Month: February 2017

کیا اسلاف کا ایمان کمزور تھا؟؟؟

تحریر:—- وسعت اللہ خان جو لوگ وسطی اور جنوبی ایشیا کی نفسیات جاننے والے عصرِ حاضر کے مغربی لکھاریوں سے واقف ہیں وہ برطانوی مورخ ولیم ڈال رمپل سے بھی واقف ہوں گے۔ گذشتہ ہفتے سیہون میں قلندر کے مزار پر خود کش حملے کے بعد اخبار گارڈین میں ان کا ایک مضمون چھپا۔ ایک جگہ لکھتے ہیں، ’’چند برس پہلے جب میں سیہون گیا تو قلندر کے مزار سے ذرا فاصلے پر ایک حویلی میں قائم مدرسے کے نوجوان مہتمم سلیم اللہ سے ملاقات ہوئی۔ سلیم اللہ ایک پڑھا لکھا آدمی ہے۔ اس نے بلا لاگ و لپیٹ شریعت و تصوف پر اپنے خیالات کا اظہار کیا۔ بقول سلیم اللہ ہم مزار پرستی کے مخالف ہیں۔ قرآنی تعلیمات اس بابت بالکل واضح ہیں کہ مردے کچھ نہیں دے سکتے بھلے وہ ولی ہی کیوں نہ ہوں۔ قبر پرستی اور بت پرستی ایک ہی سکے کے دو رخ ہیں۔ میری بات لکھ لو کہ طالبان کی مزید شدت پسند شکل پاکستان میں آ رہی ہے۔ خلافت قائم ہونے کے بعد یہ ہمارا فرض بن جائے …

Segregation of Hindus and Muslims in India very strong, says scholar

SHAZIA HASAN DR Thomas Hansen.—White Star KARACHI: It was overwhelmingly depressing and alarming to listen to professor in South Asian Studies and Anthropology at Stanford University Dr Thomas Hansen’s talk titled ‘The India that does not shine’ about how Muslims became the poorest community in India at the Habib University here on Thursday. The power dynamics going against the Muslim community in India go back to before partition. There were many conflicts then too. And not much has changed since then. Actually, the past was left unfinished as its frictions carry on. “India has not been taking care of its Muslim population after independence,” said Dr Hansen. Read more: How oppressed are Muslims in India? He said that one of the problems for Muslims in India now was the informalisation of their economy, and it was an old story “There is a tendency to hire within their community. But then this is also because Muslims have been kept away from formal employment,” the professor said. “The Muslim decline has happened alongside the riots of lower-caste …

میری اور اس کی ملاقات بہشت کے بند پڑے دروازے پر ہوئی تھی

  نور الہدی شاہ میں اُس سے ذرا دیر پہلے، بڑی لمبی اور کٹھن مسافت کے بعد، پیچیدہ در پیچیدہ راستوں سے گزرتی، اپنے لہولہان پُرزوں کا بوجھ اُٹھائے، تھکن سے چوُر بہشت کے بند پڑے دروازے تک پہنچی تھی اور ٹوٹ چکی سانس کے ساتھ دروازے کے سامنے یوں آ گری تھی، جیسے شکار ہو چکا پرندہ! مجھ سے کچھ ہی دیر بعد وہ بھی لہولہان، ایک ہاتھ میں اپنا کٹا سر پکڑے ہوئے اور دوسرے ہاتھ سے اپنے ٹکڑوں کا ڈھیر گھسیٹتا، ہانپتا ہوا، میرے سامنے بہشت کے بند دروازے پر یوں اُترا تھا، جیسے بہت جلدی میں اندھا دھند دوڑا چلا آ رہا ہو! اپنے اِرد گِرد کا بھی ہوش نہ تھااُسے! بس پہنچتے ہی اُس نے بہشت کے دروازے سے اپنے پُرزے اور تن سے جُدا ہو چکا سر ٹکرانا اور چلّانا شروع کر دیا کہ “دروازہ کھولو ۔۔۔ میں آ گیا ہوں ۔۔۔۔ حوروں کو بتاؤ میں پہنچ چکا ہوں ۔۔۔ فرشتوں سے کہو میں بہشت کے دروازے پر کھڑا ہوں۔۔۔ فرشتو! ۔۔۔۔۔ حورو! ۔۔۔۔ آؤ ۔۔۔۔ مجھے سلام پیش …

اولڈ ہوم

تحریر:ساحرہ ظفر لبوں پہ  اس کے بددعا نہیں ہوتی بس ایک ماں ہے جو کبھی خفا نہیں ہوتی سفید بال، کانپتے ہاتھ ،جریوں بھرا چہرہ ،آنکھوں میں کئی سوال سجائے ہوئے اداس نظریں ادھر اُدھر دوڑاتے ہوئے بس ایک ہی اُمید ہمیں گھر  واپس جانا ہے ہمیں گھر  واپس جانا ہے باہر گومنے پھرنے جانا ہے لیکن یہ  سب جانتے ہیں کہ ہمارا کوئی گھر نہیں کوئی اپنا نہیں ہے ۔ مطلب  رشتےدار تو بہت ہیں بہن بھائی سب ہیں لیکن اپنا کوئی نہیں ہےکسی کے پاس اتنی جگہ نہیں ہے کسی کے پاس فالتو کا وقت نہیں

Financing burden of CPEC

ISHRAT HUSAIN — UPDATED about 5 hours ago  WHATSAPP 25 COMMENTS EMAIL PRINT  The writer is former governor of the State Bank of Pakistan. The ongoing debate on the impact of CPEC projects on future external payments’ obligations is welcome, but should be informed by analysis based on facts rather than opinion. The total committed amount under CPEC of $50 billion is divided into two broad categories: $35bn is allocated for energy projects while $15bn is for infrastructure, Gwadar development, industrial zones and mass transit schemes. The entire portfolio is to be completed by 2030. Therefore, the implementation schedule would determine the payments stream. Energy projects are planned for completion by 2020, but given the usual bureaucratic delays, it won’t be before 2023 that all projects are fully operational. Under the early harvest programme, 10,000 MW would be added to the national grid by 2018. Therefore, the disbursement schedule of energy projects is eight years (2015-2023). Infrastructure projects such as roads, highways, and port and airport development, amounting to $10bn, can reasonably be …

How oppressed are Muslims in India?

Nida Kirmani Muslims offer Eid prayers at the Jama Masjid, Delhi | Reuters Muslims in India form the largest religious minority in the country. According to the 2011 Census, they comprise 14.4 per cent of India’s total population — roughly 174 million people. To use the word ‘minority’ for them, therefore, is misleading: they are the third-largest Muslim population anywhere in the world, after Indonesia and Pakistan. Minority status, however, refers to a group’s relative power vis-à-vis other groups rather than to its numbers alone (note the case of women everywhere or blacks in South Africa during the apartheid). In that sense, then, Indian Muslims certainly are a minority, particularly when one considers the growing influence of Hindu right-wing forces since the 1980s. But just how oppressed are Muslims in India? For Pakistanis – and particularly for those whose families migrated from India – this question is a source of endless curiosity, not the least because the answer either justifies or undermines the very notion of the Pakistani nation-state. If Indian Muslims, in fact, are …

جنگل منگل

  تحریر:ساحرہ ظفر “میرا  اور تمھارا معاہدہ صرف اس جنگل تک آنے کا ہوا تھا  یہ دیکھو لمبے لمبے دانت ناکام  جانورو میں تم سب کو کھا جاؤں گا ایک ایک کر کے مگر میں نرم دل ہوں  میں تم سب کو جہموری حق دوں گا کہ تم لوگ اپنا فیصلہ آپ کر سکو تاکہ مجھے اپنا فیصلہ  کرنے میں آسانی ہو۔”