Uncategorized
Comment 1

آخری لمحے


 

سینے میں گولی اتری
تو بس ماں یاد آئی
پھر وہ مجھکو مارتے تھے
نوچتے تھے
زباں میں تھی سکت جب تک
گواہی میں نے دی انکو
کہ میں بھی ایک عاشق ہوں
مگر وہ مان بیٹھے تھے
کہ میں تو ایک مجرم ہوں،
پھر کسی لمحے
اذیت تھم گئی اور میں
خود اپنی لاش کو پٹتے ہوئے یوں دیکھتا تھا
وہ مجھ پہ کودتے تھے، ناچتے تھے
تکبیر کہہ کے پتھر مارتے تھے
مجھے ننگا کیا اور ریشہ ریشہ کر دیا
گو وہ جانتے تھے میں تو کب کا مر چکا
مر چکا تھا میں
مگر یہ چاہتا تھا
ایک لمحے کو سہی مجھ کو اجازت ہو
میں اپنے قاتلوں سے التجا کر لوں
کہ میری لاش میری ماں کو مت دینا
وہ سارے کرب جو مجھ پر اتارے ہیں
مرنے تک وہ انکے درد سے چلائے گی

انعام رانا

This entry was posted in: Uncategorized

by

Vision 21 is Pakistan based non-profit, non- party Socio-Political organisation. We work through research and advocacy for developing and improving Human Capital, by focusing on Poverty and Misery Alleviation, Rights Awareness, Human Dignity, Women empowerment and Justice as a right and obligation. We act to promote and actively seek Human well-being and happiness by working side by side with the deprived and have-nots.

1 Comment

  1. Kister Gbian says

    💖 Excellent,I read it several times, I highly appreciated,you have picturised the bitter reality of our society….💖

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s