف سیاست میں نہیں، ہر شعبہ حیات میں ان کے جرثومے باقی ہیں۔ ’’استعفیٰ نہیں دوں گا‘‘ والی بڑھک پر کہا تھا میاں نواز ’’سو جوتے سو پیاز‘‘ کس طرف رواں دواں ہیں لیکن ابھی تو پارٹی شروع ہوئی ہے…..ابھی تو مال مسروقہ کی واپسی کا بندوبست شروع ہونا ہے۔ نوازشریف ضیاء الحق کی ’’باقیات‘‘ تھا لیکن نواز شریف کی ’’باقیات‘‘ ابھی باقی ہیں لیکن یہ ’’سیاپا گروپ‘‘ اور ’’چنڈال چوکڑی‘‘ کب تک؟
میری ذاتی جنگ تو 24,23سال پر محیط ہے۔ دل کرتا ہے کہ چند کئی سالوں پرانے کالم ری پروڈیوس کروں لیکن جشن منانے سے زیادہ یہ شکر منانے کا وقت ہے۔ بے شک وہی ہے جو عزت دیتا ہے اور ذلت بھی۔
عوام کومبارک ہو۔
عدلیہ کو سلام۔
اور عمران خان کو…..
ہاتھوں میںہاتھ پکڑے ہوئے یوں کھڑے تھے لوگ
دریا کو بھی گزرنے کا رستہ نہیں ملا